حکومت سندھ کے فیصلے پر عمل درآمد کرنا شرعا لازمی ہے ، مفتی زبیر

الرٹ نیوز : نمازوں کے سلسلے میں حکومتی حکم نامہ پر عمل کرنا شرعا بھی لازم ہے ، جمعہ صرف چار افراد اورعام نمازیں 3 سے 5 افراد مسجد میں باجماعت ادا کریں .

معروف مذہبی اسکالر و نائب مہتمم جامعہ الصفہ مفتی محمد زبیر نے کہا ہے کہ علما کے مشترکہ اعلامیہ اور حکومت سندھ کے نوٹیفیکیشن کے بعد اب مساجد میں عمومی جماعت قائم کرنے کے بجائے گھروں میں نماز ادا کی جائیگی ۔ انہوں نے کہا کہ علما کے مشترکہ اعلامیہ کی شق نمبر 5 میں تمام مکاتب فکر کے علماء نے شرعی قانون و مسئلہ کے مطابق چونکہ حکومت کو اختیار دیا تھا اس لیئے اب حکومت نے اپنا اختیار استعمال کرتے ہوئے نوٹیفیکیشن جاری کردیا ہے .

لہذا اب اس نوٹیفیکیشن پر عمل کرنا شرعا بھی ضروری اور لازم ہو گیا ہے ۔ اس نوٹیفیکیشن کے مطابق اب 3 سے 5 افراد کو جماعت قائم کرنے کی اجازت دی گی ہے ، جس میں امام موذن اورعملہ کا کوئی فرد شامل ہو ، باقی افراد گھروں میں نمازیں ادا کریں ، لہذا 5 اپریل تک تمام فرض نمازیں گھروں پر ہی ادا کی جائینگی اور کوشش کی جائے کہ گھر میں باجماعت نماز ادا کر لی جائے ۔

جمعہ کے بارے میں شرعی مسئلہ یہ ہے کہ مسجد میں چونکہ تین سے پانچ افراد کو جماعت کی اجازت دی گئی ہے اور چونکہ امام ابو حنیفہ رحمہ اللہ کے مطابق شرعی مسئلہ یہ ہے کہ جمعہ کیلئے کم از کم چار افراد ہوں لہذا مسجد کے عملہ پر مشتمل چار افرادمساجد میں حسب معمول جمعہ ادا کریں باقی تمام لوگ گھروں میں ہی نماز ظہر ادا کریں ۔اور گھروں میں باجماعت ظہر کی نماز ادا کی جائے اور اگر انفرادی پڑھ لیں تو شرعا یہ بھی درست ہے ۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں