ترکی نے فن لینڈ اور سوئیڈن کی نیٹو میں شمولیت کی مخالفت کردی

ترکی نے فن لینڈ اور سوئیڈن کی نیٹو میں شمولیت کی مخالفت کردی

انقرہ: روس کے بعد ترکی نے فن لینڈ اور سوئیڈن کی نیٹو میں شمولیت کی مخالفت کردی۔ ترک صدر طیب اردگان نے کہا کہ جنگ کے منظر نامے میں ایسے اقدامات کی حمایت نہیں کی جاسکتی۔

غیرملکی میڈیا کےمطابق ترک صدر رجب طیب اردگان نے صحافیوں سے گفتگو میں کہا کہ انقرہ کے لیے یہ ممکن نہیں ہے کہ وہ یوکرین پر روسی جارحیت کے اس ماحول میں فن لینڈ اور سوئیڈن کی نیٹو میں شمولیت کی حمایت کرے۔

طیب اردگان نے کہا کہ ترکی خود نیٹو کا حصہ ہے لیکن اسکینیڈیوین ممالک کی نیٹو کی رکنیت سازی کو لے کر اس کے مثبت نظریات نہیں ہیں حتیٰ کہ ان کے کچھ ممالک میں ممبران اسمبلی بھی ہیں لیکن ان کے لیے اس طرح کی حمایت ممکن نہیں ہے۔

میڈیا رپورٹس کے مطابق اس معاملے پر ترکی کی مخالفت فن لینڈ اور سوئیڈن کی نیٹو کی رکنیت سازی میں مشکلات کھڑی کرسکتی ہے کیونکہ نیٹو کا رکن بننے کے لیے تمام نیٹو اتحادیوں کی منظوری لازم ہے۔

ترک صدر کا بیان ایسے وقت میں سامنے آیا جب گزشتہ روز فن لینڈ کے صدر اور وزیراعظم کا کہنا تھا کہ ان کا ملک بلاتاخیر فوری طور پر نیٹو کی رکنیت کے لیے درخواست دے۔

Comments: 0

Your email address will not be published. Required fields are marked with *