میرے والد کا ہزارہ کو دیا گیا تحفہ ایبٹ آباد بورڈ واپس نہیں جانے دوں گا : راجا ڈاکٹر عامر زمان

خان پور (راجا محمد طاہر )موجودہ نااہل حکمران اپنی ناک کے نیچے اپنے عوام کے ساتھ زیادتی پر خاموش تماشائی بنے ہوئے ہیں کیونکہ اس میں ان کو کوئی مالی فائدہ نظر نہیں آ رہا ۔

ہزارہ کے عوام فکر نہ کریں میرے زندہ ہوتے ہوے کوئی مائی کا لال ہزارہ کے عوام کے حقوق کی جانب آنکھ اٹھا کر نہیں دیکھ سکتا. اپنے حقوق کے تحفظ کیلئے عوام میں ہمیشہ آگے پائیں گے ۔

خان پور سابق وزیر اعلیٰ خیبر پختونخواہ راجہ سکندر زمان مرحوم کی کاوشوں سے 1991 میں ایبٹ آباد بورڈ کی صورت میں ہزارہ ڈویژن کے لیے حاصل کیے جانے والے تحفے کو کسی بھی صورت میں ختم نہیں ہونے دوں گا ۔ سابق ایم این اے وسابق ضلع ناظم ہری پور ڈاکٹر راجہ عامر زمان

ہزارہ وال غیرت مند قوم ہیں اور وہ اپنی پہچان َاٹک پار نہیں جانے دیں گے ۔

ہزارہ کے لاکھوں بچے بچیوں یا انکے والدین کو چھوٹے چھوٹے کاموں کیلئے پشاور جانا پڑتا تھا اور دو تین دن وہاں رہنا پڑتا تھا. 1999 سے لے کر 1996 تک ایبٹ اباد بورڈ کے لیے کرائے کی بلڈنک استمال کی گئی میرے والد مرحوم راجہ سکندر زمان جو اس وقت وزیر اعلیٰ سرحد تھے نے بورڈ آف انٹرمیڈیٹ اینڈ سیکنڈری ایجوکیشن ایبٹ آباد کی موجودہ عمارت کا افتتاح دسمبر 1996 میں اپنے دست مبارک سے کیا۔

اس کے بعد ہزارہ ڈویژن کے عوام کے مسائل یہیں حل ہو جاتے ہیں. موجودہ نااہل حکمران اپنی ناک کے نیچے اپنے عوام کے ساتھ زیادتی پر خاموش تماشائی بنے ہوئے ہیں کیونکہ اس میں ان کو کوئی مالی فائدہ نظر نہیں آ رہا.۔

ہزارہ کے عوام فکر نہ کریں میرے زندہ ہوتے ہوے کوئی مائی کا لال ہزارہ کے عوام کے حقوق کی جانب آنکھ اٹھا کر نہیں دیکھ سکتا. اپنے حقوق کے تحفظ کیلئے عوام میں ہمیشہ آگے پائیں گے.