ہفتہ, نومبر 26, 2022
ہفتہ, نومبر 26, 2022
- Advertisment -

رپورٹر کی مزید خبریں

اہم خبریںسید صلاح الدین احمد واٹر بورڈ کے CEO اور اسداللہ خان COO...

سید صلاح الدین احمد واٹر بورڈ کے CEO اور اسداللہ خان COO مقرر کر دیئے گئے

کراچی : حکومت سندھ نے وولڈ بینک کے پروجیکٹ کے تحت پاکستان ایڈمنسٹڑیٹیو سروس (PAS) کے گریڈ 19 کے افسر سید صلاح الدین احمد کو واٹر اینڈ سیوریج بورڈ میں منیجنگ ڈائریکٹر (MD)/ چیف آیگزیکٹیو آفیسر (CEO) مقرر کر دیا ہے ۔ جب کہ سابق منیجنگ ڈائریکٹر (MD) اسداللہ خان کو واٹر بورڈ کا چیف آپریٹنگ آفیسر (COO) مقرر کر دیا ہے ۔

Syed Salahuddin Ahmed has been appointed CEO of Water Board and Asadullah Khan as COO

الرٹ نیوز کو حاصل ہونے والے نوٹی فکیشن کے مطابق چیف سیکرٹری سندھ ڈاکٹر محمد سہیل راجپوت کی جانب سے جاری ہونے والے نوٹی فکیشن کے مطابق پاکستان ایڈمنسٹڑیٹیو سروس (PAS) کے گریڈ 19 کے افسر سید صلاح الدین احمد کو واٹر اینڈ سیوریج بورڈ میں منیجنگ ڈائریکٹر (MD)/ چیف آیگزیکٹیو آفیسر (CEO) مقرر کر دیا ہے ۔ جب کہ سابق منیجنگ ڈائریکٹر (MD) اسداللہ خان کو واٹر بورڈ کا چیف آپریٹنگ آفیسر (COO) مقرر کر دیا ہے ۔

مذید پڑھیں : شاہراہ فیصل سے یومیہ لاکھوں گیلن پانی قیوم آباد میں فروخت کیا جانے لگا

سید صلاح الدین احمد کی تعیناتی واٹر بورڈ کے بورڈ اجلاس کی سفارش کے بعد سندھ کابینہ کی منظوری کے بعد عمل میں آئی ہے ۔ یہ تعیناتی واٹر بورڈ کے ایکٹ 1996 کی شق 5(1) کے تحت عمل میں آئی ہے ۔اس کے علاوہ سید صلاح الدیں احمد KWWSIP کے پروجیکٹ ڈائریکٹر کا اضافی چارج بھی رکھیں گے ۔ ان کی بطور چیف آیگزیکٹیو آفیسر (CEO) تعیناتی 4 سال کے لئے کی گئی ہے ۔

Syed Salahuddin Ahmed has been appointed CEO of Water Board and Asadullah Khan as COO

اس کے علاوہ حکومت سندھ کے محکمہ لوکل گورنمنٹ اینڈ ہائوسنگ ٹائون پلاننگ ڈیپارٹمنٹ کے سیکرٹری نجم احمد شاہ کی جانب سے جاری ہونے والے نوٹی فکیشن کے مطابق واٹر بورڈ کے سابق ایم ڈی اسداللہ خان کو واٹر بورڈ کا چیف آپریٹنگ آفیسر (COO) تعینات کر دیا گیا ہے ۔ اسداللہ خان کی تعیناتی تین سال کے لئے 1996 کی شق 6(1) اور واٹر بورڈ APT رول 1987 کے تحت کی گئی ہے ۔

سید صلاح الدین احمد اور اسداللہ خان پیر کو ہی اپنے عہدے سنبھالیں گے ۔

عزت اللّٰہ خان
عزت اللّٰہ خانhttps://alert.com.pk
عزت اللّٰہ خان سینئر رپورٹر ہیں، پشاور پریس کلب کے ممبر ہیں، بعض موضوعات پر ان کی تحقیقاتی رپورٹس صف اول کے اخبارات میں تہلکہ مچا چکی ہیں۔ سرکاری اداروں میں کرپشن پر ان کی گہری نظر ہوتی ہے، معروف ویب سائٹس پر ان کے معاشرتی پہلوؤں پر بلاگز بھی شائع ہوتے رہے ہیں، آج کل الرٹ نیوز کے لیے لکھتے ہیں۔
متعلقہ خبریں