افغانستان، پنجشیر میں جھڑپیں جاری، جانبین سے اموات کی اطلاعات

افغانستان سے امریکی انخلا کے بعد سات ارب ڈالر کا اسلحہ طالبان کے ہاتھ لگا

پنجشیر: افغانستان سے آمدہ اطلاعات کے مطابق افغانستان کے صوبہ پنجشیر کے گرد و نواح میں طالبان اور باغیوں کے مابین جھڑپیں ہوئی ہیں ـ

یہ جھڑپیں طالبان اور جبھۂ مقاومت یا احمد شاہ مسعود کے پیروکاروں کے مابین ہوئی ہیں ـ جبھۂ مقاومت کو طالبان اور اکثر افغان شہری باغیوں کے نام سے پکارتے ہیں ـ
مزید پڑھیں: شرجیل میمن کی ایشیائی ترقیاتی بینک اور اے ایف ڈی کے وفد سے ملاقات

اب تک کی اطلاعات کے مطابق درجنوں باغی ہلاک و زخمی ہوئے ہیں، جبکہ ان کی ایک بڑی تعداد طالبان نے گرفتار بھی کی ہے ـ سوشل میڈیا پر ان کی تصاویر اور ویڈیوز دیکھی جا سکتی ہیں ـ

جبھۂ مقاومت نے گزشتہ شب صوبہ کاپیسا کے گورنر ہاؤس پر بھی میزائل داغنے کا دعویٰ کیا ہے، جبکہ وہ بغلان کے صوبوں پر حملے کرنے کا دعویٰ بھی کرتے ہیں ـ

طالبان کے وزیر داخلہ خلیفہ سراج الدین حقانی نے پنجشیر کا دورہ بھی کیا ہے، جس کے ذریعے وہ بتلانا چاہتے ہیں کہ وہاں زیادہ قابل تشویش کچھ نہیں ہے ـ

مزید پڑھیں:مفتی سردار صاحب حقانی کی شہادت اور ہماری سادگی

طالبان ترجمان و نائب وزیر اطلاعات افغانستان ذبیح اللہ مجاہد نے بارہا اس بات کی تردید کی ہے کہ گویا پنجشیر میں جنگی محاذ کھلا ہوا ہے ـ تاہم صوبائی وزارت اطلاعات پنجشیر نے چھ طالبان کے مارے جانے اور دو کے زخمی ہونے کی تصدیق کی ہے ـ

طالبان کا دعوٰی ہے کہ وہ باغیوں کے ٹھکانوں پر چھاپے مار رہے ہیں، جس سے باغیوں کی بڑا حملہ کرنے کی صلاحیت مکمل طور پر ختم ہوچکی ہے ـ

Comments: 0

Your email address will not be published. Required fields are marked with *