ہفتہ, نومبر 26, 2022
ہفتہ, نومبر 26, 2022
- Advertisment -

رپورٹر کی مزید خبریں

بلاگاٹک ریفائنری لمیٹڈ کا کنٹری بیشن کی میں ڈیڑھ کروڑ کا چیک...

اٹک ریفائنری لمیٹڈ کا کنٹری بیشن کی میں ڈیڑھ کروڑ کا چیک EOBI میں جمع

تحریر : اسرار ایوبی
سابق افسر تعلقات عامہ EOBI
ڈائریکٹر سوشل سیفٹی نیٹ پاکستان

ای او بی آئی اور اٹک ریفائنری لمیٹڈ راولپنڈی
کی ملازمین کی فلاح وبہبود کے لئے مشترکہ کاوش:

ای او بی آئی ملک میں پنشن کا قومی ادارہ ہے ۔ جو گزشتہ چار دہائیوں سے زائد عرصہ سے نجی شعبہ میں خدمات انجام دینے والے لاکھوں ملازمین اور ان کی وفات کی صورت میں ان کے پسماندگان کو تاحیات پنشن فراہم کرکے ان کی مالی کفالت کا قومی فریضہ انجام دے رہا ہے ۔

اس مقصد کے تحت ای او بی آئی رجسٹر شدہ آجران اور اداروں سے کم از کم اجرت کا 6 فیصد ماہانہ کنٹری بیوشن وصول کرتا ہے ۔ جس میں آجر کا حصہ 5 فیصد اور ملازم کا حصہ ایک فیصد ہوتا ہے ۔ ای او بی آئی اپنے رجسٹر شدہ ملازمین ( بیمہ دار افراد ) کو 15 برس کی بیمہ شدہ ملازمت معہ ادا شدہ کنٹری بیوشن اور ریٹائرمنٹ ، معذوری اور خدانخواستہ ان کی وفات کی صورت میں ان کے پسماندگان کو تاحیات پنشن ادا کرتا ہے ۔ اس وقت ملک بھر میں 4 لاکھ سے زائد ضعیف العمر، معذور ملازمین اور متوفیوں کی بیوگان پنشن وصول کر رہے ہیں ۔ اس وقت کم از کم پنشن 8,500 روپے ماہانہ مقرر ہے جبکہ زیادہ سے زیادہ پنشن کا تعین پنشن فارمولا کے مطابق کیا جاتا ہے ۔

لیکن اپریل 2010ء میں ملک میں اٹھارہویں آئینی ترمیم کے بعد وفاق سے متعدد محکموں کو صوبوں کے سپرد کئے جانے اور چند قانونی موشگافیوں کے باعث ای او بی آئی کو رجسٹر شدہ آجران کی جانب سے کنٹری بیوشن کی وصولی میں بے شمار رکاوٹوں کا سامنا ہے ۔

اگرچہ ای او بی آئی جیسے قومی فلاحی ادارہ کی وفاقی اکائی کو مد نظر رکھتے ہوئے مشترکہ مفادات کونسل (CCI) نے اپنے 41 ویں اجلاس منعقدہ 23 دسمبر 2019ء کو متفقہ طور پر ای او بی آئی کو وفاق کے تحت برقرار رکھنے کا فیصلہ کیا تھا ۔

لیکن اس واضح فیصلہ کے باوجود ملک کے آجران کی اکثریت اٹھارہویں آئینی ترمیم کی آڑ میں ای او بی آئی کو پرانی شرح سے کنٹری بیوشن کی ادائیگی کر رہی ہے ۔ جس کے باعث کنٹری بیوشن کی وصولی اور پنشن کی ادائیگی کی رقومات میں شدید عدم توازن پیدا ہوگیا ہے ۔ ہر ماہ پنشن یافتگان کی تیزی سے بڑھتی ہوئی تعداد کے باعث ای او بی آئی پنشن فنڈ کو خسارہ کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے ۔ جو ہم سب کے لئے لمحہ فکریہ ہے ۔

اس پرآشوب صورت حال میں میں ای او بی آئی ریجنل آفس راولپنڈی کے نوجوان اور پر عزم سربراہ فاروق طاہر صاحب اور ان کی فعال آپریشنز ٹیم کی جانب سے ملک کے ایک معروف ادارہ اٹک ریفائنری لمیٹڈ راولپنڈی سے مبلغ ایک کروڑ بیالیس لاکھ چوراسی ہزار دو سو بیاسی ( 14,284,282) روپے کی خطیر رقم کے کنٹری بیوشن کی وصولی ایک قابل تحسین عمل ہے اور اس موقع پر اٹک ریفائنری لمیٹڈ کی انتظامیہ بھی قابل تعریف ہے کہ انہوں نے ای او بی آئی کو کنٹری بیوشن کی ادائیگی کی قانونی اور اخلاقی ذمہ داری پوری کر کے اپنے ادارہ میں خدمات انجام دینے والے ملازمین اور ان کے اہل خانہ کے لئے مستقبل میں ای او بی آئی کی تاحیات پنشن کو یقینی بنایا ۔

امید کی جاتی ہے کہ ملک کے دیگر آجران اور ادارے بھی اٹک ریفائنری لمیٹڈ راولپنڈی کے نقش قدم پر چلیں گے ۔

متعلقہ خبریں