آئی ایم یف سے مذاکرات کے دوران ڈالر کی اڑان کو روکا جائے، فرخ قندھاری

سعودی عرب سے کم قیمت پر تیل اور سرمایہ کاری سے عوام کو ریلیف مل سکتا ہے: فرخ قندھاری

کراچی: کورنگی ایسوسی ایشن آف ٹریڈ اینڈ انڈسٹریل (کاٹی) کے قائم مقام صدر فرخ قندھاری نے ڈالر کی قیمت میں ایک مرتبہ پھر اضافہ پر تشویش کا اظہار کیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ آئی ایم ایف سے مزاکرات کے آغاز پر ڈالر کی قدر میں اضافہ کے نقصانات معیشت پر مرتب ہوں گے۔

پاکستانی روپیہ کے استحکام اور زرمبادلہ کے ذخائرمیں اضافہ کے لئے وزیر اعظم شہباز شریف دوست ممالک سے تعاون کیلئے اپنا اثرورسوخ استعمال کریں۔ انہوں نے کہا کہ نئی حکومت کے آتے ہی ڈالر میں 8 سے 9 روپے کی کمی ہوئی اور چند روز بعد ہی 4 روپے تک اضافہ ظاہر کرتا ہے کہ ڈالر کی مصنوعی قلت پیدا کی جارہی ہے۔

فرخ قندھاری نے کہا کہ ڈالر کو مارکیٹ میں فری فلوٹ پر چھوڑنے کے ناقابل تلافی نقصان پہنچ رہے ہیں۔ پاکستان کی کرنسی دنیا کی بدترین کرنسیوں میں شمار کی جارہی ہے۔

قائم مقام صدر کاٹی نے حکومت سے مطالبہ کیا کہ وہ فوری طور پر کرنسی مارکیٹ میں ڈالر کی فری فلوٹ ختم کریں اور آئی ایم سے مزاکرات کرکے کرنسی مارکیٹ پر عائد شرائط میں نرمی کیلئے قائل کیا جائے۔

انہوں نے کہا کہ ڈالر کی قدر میں حالیہ اضافہ سے قرضوں کے بوجھ میں کمی ہونے کے بعد 800 ارب کے قرضے کم ہوگئے تھے جس میں پھر اضافہ ہو رہا ہے۔ قائم مقام صدر کا کہنا تھا کہ ڈالر کی قدر کو مستحکم کرنے کیلئے سیاسی منظر نامے اور معیشت میں بہتری ناگزیر ہے۔

انہوں نے وزیر اعظم سے اپیل کی کہ وہ فوری طور پر ڈالر کی قدر میں اضافہ کو روکیں تاکہ پاکستان مزید معاشی مشکلات سے دوچار نہ ہو۔

Comments: 0

Your email address will not be published. Required fields are marked with *