سابقہ حکومت سے ایک سوال

تحریر : عبدالسلام فیصل

ہمارا مقدمہ سیدھا سا ہے ۔۔۔ڈینیئل مارک ( یہودی ، امریکہ) 2017 میں مطالبہ کرے ۔۔ شکور قادیانی 2019 میں چھوٹ جاتا ہے ۔۔اینٹونیو تاجانی ( یہودی ، یورپین پارلیمنٹ) مطالبہ کرے تو عاصیہ ملعونہ 2018 میں چھوٹ جاتی ہے ۔۔ یورپین پارلیمن 2021 میں پاکستان کے دو گستاخوں کے حق میں قرار داد پاس کرتی ہے۔” شفقت ایمانوئیل ” اور ” شگفتہ مسیح” 2021 میں چھوٹ جاتے ہیں۔۔

2021 میں ہی فرانسیسی صدر نبی صلی اللہ علیہ وسلم کی شان میں گستاخی کرے ۔۔تو ہم یورپ کا GSP+ بچانے نکل پڑتے ہیں ۔۔اپنی ہی قومی اسمبلی میں نان افیشل پرسن سے قرارداد پیش کرواتے ہیں جس کی کوئی وقعت ہی نہیں ہوتی ۔۔نہ سفیر نکالتے ہیں ۔ نہ قرار داد پاس ہوتی ہے۔نہ تعلقات ختم کرتے ہیں۔۔۔

مزید پڑھیں: ملک دشمن قوتیں کراچی میں بم دھماکوں میں ملوث ہیں ، مولانا محمد یوسف سلفی

ہالینڈ کے لعین کارٹونسٹ ” گیرٹ ولڈرز ” سے سفارتی سطح پر احتجاج کر کے ایک طرف مقابلہ رکوایا جاتا ہے۔ وہ لعین ٹھیک 7 دن بعد اپنی آئی ڈی پر دس دوبارہ نبی صلی اللہ علیہ وسلم کی شان میں گستاخانہ خاکے شائع کرتا ہے ۔۔2017 میں گرفتار ہونے والے دو گستاخوں 2020 میں سزائے موت سنائی جاتی ہے۔ عبدالوحید اور رانا نعمان ۔۔دونوں گستاخوں کو سزائے موت سنانے کے بعد پاکستان میں پھانسی کی سزا ہی معطل ہو جاتی ہے۔۔

انہی گستاخوں کے خلاف خود از نوٹس لینے والے جج جسٹس شوکت عزیز صدیقی ۔۔یہی جج 5 گستاخوں کے خلاف جنہوں نے ” روشنی اور بھینسا ” نامی گستاخانہ پیج چلائے تھے کے خلاف التواء کے شکار کیس کو غیر موثر بنا دیا جاتا ہے اور گستاخوں کو ملک سے باہر فرار کروا دیا جاتا ہے ۔ ملتان جیل میں قید گستاخ رسول ” جنید حفیظ ” کو خصوصی سہولیات فراہم کی جاتی ہیں ۔ اور دعوے کئے جاتے ہیں کہ اسکو کتب فراہم کر۔کے ابھی تک 5000 کتب کا مطالعہ کروایا جا چکا ہے ۔۔2020 میں شیعہ ذاکر ” آصف رضوی ” صحابہ کرام رضوان اللہ علیھم اجمعین کی شان میں شدید گستاخیاں کرتا ہے ۔گرفتار کرنے کی بجائے اسکو عمران خان سے ملاقات کے بعد فرار کروا دیا جاتا ہے جسکی سہولتکاری زلفی بخاری کرتا ہے۔۔۔

2021ء میں ہی ماہ محرم الحرام میں توھین مذہب و توھین صحابہ رضی اللہ عنھم اجمعین پر صرف پنجاب میں 42 مقدمات درج ہوتے ہیں کسی ایک کو بھی سزا نہیں دہ جاتی ۔۔2021 میں ہی ” امر جلیل "۔ نامی لعین ملحد ایک بھرے مجمعے میں اللہ ربّ العزت کی شان میں شدید گستاخیاں کرتا ہے کوئی کاروائی نہیں ہوتی ۔۔۔ 2019 میں پہلی بار باقائدہ ” عورت مارچ ” کا انعقاد ہوتا ہے ۔ جس میں لبرل سیکولر طبقہ شعائر اسلام کی شدید توھین کی جاتی ہے کسی ایک ذمہ دار کے خلاف کاروائی نہیں ہوتی ۔۔۔

مزید پڑھیں: ثانوی تعلیمی بورڈ کے تحت سالانہ امتحانات کا آغاز، چیئرمین میٹرک بورڈ

نومبر 2020 میں عاصیہ ملعونہ فرانسیسی ٹیلی ویژن کو انٹرویو دیتے ہوئے پاکستان سے توھین رسالت کے قوانین کو ختم کرنے کے لئے کیمپین چلانے کا مطالبہ کرتی ہے کوئی سفارتی احتجاج نہیں کیا جاتا ۔۔۔15 فروری 2021 کو ” مسجد وزیر خان لاہور کے احاطے میں دھول کی تھاپ پر وفاقی وزیر اطلاعات کی نگرانی میں بگھڑے ڈالے جاتے ہیں۔۔اسی 2021وزیر خان مسجد میں ایک ڈرامے کی شوٹ کے دوران اداکارہ ” سباء قمر ” رقص کرتی دیکھائی دیتی ہے کوئی ایکشن نہیں ہوتا۔۔۔30 اپریل 2021 میں یورپین پارلیمنٹ میں پاکستان میں توھین رسالت کا قانون ختم کروانے کے لئے 668 ووٹوں کے سے ساتھ قرار داد پاس کروائی جاتی ہے۔۔جس پر عمران خان کوئی تقریر نہیں کرتا اور نہ ہی سفارتی سطح پر احتجاج ریکارڈ کرواتا ہے ۔۔

18 مئی 2021 کو پاکستان کے مختلف میڈیا چینلز سمیت PTV پر قادیانی شاعر ” عبیداللہ علیم ” کی یاد میں ڈاکومینٹری چلائی جاتی ہے یہ وہی لعین شخص ہے جس نے قادیانیوں کے تیسرے خلیفہ ” مرزا ناصر قادیانی” کے لئے شعری مجموعہ ” خورشید صفت شخص ” لکھا تھا ۔۔۔کوئی پیمرا کی کاروائی نہیں ہوتی ۔۔۔9 جون 2021 میں ” صفدر آباد ” قادیانی خاتون کی تدفین مسلمانوں کے قبرستان میں زبردستی کی جاتی ہے ۔۔مسلمانوں پر شدید تشدد کیا جاتا ہے ۔ اور پھر شدید عوامی رد عمل پر اسکو وہاں سے منتقل کرنے کا حکم آتا ہے ۔۔۔لیکن عمل درآمد نہیں ہوتا ۔۔

وجاہت مسعود قادیانی سمیت کئی لبرل شدید توھین آمیز پوسٹنگ کرتے ہیں سوشل میڈیا پر کوئی کاروائی نہیں ہوتی ۔۔ اسلام آباد میں ایک شخص جو اپنا نام ٫ ڈیویڈ” بتاتا ہے اسرائیل کا جھنڈا لیکر کئی دن تک خیمہ لگا کر پاکستان سے اسرائیل تک کی فلائیٹ چلانے کا مطالبہ کرتا ہے ۔۔ جس کے خلاف کوئی کاروائی نہیں ہوتی۔۔۔اسلام آباد ماڈل ٹاؤن کی مسجد توحید اہل حدیث سمیت ملک کے 11 شہروں میں 24 مساجد کو تجاوزات کے نام پر شہید کیا جاتا ہے یا کئے جانے کی کوشش کی جاتی ہے ۔۔۔ کوئی پوچھنے والا نہیں ہوتا ۔۔۔

مزید پڑھیں: ق لیگ میں کوئی اختلاف نہیں ملک کی ترقی میں اپنا کردار جاری رکھیں گے، سینیٹر کامل علی آغا

مولانا سمیع الحق کو قتل کیاگیا عمران خان کی اصلیت بتانے پر ، مولانا عادل خان ، محمد بلال خان ، (بنی گالا کی ہمسائیگی میں) مولانا اکرام سمیت انکے دو بچوں کا قتل ، شیخ الحدیث مولانا عبدالحمید رحمتی سمیت پاکستان میں 57 علمائے کرام کو قتل کیا جاتا ہے ۔۔۔ کوئی پوچھنے والا نہیں ۔۔۔قلعہ دیدار سنگھ میں ” غلام فاطمہ ” اور مردان کی ” عائشہ ” سمیت پاکستان بھر میں 10 سال سے کم عمر 34 بچیوں کو 3.5 سالوں میں زیادتی کے بعد قتل کر دیا جاتا ہے ۔۔۔ واقعات تھمنے کا نام نہیں لیتے ۔۔۔سانحہ ساہیوال میں تین کم سن بچوں کے سامنے انکے والدین کو قتل کرنے والے پولیس افسران شک کا فائدہ دے کر لاہور ہائی کورٹ سے بری کر دیئے جاتے ہیں ۔۔۔

پنجاب ٹیکسٹ بک بورڈ کی نویں جماعت کی اسلامیات سے ایمانیات کے باب میں سے ختم نبوت کا باب ختم کر دیا جاتا ہے۔۔ شدید احتجاج کے بعد واپس ڈالا جاتا ہے ۔۔۔2018 سے لیکر 2021 تک ” تحریک لبیک ” سے فرانسیسی سفیر نکالنے اور ان سے سفارتی تعلقات ختم کرنے سمیت تین معاہدے ہوتے ہیں اور تینوں کی خلاف ورزی کر دی جاتی ہے۔۔۔کئی کارکنان شہید ہوتے ہیں اور 5000 سے زائد گرفتاریاں ہوتی ہیں ۔۔۔یہ وہ واقعات ہیں جو سوشل میڈیا پر بہت ہائی لائٹ ہوئے ۔۔۔اسکے باوجود آج ہمیں لگتا ہے کہ خان نے وہ تمام وعدے پورے کئے جو وہ کہتا تھا ۔

اقوام متحدہ میں اتنی موثر قرار داد پیش ہوئی کہ امریکی سفیر اب تک 2 بار اسکے بعد پاکستان میں قید سزائے موت کے 76 مجرموں کی رہائی کا مطالبہ کر رہا ہے ۔۔۔جب اپنے ہی گھر میں قید گستاخوں کو پھانسی نہیں دی جا سکتی ۔۔۔اپنے ہی گھر میں پھیلنے والے اسلامو فوبیا کو ختم نہیں کیا جا سکا ۔۔۔جب اپنے ہی گھر میں بیٹھے قادیانی ، سیکولر اور لبرل بے لگام ہوئے بیٹھے ہیں جن کی گرفتاریاں کرتے وقت انکی ٹانگیں کانپ جاتی ہیں ۔۔۔یہ قادیانی سیکولر لبرل پاکستان کے آئین کو جوتے کی نوک پر رکھتے ہیں ۔۔تب کہاں تھا یہا جنون ؟؟؟؟

مزید پڑھیں: منحرف رکن کا ووٹ شمار نہیں ہوگا، سپریم کورٹ نے صدارتی ریفرنس پر فیصلہ سنادیا

نبی صلی اللہ علیہ والہ وسلم کی عزت کے لئے لڑنے والا علامہ خادم رضوی رحمتہ اللہ علیہ بلاتا رہا عوام باہر نہیں نکلی ۔۔۔جب وفات پائی تو تاریخ کا سب سے بڑا جنازہ پڑھا دیا ۔۔۔۔بھائی آپ کو ایسی قومیت مبارک ۔۔۔۔۔جس میں آپ اپنے سیاسی لیڈر کا دفاع تو کر سکتے ہیں ۔۔۔ لیکن میرے نبی صلی اللہ علیہ والہ وسلم کی عزت و آبرو کے لئے کچھ نہیں کر سکتے ۔۔۔۔یہاں پر ایمان سے زیادہ سیاسی ترجیحات پر عمل ہوتا ہے ۔۔۔۔ بیانات تقاریری تو ہر مسلمان سیاستدان کی ناموس رسالت کے تحفظ پر مل جائیں گی۔۔۔لیکن عمل کیا ؟؟؟؟

جب اپنے ہی گھر میں گستاخوں کو پٹا نہیں ڈالا گیا تو پوری دنیا میں کیسے ڈالا جائے گا ؟؟؟؟۔نکلو اور نکلو خان کے لئے جس نے فراڈ کر کے اقوام متحدہ میں قرارداد پاس کروائی اور اس میں ریاست مدینہ کے اصل والی جناب محمد رسول اللہ صلی اللہ وعلیہ وسلم کا نام تک نہ لکھوا سکا ۔۔۔۔ کچھ دن تک کچھ اہم انکشافات کروں گا ۔۔ خان اور قومی سیاسی لیڈروں کے لئے نکلنے والو ۔۔۔۔ ربّ نے پوچھنا ہے کہ میرے نبی صلی اللہ علیہ وسلم کی عزت و ناموس کے لئے بھی کچھ منوایا تھا یا نہیں؟؟؟؟؟۔

نوٹ: ادارے کا تحریر سے متفق ہونا ضروری نہیں، یہ بلاگ مصنف کی اپنی رائے پر مبنی ہے۔

Comments: 0

Your email address will not be published. Required fields are marked with *