شُکر کی اقسام

اشفاق احمد لکھتے ہیں کہ: ایک دن بے بے نے بیسن کی روٹی پکا کے دی۔ میں نے دو روٹیاں کھائیں اور ساتھ لسّی پی۔ پھر بے بے کو خوش کرنے کیلئے زوردار آواز میں اللّٰہ کا شُکر ادا کیا۔

بے بے نے میری طرف دیکھا اور پُوچھا: اے کی کیتا ای؟

میں نے کہا: بے بے! شُکر ادا کیتا اے اللّٰہ دا۔

کہنے لگی: اے کیسا شُکر اے؟ دو روٹیاں تُجھے دیں… تُو کھا گیا…نہ تُو باہر جھانکا، نہ ہی پاس پڑوس کی خبر لی کہ کہیں کوئی بُھوکا تو نہیں… ایسے کیسا شُکر؟

مزید پڑھیں: محکمہ موسمیات نے کراچی میں تیز بارش کی پیشگوئی کردی

پُترا! روٹی کھا کے لفظوں والا شُکر تو سب کرتے ہیں… اپنی روٹی کسی کے ساتھ بانٹ کر شُکر نصیب والے کرتے ہیں۔

اللّٰہ کو لفظوں سے خوش کرنا چھوڑ دے۔ پُتر! عمل پکڑ عمل! اللّٰہ جس چیز سے نواز دے… اُس کو خوشی سے استعمال کر اور کسی کے ساتھ بانٹ لیا کر کہ یہ عملی شُکر ہے”

نعمتِ خداوندی کا عملی شُکر تو اُس نعمت کو بانٹ کے کھانے میں ہی ہے اور وہ بھی عزیز رشتہ داروں اور اڑوس پڑوس کے لوگوں کے ساتھ۔ اللہ آپ کو آسانیاں عطا فرمائے اور آسانیاں تقسیم کرنے کا شرف عطا فرمائے آمین

نوٹ: ادارے کا تحریر سے متفق ہونا ضروری نہیں، یہ بلاگ مصنف کی اپنی رائے پر مبنی ہے۔

Comments: 0

Your email address will not be published. Required fields are marked with *