قادیانیوں کی شہہ پر مدرسہ مسمار کر دیا گیا

تحریر ۔ سمیع سواتی
حکمرانی کے نشے میں چور بدمست حکمران قادیانی لابی کی تسکین کیلئے چنیوٹ کے تاریخی مدرسے پر ٹوٹ پڑے ،مرتے دم تک دنیا بھر میں قادیانی فتنے کا دلیری سے تعاقب کرنے والے سفیرِ ختمِ نبوت حضرت مولانا منظور احمد چنیوٹی رح کے عظیم ادارہ جامعہ عربیہ دعوت و ارشاد چنیوٹ گزشتہ روز مسمار کردیا گیا ۔

شدید ردعمل کے طور پر آج طلباء جامعہ نے بطور احتجاج اس قدیم ادارے کی ناموس کے تحفظ کیلئے تعلیمی کلاسز جنگ روڈ بلاک کرکے اس پر لگا دیں ۔

مجھے کوئی بتائے گا کہ کیا پاکستان میں ایسی کوئی قدیم عمارت اور بھی ہے جس کی عمر پچاس سال سے زائد ہو اور وہ تجاوزات کے آڑ میں مسمار کی گئی ہو ؟

یقینا یہ جملہ آپ کو لطیفہ ہی لگے گا اصل معاملہ تبدیلی سرکار کی آمد کیساتھ ہی قادیانی لابی کا حد سے زیادہ متحرک ہوجانا ہے ۔

قادیانی فتنے کو دنیا بھر میں شرمسار کرنے والے مولانا منظور احمد چنیوٹی رح کے تحفظ ختم نبوت پر خدمات کا بدلہ لینے کا اس سے بہتر موقع پھر کب آتا ، سو وفاقی و پنجاب حکومت نے ملکر قادیانی لابی کی ایماء پر ملک کے ایک عظیم ، دینی اور تاریخی ادارے کو زمین بوس کردیا ۔

کیا اس بھونڈی اور مذموم حرکت سے ڈونکی کنگ کی سرکار قادیانیت نوازی کا علم بلند کرکے اپنی روشن خیالی ثابت کرنا چاہتی ہے ؟
جی ہاں قادیانی لابی کو لگے زخم مندمل کرنے کے اس شرمناک عمل کی کوئی اور وجہ نہیں ہوسکتی ۔

مگر اس مکروہ عمل سے اللہ تعالی کے غیض و غضب کو جو دعوت دی گئی ہے ان شاء اللہ یہ گھناؤنا اقدام ان فاشسٹ حکمرانوں کی تباہی و بربادی کی بنیاد ثابت ہوگا ۔

افسوسناک واقعے کے بعد ملک بھر سے علماء کرام اور عوام الناس کی جامعہ دعوت و ارشاد چنیوٹ جوق در جوق آمد اور انتظامیہ و طلباء جامعہ سے ہمدردی سے واضح ہو رہاہے کہ مذکورہ معاملے پر عوامی رد عمل میں کتنی زیادہ غم وغصہ پایا جاتا ہے ۔

جامعہ کے عمارت کے انہدام کے خلاف جنگ روڈ پر بطور احتجاج جامعہ کے طلباء کی تعلیمی کلاسز آپ کی نظروں کے سامنے ہیں ۔

ان شاء اللہ حکمرانی کے نشے میں چور بدمست ڈونکی سرکار جلد اپنے منطقی انجام پہنچنے کو ہے ۔

Comments: 0

Your email address will not be published. Required fields are marked with *