نثار کھوڑو وفاقی حکومت کیخلاف میدان میں آگئے

الرٹ نیوز : سندھ کی جامعات کے پرو چانسلر اورصوبائی مشیر یونیورسٹیز اینڈ بورڈز نثار احمد کھوڑو نے وفاقی حکومت کے فیصلے کے خلاف میدان میں آنے کا اعلان کردیا .

نثار کھوڑو نے اعلان کیا ہے کہ وفاقی حکومت کے سندھ کی جامعات میں ثقافتی سرگرمیوں پر پابندی والے مراسلے کے متعلق وزیراعظم پاکستان کو احتجاجی خط لکھوں گا۔ وفاقی حکومت سندھ کی جامعات میں ثقافتی سرگرمیوں پر پابندی عائد کرکے آمر ایوب خان کا دور واپس لانا چاھتی ہے۔

وفاقی حکومت کا ایسا اقدام ملک مین ون یونٹ لاگو کرنے کی کوشش ہے۔سندھی زبان اور ثقافت ہزاروں سال پرانی ہے اور سندھ اپنی ثقافت اور زبان سمیت اپنے علاقائی پروگرامز پر ایسی کوئی پابندی قبول نہیں کرے گا ، نہ کسی قسم کی مصلحت کرے گا۔ وفاقی حکومت بتائے کے اگر وفاق کو ثقافت سے اتنی نفرت ہے تو پھر بابا بلے شاہ ، علامہ اقبال ، شاہ عبداللطیف بھٹائی( رح )کی شاعری کو بھی گائے جانے سے روکنا ہو گا .

وفاقی حکومت جواب دے کے وفاق اگر کو ثقافت سے اتنی نفرت ہے تو پھر عابدہ پروین کو ایوارڈ سے کیوں نوازا گیا تھا ؟ ۔ہم نے صوبائی خودمختاری کے لئے جدوجھد کی ہے اس لئے کوئی بھی ہمیں ثقافتی پروگرامز منعقد کرنے سے نہیں روک سکتا۔ ثقافت اورعلاقائی زبانیں اھمیت اور تاریخ رکھتی ہیں اس لئے وفاقی حکومت اینٹی کلچر اور اینٹی آئین اقدام اٹھانے سے گریز کرے۔

سندھ کی ثقافت کو پاکستان سمیت دنیا میں اجاگر کرایا جاتا ہے مگر وفاقی حکومت کس قانون کے تحت سندھ کی جامعات میں ثقافتی سرگرمیوں پر پابندی عائد کرنا چاہتی ہے۔ وزیراعظم کو احتجاجی خط لکھا جائے گا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں