حضرت خالد بن ولیدؓ

بلاگ : عزت اللہ خان

حضرت خالد بن ولیدؓ کے انتقال کی خبر جب مدینہ منورہ پہنچی تو ہر گھر میں کہرام مچ گیا ۔ جب حضرت خالد بن ولیدؓ کو قبر میں اتارا جا رہا تھا تو لوگوں نے یہ دیکھا کہ آپؓ کا گھوڑا’’ اشکر‘‘ جس پر بیٹھ کے آپؓ نے تمام جنگیں لڑیں ، وہ بھی آنسو بہا رہا تھا ۔ حضرت خالد بن ولیدؓ کے ترکے میں صرف ہتھیار، تلواریں ، خنجر اور نیزے تھے۔ ان ہتھیاروں کے علاوہ ایک غلام تھا ، جو ہمیشہ آپ کے ساتھ رہا تھا ۔ اللہ کی یہ تلوار جس نے دو عظیم سلطنتوں (روم اور ایران) کے چراغ بجھائے ، وفات کے وقت ان کے پاس کچھ بھی نہ تھا ۔ آپؓ نے جو کچھ بھی کمایا ، وہ اللہ کی راہ میں خرچ کر دیا ۔ ساری زندگی میدان جنگ میں گزار دی ۔ صحابہؓ نے گواہی دی کہ ان کی موجودگی میں ہم نے شام اور عراق میں کوئی بھی جمعہ ایسا نہیں پڑھا ، جس سے پہلے ہم ایک شہر فتح کر چکے ہوں ، یعنی ہر دو جمعوں کے درمیانی دنوں میں ایک شہر ضرور فتح ہوتا تھا ۔ بڑے بڑے جلیل القدر صحابہؓ نے حضورؐ سے حضرت خالدؓ کے روحانی تعلق کی گواہی دی ۔

خالد بن ولیدؓ کا پیغام مسلم امت کے نام :

موت لکھی نہ ہو تو موت خود زندگی کی حفاظت کرتی ہے ۔ جب موت مقدر ہو تو زندگی دوڑتی ہوئی موت سے لپٹ جاتی ہے ، زندگی سے زیادہ کوئی نہیں جی سکتا اور موت سے پہلے کوئی مر نہیں سکتا ۔ دنیا کے بزدل کو میرا یہ پیغام پہنچا دو کہ اگر میدا ن جہاد میں موت لکھی ہوتی تو اس خالد بن ولیدؓ کو موت بستر پر نہ آتی ..!!

Comments: 0

Your email address will not be published. Required fields are marked with *