شہباز شریف کا افغانستان سے کوئلہ درآمد کرنے کا اعلان، طالبان نے قیمتیں دگنی کردی

افغان وزارت خزانے کا کہنا ہے کہ طالبان انتظامیہ نے کوئلے کی قیمت میں دو گناسے بھی زیادہ اضافے کا فیصلہ کیا ہے۔ افغان انتظامیہ کی جانب سے یہ فیصلہ ایک ایسے وقت میں سامنے آیا ہے جب گذشتہ ہفتے پاکستان کے وزیراعظم شہباز شریف نے افغانستان سے کوئلہ درآمد کرنے کا اعلان کیا تھا۔

بدھ کے روز طالبان کی وزارت خزانہ نے کہا کہ طالبان انتظامیہ نے کوئلے کی قیمتوں میں اضافے کا فیصلہ اس لیے کیا ہے کہ بین الاقوامی امداد ختم ہو جانے کے بعدافغانستان کوئلے کی برآمدات پر محصولات بڑھا کر اپنے بجٹ خسارے کو کم کر سکے۔

مزید پڑھیں:بلوچستان، طوفانی بارشوں، سیلابی ریلوں سے معمولات زندگی معطل

معاشی مشکلات کے شکار افغانستان کے لیے پاکستان کو برآمد کئے جانے والے کوئلے پر عائد کی گئی کسٹمز ڈیوٹی ، آمدنی کا ایک اہم ذریعہ ہے۔ گزشتہ اگست افغانستان پر طالبان کے کنٹرول کے بعد بینکنگ سیکٹر پر پابندیوں اور ترقیاتی امداد میں کمی نے افغانستان کی معیشت کو شدید نقصان پہنچایا ہے۔”

وزارت خزانہ کے ترجمان احمد ولی حقمل کے مطابق، طالبان انتظامیہ نے گزشتہ ہفتے کوئلے کی قیمت 90 ڈالر فی ٹن سے بڑھا کر 200 ڈالر فی ٹن کر دی تھی۔جبکہ پاکستان کو ہر روز تقریباً 12سے 14ہزار ٹن کوئلہ برآمد کیا جاتا ہے۔طالبان حکام کہہ چکے ہیں کہ وہ افغانستان کا غیر ملکی امداد پر انحصار کم کرنا چاہتے ہیں۔

ترجمان وزارت خزانہ احمد ولی حقمل کے مطابق مئی میں کسٹم ڈیوٹی میں 30 فیصد اضافے کے بعد افغان حکام کو 60 ڈالر فی ٹن وصول ہوں گے اور یہ رقم افغانستان کی معیشت میں اہم کردار ادا کرے گی۔ افغانستان کو موجودہ سال کے بجٹ میں 50 کروڑ ڈالر سے زائد کے مالی خسارے کا سامنا ہے جومقامی کرنسی میں تقریبا 44 ارب افغانی بنتا ہے۔

مزید پڑھیں:برطانوی جنگی جہاز کا حوثیوں کے جدید ایرانی میزائلوں پر قبضہ

طالبان انتظامیہ کی جانب سے کوئلے کی قیمت میں اضافہ ایک ایسے وقت میں سامنے آیا ہے جب گزشتہ ہفتے پاکستان کےوزیراعظم شہباز شریف نے اعلان کیا تھا کہ پاکستان افغانستان سےکوئلے کی درآمد مقامی کرنسی میں کرے گا، تاکہ بیرونی زرمبادلہ کے ذخائر کوبچایا جا سکے۔

تاہم احمد ولی حقمل کے مطابق کوئلے کی قیمت میں اضافے کا حالیہ اعلان محض ایک اتفاق ہے، کیوں کہ کسی بھی ملک کی طرف سے تحقیق اورغور و حوض کے بغیر اچانک قیمتیں بڑھانے کا فیصلہ انتہائی غیر ذمہ دار عمل ہوگا۔

ایک پاکستانی عہدیدار کے مطابق پاکستان کوچند ہفتوں قبل ہی اس بات کا اشارہ مل چکا تھا کہ افغانستان کوئلے کی قیمتوں میں اضافے پر غور کر رہا تھا۔پاکستان زیادہ تر کوئلہ جنوبی افریقہ سے درآمد کرتا تھا تاہم حالیہ ہفتوں میں یورپ کی جانب سے جنوبی افریقہ کے کوئلے کے لیےطلب میں اضافہ ہوا جس کی وجہ سے وہاں بھی کوئلے کی قیمت میں اضافہ دیکھا جا رہا

مزید پڑھیں:اداکار ہارون شاہد نے پاکستانی شوبز انڈسٹری کا غلیظ ترین سچ بے نقاب کردیا

وزیراعظم شہباز شریف نے جون کے اختتامی ہفتے میں افغانستان سے درآمد شدہ کوئلے کی نقل و حمل کا نظام بہتر بنانے کے حوالے سے اجلاس کی صدارت کرتے ہوئے ہمسایہ ملک سے کوئلہ ڈالرز کی بجائے روپوں میں درآمد کرنے کی منظوری دی تھی۔

اجلاس میں وزیر اعظم کو بتایا گیا کہ ابتدائی طور پر صرف ساہیوال اور حب پاور پلانٹس کے لیے درکار کوئلے کی افغانستان سے درآمد پر امپورٹ بل میں سالانہ 2.2 ارب ڈالر سے زیادہ کی بچت ہوگی۔

Comments: 0

Your email address will not be published. Required fields are marked with *