شیرشاہ کالونی میں پانی کا بحران، ایم ڈی واٹر بورڈ سے اری محمد عثمان کی ملاقات

کراچی (پ ر) شیرشاہ کالونی میں پانی کے شدید ترین بحران پر ہونیوالے دھرنے کے بعد اب تک کی پیش رفت پر ایم ڈی واٹر بورڈ کے دفتر میں دوسری مذاکراتی میٹنگ ہوئی۔ میٹنگ میں واٹر بورڈ کی نمائندگی واٹربورڈ کراچی کے چیف انجینئرز حنیف بلوچ اور سکندر زرداری، شیرشاہ مذاکراتی کمیٹی کی نمائندگی جے یو آئی کے مرکزی رہنماء قاری محمد عثمان نے کی۔

مذاکراتی کمیٹی کے سربراہ مولانا عظیم اللہ عثمان اور کمیٹی کے ارکان کے علاوہ واٹر بورڈ کراچی کے سینئر افسران شریک ہوئے۔ قاری محمد عثمان نے گفتگو کرتے ہوئے کہاکہ شیرشاہ اس وقت کربلا کا منظر پیش کررہا ہے۔ لوگ پانی کی بوند بوند کو ترس گئے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ ہم سے واٹربورڈ نے جو وعدے کئے تھے ان کو پورا کرنے میں کوئی تاخیر یا رکاوٹ برداشت نہیں کریں گے۔

مزید پڑھیں: شیطانی چکر کیا ہوتا ہے۔۔؟؟

ہمارا ایک مطالبہ پہلے دن سے ہیکہ شیرشاہ چوک تا اکبر روڈ مکمل پانی فراہم کیا جائے۔ واٹر بورڈ طے شدہ امور پر سستی نہ دکھائے ورنہ اگلا قدم اٹھانے میں آزاد ہونگے۔ مذاکراتی کمیٹی نے واٹر بورڈ افسران کے سامنے دھرنے میں کئے گئے مطالبات رکھے۔

افسران نے ان مطالبات کی توثیق کرتے ہوئے کہا کہ گریویٹی کے پانی کو پمپنگ پر کرنے کی تمام دفتری کاروائی مکمل ہوچکی ہے۔ چند روز میں شیرشاہ کالونی کی گریویٹی کا پانی پمپنگ پر کیا جائے گا۔ 9 اور 10 انچ کی لائن کو عنقریب مکمل ریپلیس کیا جائے گا جسکی فائل PND میں پہنچ گئی ہے۔ حبیب بینک سے شیرشاہ پمپ تک کی لائن ریپلیس کرنے کا عمل بھی شروع ہوچکا ہے۔ اس لائن میں موجود کنکشنز ہولڈر تمام فیکٹریوں کو نوٹسز بھیجے جاچکے ہیں۔ جو وال غیرقانونی طور پر آپریٹ ہورہے تھے انہیں اگلے 10 روز کے اندر ختم کردیا جائے گا۔

ان کا مزید کہنا تھا کہ لیاری سے آنیوالی لائن کا ٹینڈر ہوچکا ہے۔ عنقریب افتتاح ہوگا۔ اس کے بعد اکبر روڈ، محمدی روڈ اور اردو بازار کو اس لائن سے کنکشنز دیئے جائیں گے۔ ناظم آباد سی پمپ پر موجود نئی موٹرز کے کنکشن کیلئے K الیکٹرک انتظامیہ کو خط لکھ دیا ہے۔ کنکشن لگتے ہی یہ موٹریں شیرشاہ کالونی کیلئے استعمال میں لائی جائیں گی۔

مزید پڑھیں: پٹرولیم مصنوعات کی بٹرھتی قیمتوں کا ذمہ دار کون؟

نیز ناظم آباد کے ٹینک میں پانی کو دوگنا کرنے کی بھی بھرپور کوشش کی جائے گی۔ انہوں نے کہا کہ حب انجکشن کی مقدار بڑھائی جائے گی تاکہ علاقے میں پانی کی صورتحال میں بہتری آسکے۔ اس سلسلے میں حب کے ایکسئین کو احکامات دیدئے ہیں۔انہوں نے مزید کہا کہ شیرشاہ کالونی میں ڈسٹربیوشن کی لائنوں کے حوالے سے بلک اور ڈسٹربیوشن کے ایکسئینز، مذاکراتی کمیٹی کے ارکان اور پولیس نمائندوں پر مشتمل کمیٹی بنے گی۔

اس کمیٹی کا فیصلہ حتمی ہوگا۔ علاقے میں کوئی بھی کنکشن کمیٹی کی منظوری کے بغیر غیرقانونی تصور ہوگا۔ آخر میں قاری محمد عثمان نے ایم ڈی واٹر بورڈ کے واضح احکامات کی روشنی میں واٹربورڈ کراچی کے چیف انجینئرز کے وعدوں اور یقین دہانی کے بعد گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ ہمیں امید ہے کہ یہ میٹنگ علاقے کی عوام کیلئے مفید ثابت ہو اور پانی سے محروم عوام مطمئن ہوکر زندگی بسر کر سکیں۔ واٹر بورڈ سنجیدگی دکھائے، لولی پاپ نہ دے۔

مزید پڑھیں: سندھ بلڈنگ کنٹرول اتھارٹی میں بڑے پیمانے پر تبدیلیاں

انہوں نے کہا کہ ناجائز کنکشنز کے خاتمے کا ایک ہی حل ہے کہ حبیب بینک سے شیرشاہ تک کے پائپ کی تبدیلی کا جو کام شروع کیا گیا ہے اسکا اختتام شیرشاہ چوک پر ہو۔ قاری محمد عثمان نے کہا کہ بدقسمتی سے شیرشاہ کالونی کے عوام کو کراچی کے باشندوں میں شائد اب تک شامل نہیں کیا گیا ہے۔ اسکا زندہ ثبوت یہ ہے کہ 25 سال سے ہم مطالبہ کررہے ہیں کہ حبیب بینک سے شیرشاہ پمپ تک تمام غیرقانونی کنکشنز منقطع کئے جائیں، اب تک اس پر عملدرآمد نہیں ہوا۔

اگر ہمیں کسی بھی لمحے یہ محسوس ہوا کہ ہمارے مطالبات کی منظوری اور کام میں کوئی رکاوٹ ہوگی تو اہلیان شیرشاہ اگلا قدم اٹھانے میں آزاد ہوں گے جسمیں شاہراہ فیصل پر دھرنا اور ایم ڈی واٹر بورڈ کے دفتر کا گھیراؤ شامل ہوگا۔ مذاکراتی کمیٹی کے وفد میں مولانا عظیم اللہ عثمان، حاجی عزیزالرحمن عزیز، مفتی عبدالرحمن، مفتی عدنان مدنی، مولانا حامد، سعد ملوک خان، نعیم ہاشمی ودیگر شامل تھے۔

Comments: 0

Your email address will not be published. Required fields are marked with *