طلبہ و والدین کیلئے خوشخبری ، سکول مالکان کیلئے اہم ہدایات جاری

کراچی : ڈائریکٹوریٹ انسپکشن اینڈ رجسٹریشن آف پرائیویٹ انسٹیٹیوشن سندھ نے حکم جاری کیا ہے کہ کوئی بھی اسکول اپنی کاپیاں ، رجسٹر اور جرنلز وغیرہ شائع نہیں کر سکتا نہ ہی والدین کو خریدنے پر مجبور کر سکتا ہے ۔

محمکہ اسکول ایجوکیشن سندھ کے ماتحت ادارے ڈائریکٹوریٹ انسپکشن اینڈ رجسٹریشن آف پرائیویٹ انسٹیٹیوشن سندھ کے ڈائریکٹر جنرل پروفیسر سلمان رضا نے سرکلر جاری کر کے بعض سکول مالکان کی من مانیوں پر پانی پھیر دیا ہے ۔ جس کے بارے میں طلبہ و طالبات اور والدین نے شکایات کر رکھی تھیں ۔

جاری کردہ ہدایات کے مطابق کوئی بھی سکول والدین یا طلبہ کو سکول کی شائع کردہ کاپیاں ، رجسٹر یا جرنلز خریدنے پر مجبور نہ کرے ۔ البتہ اسکول کے نام و لوگو والے اسٹیکرز کتابوں وغیرہ پر لگانے کی اجازت ہو گی ۔

کوئی بھی اسکول طلباء یا والدین کو یونیفارم ، سکول بیگ ، کتابیں ، اسٹیشنری وغیرہ سکول سے فراہم نہیں کر سکتا نہ ہی کسی اسپیشل دکان سے خریدنے کی ترغیب دے سکتا ہے ۔ اور والدین کتابیں ، سکول بیگ وغیرہ عام مارکیٹوں سے ہی خریدیں ۔

اسکول مالکان کو ہدایات دی گئی ہیں کہ وہ سکول کی منظور شدہ فیس کو نوٹس بورڈ پر آویزاں کریں اور طلبہ و والدین کی ڈیمانڈ پر ان کو منظور شدہ فیس کا اسٹیکچر فراہم بھی کریں ۔

اسکول مالکان کسی بھی صورت والدین سے یونیفارم کی فیس ، فوڈ آئٹمز ، ماں کا دن ، پھولوں کا دن ، رنگوں کا دن ، آم کا دن اور میوزک کے دن کے نام پر بھی پیسے نہیں لے سکتے ۔ کوئی بھی سکول مالک والدین سے دو ماہ کی فیس ایک ساتھ نہیں لے سکتا نہ ہی والدین و طلبہ کو دو ماہ کی فیس ایک ساتھ دینی چاہیئے ۔

مذید پڑھیں : لاڑکانہ میڈیکل یونیورسٹی کے 11 طلبہ پر اقدامِ قتل کے مقدمہ کی سفارش

اسکول مالکان 5 سال سے پہلے یونیفارم تبدیل نہیں کر سکتے اور یونیفارم تبدیل کرتے وقت وہ محکمہ تعلیم سندھ کے ماتحت ڈائریکٹوریٹ انسپکشن اینڈ رجسٹریشن آف پرائیویٹ انسٹیٹیوشن سندھ سے لازمی اجازت و منظوری لے گا ۔

محکمے کی جانب سے ہدایات دیتے ہوئے کہا گیا ہے کہ ریگولیٹر اینڈ کنٹرول آرڈیننس 2001 کے رول 10 کیمطابق ہر سکول لازمی طور پر کل بچوں کا 10 فیصد طلبہ کو مفت تعلیم مہیا کرے گا ۔

سکول مالکان تین ماہ تک فیس ادا نہ کر سکنے والے طلبہ کو کسی بھی قسم کی سزا یا جرمانہ نہیں کر سکتے اور نہ ہی انہیں امتحان میں بیٹھنے سے روک سکتے ہیں ۔ اگر اس حوالے سے محکمے کو شکایت موصول ہوئی تو محکمہ انوسٹیگیشن کرے گا اور سکول مالکان کیخلاف کارروائی عمل میں لائے گا ۔

مذید پڑھیں : جامعہ اردو مالی بحران کیخلاف اساتذہ و غیر تدریسی عمال کا مشترکہ احتجاج

کوئی بھی اسکول لیٹ فیس نہیں لے سکتا اور لیٹ فیس ہونے کی صورت میں اسکول مالکان پابند ہیں کہ وہ والدین و طلبہ کو بلا کر ان کا موقف بھی سن لیں اور اس کے بعد ان کو دو نوٹس جاری کریں گے ۔

رول 12 کے مطابق سکول میں باقاعدگی سے والدین اور اساتذہ کی باہمی ایسوسی ایشن PTA کا اجلاس ہوا کرے گا تاکہ معمولی نوعیت کے مسائل حل اور مشاورت کا عمل جاری ہے ۔