پاکستان اور انڈونیشین وفود کی خفیہ مذاکرات کیلئے اسرائیل میں موجودگی کا انکشاف

کراچی : پاکستان اور انڈونیشیا کے وفود خفیہ مذاکرات کے لیے اسرائیل میں موجود ہیں ، یہ دعوی اسرائیلی اخبار ” دی یروشلم پوسٹ ” نے کیا ہے کہ اخبار کے مطابق پاکستانی وفد اس ہفتے کے آخر میں صدر اسحاق ہرزوگ سے ملاقات کرنے والا ہے ۔

دی یروشلم پوسٹ کے مطابق "پیر کو پاکستانی نیوز رپورٹس کے مطابق پاکستان اور انڈونیشیا کے سفارتی وفود اس ہفتے خفیہ دوروں کے لیئے اسرائیل میں ہیں پاکستانی وفد اسحاق ہرزوگ سے بھی ملاقات کرے گا ۔”

پاکستانی وفد کی سربراہی پاکستانی نژاد امریکی نسیم اشرف کر رہے ہیں ، جو سابق وزیر اعظم پرویز مشرف کی حکومت میں سابق وزیر مملکت بھی رہ چکے ہیں ۔

دورہ اسرائیل کے دوران پاکستانی وفد کو اسرائیل بھر کے دورے کروائے گئے ہیں ۔ رپورٹ میں مزید کہا گیا ہے کہ وہ اس ہفتے کے آخر میں صدر اسحاق ہرزوگ سے بھی ملاقات کرنے والے ہیں۔

مذید پڑھیں : اسرائیلی دورہ کرنے والے پاکستانی کون ہیں؟

رپورٹ میں مزید بتایا گیا ہے کہ وفد میں کراچی میں مقیم ایک صحافی بھی شامل ہیں ۔ جون میں پاکستانی صحافی احمد قریشی کو ایک ماہ قبل اسرائیل کا دورہ کرنے پر پاکستان کے سرکاری ٹیلی ویژن پر ان کے شو سے نکال دیا گیا تھا ۔

خفیہ انڈونیشی وفد کی سربراہی سینئر اہلکار کر رہے ہیں ، اسرائیل میں انڈونیشیا کے وفد کی سربراہی ایک سینئر اہلکار کر رہے ہیں۔ اسرائیل اور انڈونیشیا کے درمیان تعلقات میں حالیہ گرمجوشی کے درمیان اسرائیل میں دنیا کی دو سب سے زیادہ آبادی والے مسلم ممالک کی سفارتی موجودگی کی اطلاعات سامنے آئی ہیں۔

2021 کے آخری چند مہینوں میں ملاقاتوں، بیانات اور رپورٹس کا حالیہ سلسلہ اس بات کی نشاندہی کرتا ہے کہ اسرائیل اور انڈونیشیا کے درمیان تجارت اور سیاحت کے شعبوں میں تعاون کے ساتھ قربت بڑھتی جا رہی ہے ۔امریکی وزیر خارجہ انٹونی بلنکن نے بھی دسمبر میں جکارتہ میں حکام کے ساتھ ملاقاتوں میں انڈونیشیا کی طرف سے اسرائیل کے ساتھ اپنے سفارتی تعلقات کو معمول پر لانے کا امکان ظاہر کیا تھا ۔