تعلیمی بورڈز کے چیئرمین کی تعیناتی کرنے میں سندھ حکومت نا کام

الرٹ نیوز: محکمہ بورڈز اینڈ جامعات سندھ کے افسران سندھ بھر کے تعلیمی بورڈز کے سربراہان کی تعیناتی کیلئے ایک ماہ بعد بھی انٹرویوز لینے میں نا کام ہو گیا ہے ۔

محکمہ بورڈز اینڈ جامعات کے سیکریٹری ریاض الدین قریشی کی سربراہی میں چیئرمین تلاش کمیٹی نے بورڈ آف انٹرمیڈیٹ ایجوکیشن کراچی ، بورڈ آف سکینڈری ایجوکیشن کراچی ، سندھ ٹیکنیکل بورڈ کراچی ، بورڈ آف سکینڈری اینڈ انٹرمیڈیٹ ایجوکیشن لاڑکانہ ، بورڈ آف سکینڈری اینڈ انٹرمیڈیٹ ایجوکیشن نواب شاہ اور بورڈ آف سکینڈری اینڈ انٹرمیڈیٹ ایجوکیشن سکھر میں چیئرمین لگانے کے لیئے 3 اور 4 مارچ کو انٹرویوز کیئے تھے ۔

تلاش کمیٹی کی جانب سے انٹرویوز کا سلسلہ مکمل ہونے کے بعد 5 مارچ کو تلاش کمیٹی کے اراکین نے نمبرنگ اور دستخط کرکے فائل منظوری کے لیئے بھیج دی تھی۔ جس کے بعد اگلا مرحلہ محکمہ بورڈز و جامعات کے سیکریٹری ریاض الدین قریشی کی جانب سے نثار کھوڑو کے ذریعے سمری تیار کر کے وزیر اعلیٰ سندھ مراد علی شاہ کو چیف سیکریٹری ممتاز علی شاہ کے ذریعے بھیجنا تھا ۔

ذرائع کے مطابق وہ سمری تیار ہی نہیں کی گئی ، کیونکہ میرٹ پر کچھ ایسے امیدوار بھی آئے ہیں جن سے ایک افسر ذاتی طور پر ناراض ہے اور وہ اس پر اتنی تاخیر چاہتا ہے کہ میرٹ پر منتخب ایسے امیدواروں کو قانونی طور پر چیلنج کر دیا جائے ۔ مشیر برائے محکمہ بورڈز و جامعات نثار کھوڑو کے ترجمان شکیل مین کا سمری کے حوالے سے کہنا ہے کہ ابھی تک موصول نہیں ہوئی اگر موصول ہوئی ہوتی تو اس کی تفصیلات سے ضرور آ گاہ کیا جائے گا ۔

انہوں نے کہا کہ مشیر نثار کھوڑو کی جانب سے کبھی تاخیر نہیں کی جاتی ، نواب شاہ تعلیمی بورڈز کے علاوہ انٹر بورڈ کراچی، میٹرک بورڈ کراچی، سندھ ٹیکنیکل بورڈ، لاڑکانہ تعلیمی بورڈ اور سکھر تعلیمی بورڈ بورڈزکے سربراہوں کی 3 سالہ مدت گزشتہ برس 30 ستمبر کو ختم ہوگئی تھی ۔

جس کے بعد سے وہاں قائم مقام چیئرمین کام کر رہے ہیں ۔ کیونکہ محکمہ بورڈز و جامعات سندھ کے 5 تعلیمی بورڈز میں نئے چیئرمین حضرات کا تقرر نہیں کر پایا ، نہ ہی ان کی بھرتی کے لیے وقت پر اشتہار دے پایا ہے ۔ بعد ازاں جب ان سربراہوں کی مدت ختم ہونے میں چند روز رہ گئے تو محکمہ بورڈز و جامعات کی جانب سے وزیر اعلیٰ سندھ کو سمری بھیجی گئی جس میں کہا گیا تھا کہ ان تعلیمی بورڈز کے سربراہوں کی مدت 30 ستمبر کو ختم ہورہی ہے ۔

لہذاہ نئی بھرتی کے لئے 3 ماہ کا وقت دیا جائے ۔ اس وقت تک موجودہ چیئرمین حضرات کی مدت میں توسیع کردی جائے ۔ اب وہ توسیع کی مدت بھی مکمل ہو چکی ہے ۔ جب کہ نواب شاہ تعلیمی بورڈز کے قیام کو 3 برس گزرچکے ہیں مگر تا حال وہاں مستقل چیئرمین تعینات نہیں کیا جا سکا ہے ۔

Comments: 0

Your email address will not be published. Required fields are marked with *