جامعہ کراچی سلیکشن بورڈ ایکشن کمیٹی کے وفد کی وائس چانسلر سے ملاقات

کراچی : سلیکشن بورڈ ایکشن کمیٹی کے نمائندہ وفد نے وائس چانسلر پروفیسر ڈاکٹر خالد عراقی سے ان کے دفتر میں ملاقات کی ، سلیکشن بورڈ ایکشن کمیٹی نے اپنے مطالبات کی فہرست پیش کر دی ۔

جن اساتذہ کی ریٹائرمنٹ قریب ہے ان کے سلیکشن بورڈ کے شیڈول کا اعلان کیا جائے ۔ جن میں ڈاکٹر امیر حسن ( فارمیسی)، ڈاکٹر فرحت حسین ( لائیبریری اینڈ انفارمیشن) اور ڈاکٹر عائشہ ( باٹنی) شامل ہیں ۔

  1. پروٹیومکس اور کیمیکل انجینئرنگ کی رپورٹس آ چکی ہیں ان کا سلیکشن بورڈ کی تاریخ کا اعلان کیا جائے ۔
  2. ہر دوسرے ہفتے سلیکشن بورڈ منقعد کیے جائیں ۔
  3. اسکروٹنی اور ڈوزیئر کے بھیجنے کا سلسلہ بند کیا جائے اور ایکٹ کے مطابق سلیکشن بورڈ کے اختیارات بحال کیے جائیں ۔

وائس چانسلر خالد محمود عراقی نے اس بات کی یقین دہانی کرائی کہ جن شعبہ جات کی رپورٹس آ چکی ہیں ، ان کے سلیکشن بورڈ کی تاریخ کل ہی طے کر لی جائے گی اور جو اساتذہ ریٹائر ہونے والے ہیں ، ان کا بورڈ بھی جلد ہی منعقد کروایا جائے گا ۔

وائس چانسلر خالد محمود عراقی نے یہ بھی کہا کہ وہ اسکروٹنی کو سلیکشن بورڈز میں تاخیر کی وجہ نہیں بننے دیں گے ۔

وائس چانسلر کی گفتگو اور یقین دہانیوں کے سلسلے میں کل بھوک ہڑتالی کیمپ میں اساتذہ سے مشاورت کی جائے گی ۔ تمام اساتذہ سے گذارش کی جاتی ہے کہ وہ کل بروز بدھ صبح گیارہ بجے بھوک ہڑتالی کیمپ میں تشریف لائیں، تاکہ وائس چانسلر سے ملاقات کے حوالے سے مشاورت بھی کی جا سکے ۔

ملاقات کی اندرونی کہانی

وائس چانسلر اور سلیکشن بورڈ ایکشن کمیٹی کے وفد کی اندورنی صورتحال کے مطابق وائس چانسلر کی ایما پر ایکشن کمیٹی کے 4 رکنی وفد نے ملاقات کی جس میں ایکشن کمیٹی کی جانب سے ڈاکٹر ریاض احمد ، ڈاکٹر انتخاب الفت ، ڈاکٹر محمد سہیل اور ڈاکٹر فیضان نقوی شامل تھے جب کہ وائس چانسلر کی جانب سے کیمپس ایڈوائزر معیز خان بھی شامل تھے ۔

وائس چانسلر ایکشن کمیٹی کی سب سے ہم بات تسلیم کرتے ہوئے کہا کہ سکروٹنی کمیٹی میں کسی امیدوار کا معاملہ متنازعہ ہوا تو اس صورت میں اس امیدوار کا معاملہ سلیکشن بورڈ میں لایا جائے گا اور باقیوں کا ڈوزیئر بھیجا جائے گا اور باقی امیدواروں کی رپورٹ منگوائی جائیں گی ۔ یعنی کسی ایک امیدوار کی وجہ سے معاملہ رکے گا نہیں ۔ جس طرح عمومی طور پر جامعہ میں کسی ایک کی وجہ سے سب کا معاملہ رک جاتا تھا ۔

دوسرے نمبر پر وائس چانسلر نے کہا کہ جو لوگ ریٹائرڈ ہونے والے ہیں ، ان کا سلیکشن بورڈ کب ہو گا یہ کل سلیکشن بورڈ کی ایکشن کمیٹی کو بتا دیا جائے گا ۔یعنی ان کا شیڈول جاری ہو جائے گا ۔

تیسرے نمبر پر معاملہ دونوں کے مابین حل نہیں ہو سکا ، ایکشن کمیٹی کا مطالبہ یہ تھا کہ سکروٹنی کمیٹی ختم کی جائے اور سلیکشن بورڈ میں 3 ماہرین بیٹھائیں جائیں جیسا کہ جامعہ کے کوڈ میں شق موجود ہے ۔ جس پر وائس چانسلر نے کہا کہ 32 سال پرانی روایت کو کیسے ختم کیا جائے ۔ جس پر ایکشن کمیٹی نے کہا 32 سال پرانی سہی مگر یہ ایکٹ ، قانون یا کوڈ میں شامل نہیں ہے جس کو مان لیا جائے ۔

ادھر ایکشن کمیٹی بدھ کو دوبارہ بھوک ہڑتالی کمیپ میں بیٹھے گی اور اساتذہ مشاورت کریں گے ۔