حکومت سندھ نے نماز جمعہ کے اجتماعات پر پابندی عائد کردی

الرٹ نیوز : حکومت نے علمائے کرام کے مشترکہ فتوی کی روشنی میں مساجد میں نمازوں کے اجتماعات پر 5 فروری تک پابندی عائد کردی .

گزشتہ روز گورنر ہائوس میں علمائے کرام نے مشترکہ فتوی جاری کیا تھا جس میں ایک شق یہ بھی شامل کی گئی تھی کہ اگر حکومت چاہے تو میڈیکل بنیادوں پر پابندی عائد کرسکتی ہے جس کے بعد صدر پاکستان نے ایک بار پھر علمائے کرام کو جامعۃ الازہر کے فتوی کی روشنی میں پاکستان میں مساجد کی بندش پر فتوی دینے کی اپیل کی جس کو علامہ شہنشاہ نقوی کے علاوہ دیگر تمام علمائے کرام نے منع کردیا .

مفتیان کرام کی جانب سے گورنر ہائوس کراچی میں جاری کئے جانے والے فتوی کا عکس

تاہم گزشتہ روز گورنر ہائوس کراچی میں علمائے کرام کی جانب سے کی جانے والی پریس کانفرنس میں سامنے آنے والے نکات میں شامل شق نمبر 5 پر عمل کیا ہے جس میں لکھا تھا کہ اگر حکومت چاہے تو از خود میڈیکل بنیادوں پر احتیاطی تدابیر کے تحت پابندی عائد کرسکتی ہے جس پر سندھ حکومت نے پابندی کا اعلان کیا ہے .

مفتیان کرام کی جانب سے گورنر ہائوس کراچی میں جاری کئے جانے والے فتوی کا عکس

مفتی تقی عثمانی کی جانب سے تیا رکیا جانے والے 12 نکاتی شرعی نقطہ نظر کے مطابق مسجدیں کھلی رہیں گی ، جن میں پنج وقتہ اذانیں ، اقامت اور نمازیں باجماعت ہونگی ، فرائض سے پہلی اور بعد والی سنتیں گھروں پر پڑھی جائیں ، وضو بھی گھر سے کر کے آئیں۔ڈاکٹروں کی ہدایات کے مطابق 50سال سے زائد عمر کے افراد مساجد میں نمازوں کی ادائیگی کے بجائے گھروں پر پڑھیں، کیونکہ عمر کے اس حصے میں زیادہ متاثر ہونے کا اندیشہ ہے ، جماعت گھر والوں بلکہ محرم خواتین کے ساتھ بھی ہو سکتی ہے ، اگر مذید عذر ہو تو اکیلے پڑھیں۔

مفتیان کرام کی جانب سے گورنر ہائوس کراچی میں جاری کئے جانے والے فتوی کا عکس

جن لوگوں کو کرونا وائر س ہے،شبہ ہے،یا نزلہ زکام و کھانسی ہے وہ بھی مساجد میں نہ آئیں۔مساجد کی قالین ہٹاکر فرش کو دھونے اور صاف ستھرا رکھنے کا اہتمام کریں ۔ مسجدوں کے گیٹ پر سینی ٹائزر لگائیں۔جمعہ میں عموعی اردو کی تقاریر کے بجائے صرف 5منٹ کرونا وائرس سے متعلق طبی اور دینی رہنمائی فراہم کریں،مختصر خطبے اور نماز پر اکتفاکریں۔وباء سے بچنے کیلئے اللہ تعالی کی پناہ مانگیں اور لوگ فوراگھروں کو چلے جائیں۔نابالغ بچوں کو مساجد میں نہ لائیں .

تمام مسالک کے علمائے کرام کی جانب ست جاری کردہ مشترکہ فتوی کا عکس
Comments: 0

Your email address will not be published. Required fields are marked with *