ایس بی سی اے کی ملی بھگت سے مافیا کا کارروبار، علاقہ مکین پریشان

کراچی (نیوز الرٹ): کراچی کی مختلف سوسائٹیز میں سندھ بلڈنگ کنٹرول اتھارٹی (ایس بی سی اے) کے حکام کی ملی بھگت سے پورشن مافیا نے کاروبار شروع کردیا، جس سے سوسائیٹی کے مکین پریشان ہوگئے۔

 

پورشن مافیا نے کارروبار کرتے ہوئے رہائشی اور کمرشل پلاٹس پر غیر قانونی تعمیرات شروع کردیں جس سوسائٹیز کے رہائشیوں کو پریشانی کاسامنا ہے۔

 

سندھ بلڈنگ کنٹرول اتھارٹی کے عملے نے سیل کئے ہوئے پلاٹس پر بھی تعمیرات کی اجازت دے دی۔

 

بلڈنگ کنٹرول اتھارٹی اور سو سائیٹیز کی انتظامیہ کے خلاف بلڈنگ ایکٹ اور سوسائیٹیز ایکٹ کی خلاف ورزی پر مکینوں نے قومی احتساب بیورو (نیب) کراچی کی کھلی کچہری میں درجنوں درخواستیں جمع کروائیں۔

 

تفصیلات کے مطابق کراچی میں گزشتہ برسوں کے دوران پوش علاقوں میں پورشن کی تعمیر سے ایک جانب علاقہ مکینوں کو تاحال پریشانی کا سامنا ہے تو دوسری جانب پورشن مافیا نے اس کاروبار سے کروڑوں روپے کمالئے ہیں اور اس آمدنی میں برابر حصہ بلڈنگ کنٹرول اتھارٹی کے حکام نے بھی حاصل کیا اور ان کے خلاف مختلف اداروں میں درخواستوں کی بھرمار بھی موجود ہے۔

 

شہر بھر میں پورشن مافیا کے خلاف درخواستوں کے بعد ان پورشن مافیا نے اب شہر بھر میں نئی تعمیر شدہ سوسائٹیز کا رخ کرلیا اور ان مافیا کو تاحال بلڈنگ کنٹرول اتھارٹی میں موجود راشی افسران کی مکمل پشت پناہی بھی حاصل ہے۔

 

ذرائع نے بتایا کہ قومی احتسا ب بیورو(نیب) کراچی کے حکام کو مختلف مکینوں کے دستخط سے درخواست موصول ہوئی ہے کہ اسکیم 33 سیکٹر17-A میں واقع اسٹیٹ بینک سوسائٹی کے اندر رہائشی اور کمرشل پلاٹس پر بلڈنگ قوانین کی کھلی خلاف ورزی کرتے ہوئے پورشن مافیا نے تعمیرا ت شروع کر رکھی ہیں اور اس کی نشاندہی کے لئے سوسائٹی کے مکینوں نے پہلے سندھ بلڈنگ کنٹرول اتھارٹی کو درخواست بھی دی کہ رہائشی پلاٹ نمبر R-48,I-A-201,I-A-235,I-A-196 اور B-06 پر پورشن مافیا نے تعمیرات شروع کردی ہیں اور اسی طرح کمرشل پلاٹس پر بلڈنگ قوانین کی خلاف ورزی کرتے ہوئے چار منزلہ عمارتیں تعمیر کرنا شروع کردی ہیں۔

 

جس کے بعد سندھ بلڈنگ کنٹرول اتھارٹی کے حکام نے وقتی طور پر ایک پلاٹ پر کارروائی کر کے بلڈنگ کو سیل کردیا اوراس بلڈنگ کا مخصوص حصہ منہدم بھی کیا تاہم چند روز بعد ہی اس بلڈنگ کی سیل کو بھی خلاف ضابطہ ہٹادیا گیا اور بلڈر نے تعمیر بھی شروع کردی۔

 

سوسائٹی حکام نے اس حوالے سے پہلے سوسائٹی کی ایسوسیشن کو درخواست دی اور ان دونوں اداروں کی جانب سے کارروائی نہ ہونے کے بعد سوسائٹی کے مکینوں نے قومی احتساب بیورو(نیب) کراچی کی کھلی کچہری میں درجنوں درخواستیں جمع کروائی ہیں اور ان درخواستوں میں پورشن مافیا کے خلاف کارروائی کی استدعا کی گئی ہے۔

 

ذرائع نے بتایا کہ درخواست گزاروں کا موقف ہے کہ غیر قانونی تعمیرات کو منہدم کیا جائے اور جن پلاٹس پر بلڈنگ قوانین کے خلاف تعمیرات ہورہی ہیں ایسے پلاٹس کو بلیک لسٹ کیا جائے تاکہ ان پلاٹس پر نقشوں کی منظوری نہ ہوسکے اور نہ ہی ان پلاٹس کی سب لیز ممکن ہوسکے۔

 

ذرائع نے بتایا کہ نیب حکام ابتدائی مرحلے میں بلڈنگ کنٹرول اتھارٹی کے حکام سے جواب طلب کریں گے کیونکہ سوسائیٹز کے مکینوں نے ابتدائی مراحل میں کارروائی کے لئے درخواستیں سندھ بلڈنگ کنٹرول اتھارٹی کے حکام کو جمع کرائی تھیں تاہم اس حوالے سے کوئی کارروائی عمل میں نہیں لائی گئی تھی۔

Comments: 0

Your email address will not be published. Required fields are marked with *