کیا ایک بار پھر رجیم چینج کا فصلہ۔۔۔

تحریر: آغا خالد

اطلاعات یہ ہیں کہ سندھ میں بلدیاتی اورقومی کےایک حلقہ کاانتخاب ملتوی کرنابڑے فیصلوں کی ابتداہے ڈالر پر بڑھتے دبائو اور دوست ملکوں کی جانب سے سرد مہری ڈانواں ڈول معیشت نےانتقام کومہمیز لگائی ہے ۔

پنجاب کے ضمنی الیکشن میں ن لیگ کی ہاراورخان کے بیانیہ کی تیزی سے بڑھتی مقبولیت کےیقین نےساری کایاہی پلٹ دی حزب اختلاف میں رہتےہوئے پنجاب میں سارے ضمنی انتخاب جیت کرناقابل شکست سمجھی جانے والی ن لیگ اقتدار میں آنےکےصرف 100 دن بعد ہی 15 حلقوں میں ہارگئی اور بعض میں ووٹوں کےحیرت انگیز تناسب نےتو ”وڈیاں ولوں“ ادھارچکانےکی چنگاری بھانبڑمیں بدل دی اور گزشتہ دنوں اقتدارنہیں انتخاب کے دیئے گئے۔

مشورہ کوپی ڈی ایم کی مرکزی قیادت کےنظراندازکرنے پرآج 20 جولائی2022 کی شام چند مشتعل اوباش لونڈوں کےہاتھوں جس طرح پی ایم ایل کے ایک سابق رکن اسمبلی کی سرعام ٹھکائی پھر اس کی فلم بندی اور پھرسوشل میڈیاپرایک گھنٹےکےاندر ایف 16 کی رفتارسے پھیلائےجانےکو محض اتفاق سمجھنےمیں ہی عافیت ہےلطیفہ یہ بھی ہواکہ ضمنی انتخاب کےایک روزبعد ہی خان نےاپنے ارکان کواسٹبلشمنٹ کےخلاف بیان بازی سےروک دیاتھا۔

مزید پڑھیں:عمران خان کو ترک موسیقار نے ‘Absolutely Not‘ کے گانے کا تحفہ دیدیا

ذرائع کہتے ہیں پولنگ سے چندروز قبل ایک خفیہ رابطہ میں خان نے پائوں پکڑلیےغلطی مانی اور آئندہ اٗن کےاندرونی معاملات میں دخل نہ دینےکی یقین دہانی کروائی اس کےعوض باباجی نے ضمنی انتخاب میں جیت بخشنےکی نویددی مگردودھ سےجلےخان کویقین نہیں آیاتونتائج کاانتظارہی بہترآپشن جانااورکامیابی کے نتائج سنتےہی خوشی خوشی اپنے ڈھول چیوں کو بھرے اجلاس میں آئندہ ”اباحضور“کا نام نہ لینےکی ہدایت جاری کردی ۔

اس طرح ذرائع کہتےہیں کہ طاقت کےمراکز اپنی سابق پالیسی کاتسلسل بھی برقرار رکھنےمیں کامیاب ہوئےکہ جس انتخاب کی مہم محترمہ مریم نواز چلائیں گی اور پارٹی میں طاقت وروں کےپسندیدہ کو انتخابی مہم سے باہر رکھاجائےگاوہاں انتخاب ن لیگ ہارے گی جہاں حمزہ جیسا نکمہ مہم چلائےگاوہاں جیت ہوگی ۔

اس کی مثال یہ مستند ذرائع گلگت، آزاد کشمیر اور کےپی کےضمنی انتخاب کی دیتے ہیں جہاں وقت کےسب سے بڑے جلسے اور عوام میں زبردست جوش و خروش کےباوجود نواز لیگ کوہروادیاگیا جبکہ ان نتائج کےبعد شہباز کے ایما پر ہتہیار پھینکتے ہوئے پنجاب میں محترمہ کوانتخابی مہم میں صرف علامتی انٹری دی گئی

مزید پڑھیں:بھارتی گلوکار سدھو موسے والا کے قتل میں ملوث 2 شوٹرپولیس مقابلے میں مارے گئے

یہاں طاقت ورغیرجانبدارہوگئےاور پی ایم ایل جیت کی سیریز بناگئی ہنوزدلی دور است مگرفلحال یہ قطعی فیصلہ ہے جس جماعت کاسربراہ نواز شریف ہواور ووٹ بینک نواز کےبعد محترمہ مریم نواز کومنتقل ہواہواور جس کابیانیہ ووٹ کوعزت دوہواور سیویلین بالادستی جن کاخواب ہوتعبیران کی گم شدہ منزل بنادی جائے ن لیگ سے بنیادی غلطی کہاں ہوئی انہیں حکومت لینے سے پہلے اسٹبلشمنٹ سے ان کے سابق موقف کےبرعکس یہ اعلان کرواناچاہئےتھاکہ عمران مخالف حزب اختلاف کےمتعلق 12 سال سے جھوٹ بولا گیا۔

یہ محض الزام تراشی تھی کہ نوازشریف ،آصف علی زرداری ،مولانا فضل الحمان بدعنوان ہیں یہ محض الزامات تھے جومختلف ٹی وی چینلز اور اینکرز نےغیرمصدقہ ذرائع سےچلائے نہ ہی یہ لوگ ملک دشمن ہیں نہ ہی مودی کےیار نہ ہی کشمیرفروش 35 سالہ اقتدار اور 35 پنکچر والے ڈرامے بھی مبنی برجھوٹ تھے اور یہ اعلانات ماضی کی طرح باربار دھرائےجاتے تاکہ ہماری سادہ لوح قوم کےذہن صاف ہوجاتےخاص طور پر نچلے یا دوسرے درجہ کےفوجی گھرانےجو12 سالہ منفی پروپگنڈہ سےمتاثرہوکرپی ڈی ایم کی قیادت کوملک دشمنی جیسے سنگین جرم کےمرتکب سمجھ بیٹھے تھےاور رجیم چینج پرشدید ردعمل دےرہےتھے۔

جس سے بڑے پریشاں ہوگئےتھےاور انہیں لامحدود اختیارات کےباوجوداس قدر شدیداندرونی مزاحمت کاسامناتھاکہ ابتدائی چند ہفتوں میں وہ کئی مرتبہ سٹپٹاگئےاورباآخرپی ڈی ایم کےلیے یہ ایک بڑامنفی پوائنٹ بن گیااگرچھوٹے میاں اس امکانات کوپیش نظررکھتےتوآج صورت حال بلکل مختلف ہوتی، ماضی میں ایم کیوایم کےمتعلق اس طرح کےموقف کئی باربدلے گئے اورخودن لیگ اور پی پی بھی مثبت اورمنفی رویوں کانشانہ بنتے رہے۔

مزید پڑھیں:برطانوی کوہ پیما 8 ہزار میٹر سے بلند 9 چوٹیاں سر کرنے والی کم عمر ماؤنٹینیئر بن گئیں

کراچی کی علیحدگی جناح پور کےنقشےاسلحہ کی بھرمار اور دیگرغداری کےالزامات ایک رات میں واپس لےکر نہ صرف محب وطن قرار دیاجاتارہابلکہ اسکرینوں پربرگیڈیئر اورکرنل سطح کےافسران اپنے ہی اداروں کے بنائے گئے اسکینڈلز کی پوری ڈھٹائی سے تردید کرتے رہے توایسی کیاآفت آن پڑی تھی کہ مشکل میں پھنسی اسٹبلشمنٹ کو کاندھا فراہم کرنےسے پہلےیہ شرائط منوایا جاناضروری نہیں سمجھاگیامگرہوااس کے برعکس یہاں تک کہ اقتدار سنبھالتے ہی محترمہ مریم نواز کولندن اپنے والد سے ملنے اور عمرہ کی سعادت سے بھی روک دیا گیا۔

کیس پنجاب ہائی کورٹ میں جس طرح چلایاگیابینچیں بنائی اورتوڑی گئیں یہ بھی محض اتفاق تھا اور وزیر اعظم یہ ساراتماشہ بے بسی سے دیکھتےرہےمحترمہ کی سزاکےبددیانتی پر مبنی فیصلے کےخلاف اپیل کی اسلام آباد ہائی کورٹ میں ہرہفتے شنوائی ہورہی تھی اور افواہ گرم تھی کہ محترمہ پرکیس ختم کیاجارہاہےچھوٹے میاں کےشیروانی پہنتےہی وہ بھی کھڈے لائن لگ گیازرداری صاحب کےتوصدیوں پرانےمقدمات میں تیزی سےبریت ہورہی ہے ۔

مگروزیراعظم کی پارٹی یونہی لٹک رہی ہے اوربظاہر سب سےزیادہ بے بس بھی وہی نظرآرہے ہیں اسی طرح سپریم کورٹ اور پاکستان بارکی جانب سے ارکان اسمبلی کی تاحیات نااہلی ختم کرنےکی اپیلیں بھی محترم ججز کی نظروں سےاوجھل ہیں کیونکہ اس کافائدہ ترین سمیت دیگر پی ٹی آئی ارکان کے ساتھ نوازشریف کوبھی پہنچ سکتاہے (فیر کیندے نیں بوٹاگالاں کڈدا اے) اسحاق ڈارکی واپسی پربھی ناپسندیدگی کاتاثردےکررکوادیاگیااب سنجیدگی سےغوروخوض کریں کہ حکومت لےکراورکاندھادےکرفائدہ انفرادی طورپرچھوٹے میاں اور ان کےپتر کوہواجبکہ پارٹی نےان کی شیروانی پہننے کی جوقیمت اداکی ہے اسےکفارہ اداکرنے میں عرصہ لگے گا۔

مزید پڑھیں:سندھ میں بلدیاتی انتخابات کا دوسرا مرحلہ ملتوی کردیا گیا

اب لگتایہی ہے کہ طاقت ور کبھی پنجاب ن لیگ کولینےنہیں دیں گے اس کے لیے زرداری کی کوششوں کاتوڑ جاری ہے اور دوطرفہ کشتی میں مزے چودھریوں کے آرہےہیں ایک آخری تجویز جناب نوازشریف کی خدمت میں عرض ہےکہ پارٹی کےڈیٹ ایکسپائر بوڑھوں کوچھوڑیں پارٹی محترمہ مریم کےحوالے کریں انہیں صدر بنائیں بجلی بلوں پر لگائے گئے۔

سرچارج سمیت تمام بےہودہ ٹیکس واپس لیں ان ٹیکسز نےپہلے ہی مہنگائی کےہاتھوں پسی ہوئی عوام کون لیگ سے بدظن کردیا ہے اور وہ ناقابل یقیں حدتک غصہ میں ہیں عوام کےغیض و غضب سےبچنےاوردوبارہ ان کی لازوال محبتیں جیتنے کےلیےاستعفی دیں اور عزت سے حکومت سےباہرآجائیں اورمزاحمتی بیانیہ کاسلسلہ وہیں سےشروع کریں جہاں ٹوٹاتھا ووٹ کوعزت، دو زندہ باد۔

Comments: 0

Your email address will not be published. Required fields are marked with *