مقدمات کے بعد ایوب گوٹھ کے پانی چور روپوش ہو گئے

کراچی : ایوب گوٹھ میں پانی کی چوری کے بڑے نیٹ ورک چلانے والے مافیا روپوش ہو گئے ، مافیا کارندوں نے پیپلز پارٹی کے رہنما لالا رحیم پر تشدد کیا تھا ۔ جس کے بعد لالا رحیم نے ان کے خلاف مقدمات قائم کر دیئے تھے ۔

یاد رہے کہ لالا رحیم پر پانی چور مافیا نے پولیس ، رینجرز اور واٹر بورڈ کے افسران کی موجودگی میں قاتلانہ حملہ بھی کیا گیا تھا ، جو متعلقہ اداروں کی کارکردگی پر ایک بہت بڑا سوالیہ نشان ہے ۔

لالا رحیم کی جانب سے متعدد آپریشن کرائے گئے تھے جس کے بعد انہوں نے پیپلز پارٹی کی رہنما فریال تالپور سے سفارش کرائی اور واٹر بورڈ کے افسران پر سختی کرائی کہ آپریشن کیا جائے ۔ جس کے بعد آپریشن کیا گیا تاہم واٹر بورڈ کے افسران اور پولیس کو چھوڑ کر پانی چور مافیا نے لالا رحیم پر تشدد کیا تھا ۔

واٹر بورڈ کے بعض افسران اور متعلقہ پولیس کی ملی بھگت اور غیر قانونی حمایت حاصل ہونے کیوجہ سے پانی چور مافیا نے مختلف مقامات (ایوب گوٹھ، سائٹ سپر ہائی وے فیز ون وغیرہ) پر کے تھری (K-3) اور 54 انچ کی مین لائن سے تقریبا اڑتالیس (48) غیر قانونی پانی چوری کے کنکشن حاصل کیے ہوئے ہیں۔

جب کہ کوئی بھی متعلقہ ادارہ ان پانی چور مافیا کے خلاف کروائی کرنے کے لیے تیار نہیں ہے ۔ پانی چور مافیا اب بھی سرگرم ہے اور دن دیہاڑے پانی چوری کر کے مختلف انڈسٹریز کو کروڑوں روپے یومیہ میں بیچ رہے ہیں ۔ جب کہ واٹر بورڈ اور متعلقہ پولیس جان بوجھ کر خواب خرگوش سو رہے ہیں اور پانی چور مافیا کو کھلی چھوٹ دی ہوئی ہے۔

پانی چوروں وحید اور افضل ، عزیز ، عبدالواحد ، سکندر ، نور واحد ، اجمل ، فضل واحد ، اجمل سمیت دیگر شامل ہیں جن پر متعدد مقدمات درج ہیں ، ان میں عبدالوحید عرف وحید اور افضل کے خلاف متعدد مقدمات درج ہیں ، جن تمام متعلقہ اداروں اور دیگر کو رشوت دیکر بچ جاتے ہیں ۔