ﻏﻠﻄﯽ ﭘﺮ ﺷﺮﻣﻨﺪﮦ ﻧﮧ ﮬﻮﻧﺎ

*ﺑﺮﺻﻐﯿﺮ ﭘﺎﮎ ﻭﮨﻨﺪ ﯾﻌﻨﯽ ﻣﻮﺟﻮﺩﮦ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﺑﮭﺎﺭﺕ ﺍﻭﺭ ﺑﻨﮕﻠﮧ ﺩﯾﺶ ﭘﺮ ﺑﺮﻃﺎﻧﯿﮧ ﮐﮯ زمانہ ﺣﮑﻤﺮﺍﻧﯽ ﮐﮯ ﺩﻭﺭﺍﻥ
ﺍﯾﮏ ﺍﻧﮕﺮﯾﺰ ﺁﻓﯿﺴﺮ ﮐﺎ ﺗﺒﺎﺩﻟﮧ ﮐﺴﯽ ﻣﮩﺬﺏ ﻋﻼﻗﮯ ﺳﮯ ﺑﺮﺻﻐﯿﺮ ﻣﯿﮟ ﮬﻮگیا۔ ﮐﭽﮫ ﻋﺮﺻﮧ ﺍﺱ ﻏﻼﻡ ﻋﻼﻗﮯ ﻣﯿﮟ ﺭﮨﻨﮯ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﺍﻧﮕﺮﯾﺰ ﺁﻓﯿﺴﺮ ﺷﺪﯾﺪ ﮈﭘﺮﯾﺸﻦ ﮐﺎ ﺷﮑﺎ ﺭھنے لگا۔ اس نے ﯾﮩﺎﮞ ﺳﮯ ﭨﺮﺍﻧﺴﻔﺮ ﮐﯿﻠﺌﮯ ﮐﻮﺷﺸﯿﮟ ﺷﺮﻭﻉ ﮐر دیں۔ ﺟﺐ ﮨﺮ ﻃﺮﻑ ﺳﮯ ﻧﺎﮐﺎﻡ ﮬﻮﺍ ﺗﻮ ﻣﻠﮑﮧ ﺑﺮﻃﺎﻧﯿﮧ ﮐﻮ ﺍﯾﮏ ﻋﺠﯿﺐ ﺧﻂ ﻟﮑﮭ دیا،

"ﻣﻠﮑﮧ ﻋﺎﻟﯿﺠﺎﮦ ۔۔!
ﻣﺠﮭﮯ ﮐﺲ ﺟﺮﻡ ﻣﯿﮟ ﺍﯾﮏ ﺍﯾﺴﮯ ﻋﻼﻗﮯ ﻣﯿﮟ ﭨﺮﺍﻧﺴﻔﺮ ﮐﯿﺎ ﮔﯿﺎ ﺟﺲ ﻋﻼﻗﮯ ﮐﮯ ﻟﻮﮒ ﻏﻠﻂ ﮐﺎﻡ ﯾﺎ ﮐﻮﺗﺎﮨﯽ ﭘﺮ ﺷﺮﻣﻨﺪﮦ ﻧﮩﯿﮟ ﮬﻮﺗﮯ۔”
ﻭﺿﺎﺣﺖ ﻟﮑﮭﺘﮯ ﮬﻮﺋﮯ ﻣﺰﯾﺪ ﮐﮩﺎ: "ﺟﺐ ﻣﯿﮟ ﮐﺴﯽ ﻏﻠﻄﯽ ﯾﺎ ﮐﻮﺗﺎﮨﯽ ﭘﺮ ﯾﮩﺎﮞ ﮐﮯ ﮐﺴﯽ ﻣﺎﺗﺤﺖ ﻣﻘﺎﻣﯽ ﺳﺮﮐﺎﺭﯼ ﻣﻼﺯﻡ ﮐﻮ ﮈﺍﻧﭩﺘﺎ ﮬﻮﮞ ﺗﻮ ﻭﮦ ﺷﺮﻣﻨﺪﮦ ﮬﻮﻧﮯ ﮐﯽ ﺑﺠﺎئے ﺩﺍﻧﺖ ﺩﮐﮭﺎ ﮐﺮ ﮨﻨﺲ دیتا ھے۔ یہاں کے لوگ ﻏﻠﻄﯽ ﮐﯽ ﺍﺻﻼﺡ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﯽ ﺑﺠﺎئے
ﻏﻠﻄﯽ ﺩﮨﺮﺍﺗﮯ ﮬﯿﮟ۔ ﯾﮧ ﺍﻧﺴﺎﻧﯽ ﻓﻄﺮﺕ ﮐﮯ ﺧﻼﻑ ھے۔ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺷﺮﻣﻨﺪﮔﯽ ﺍﻭﺭ ﻧﺪﺍﻣﺖ ﮐﺎ ﺟﺬﺑﮧ ذرا بھر ﻣﻮﺟﻮﺩ ﻧﮩﯿﮟ۔”
ﺧﻂ ﮐﮯ ﺁﺧﺮ ﻣﯿﮟ ﺩﻭﭨﻮﮎ ﺑﺎﺕ لکھی: "ﻣﺠﮭﮯ ﺑﻼ ﺗﺎﺧﯿﺮ ﯾﮩﺎﮞ ﺳﮯ ﯾﻮﺭﭖ ﭨﺮﺍﻧﺴﻔﺮ ﮐﯿﺎ ﺟﺎئے، ﯾﺎ ﻣﯿﺮﺍ ﯾﮧ ﺧﻂ ﺍﺳﺘﻌﻔﯽٰ ﺳﻤﺠﮫ ﮐﺮ ﻣﻨﻈﻮﺭ ﮐﯿﺎ ﺟﺎئے۔”

مزید پڑھیں: مدینہ مسجد ایشو پر عدالت عظمی کو دعوت فکر

*ﺟﻮﺍﺏ ﻣﯿﮟ ﻣﻠﮑﮧ ﻋﻈﻤٰﯽ ﻧﮯ ﻟﮑﮭﺎ: ” ﺍﮔﺮ ﺑﺮﺻﻐﯿﺮ ﮐﮯ ﻟﻮﮒ ﻏﻠﻄﯽ ﭘﺮ ﺷﺮﻣﻨﺪﮦ ﮬﻮﺗﮯ؛ ﮐﻮﺗﺎہی ﭘﺮ ﻧﺎﺩﻡ ﮬﻮﺗﮯ؛ ﻏﻠﻄﯽ ﺍﻭﺭ ﮐﻮﺗﺎﮨﯽ ﭘﺮ ﮨﻨﺴﻨﮯ ﮐﯽ ﺑﺠﺎئے ﺍﭘﻨﯽ ﺍﺻﻼﺡ ﮐﺮﺗﮯ، ﺗﻮ ﭘﮭﺮ ﮨﻢ ﺍﻧﮕﺮﯾﺰ لوگ ﺩﺱ ﮨﺰﺍﺭ ﻣﯿﻞ ﺩﻭﺭ ﺳﮯ ﺁ ﮐﺮ ﺍﻧﮩﯿﮟ ﻏﻼﻡ ﻧﮧ ﺑﻨﺎ پاﺗﮯ؛ ﺍﻥ ﭘﺮ ﺣﮑﻤﺮﺍﻧﯽ ﻧﮧ ﮐﺮ سکتے. . . ﮨﻢ ﺣﺎﮐﻢ اور ﯾﮧ ﻣﺤﮑﻮﻡ ﻧﮧ ﮬﻮﺗﮯ. . . ﯾﮧ ﻟﻮﮒ ﮬﻤﯿﮟ ﺍﭘﻨﮯ ﻭﻃﻦ ﭘﺮ ﻗﺒﻀﮯ ﮐﺎ ﻣﻮﻗﻊ ﻧﮧ ﺩﯾﺘﮯ۔ ﯾﮩﺎﮞ ﮐﮯ ﻣﻘﺎﻣﯽ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﮐﯽ ﺍﺳﯽ ﻓﻄﺮﺕ ﻧﮯ ﮬﻤﯿﮟ ﺁﻗﺎ ﺍﻭﺭ ﺍﻧﮩﯿﮟ ﻏﻼﻡ ﺭﻋﺎﯾﺎ ﮐﺎ ﻣﻨﺼﺐ ﺩﯾﺎ ھے۔ ﻏﻠﻂ ﮐﺎﻡ ﭘﺮ ﺷﺮﻣﻨﺪﮔﯽ ﺍﻭﺭ ﻧﺪﺍﻣﺖ ﮐﺎ ﺟﺬﺑﮧ ﮬﻮ ﺗﻮ ﺍﻧﺴﺎﻥ ﺍﻧﺴﺎﻥ ﺭﮨﺘﺎ ﮬﮯ ﻭﺭﻧﮧ ﺍﻧﺴﺎﻥ ﺩﻭ ﭨﺎﻧﮕﻮﮞ ﻭﺍﻻ ﺍﻧﺴﺎﻥ ﻧﻤﺎ ﺟﺎﻧﻮﺭ ﺭﮦ ﺟﺎﺗﺎ ﮬﮯ۔ ﺟﻨﮓ ﻋﻈﯿﻢ ﺩﻭئم ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﺍﻧﮕﺮﯾﺰ ﭼﻠﮯ ﮔﺌﮯ : ﻣﮕﺮ ﯾﮩﺎﮞ ﮐﮯ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﮐﯽ ﻓﻄﺮﺕ ﻧﮩﯿﮟ ﺑﺪﻟﯽ۔ ﭼﭙﮍﺍﺳﯽ ﺳﮯ ﻟﯿﮑﺮ ﻭﺯﯾﺮ ﺍﻋﻈﻢ ﺗﮏ ﻏﻠﻄﯽ ﭘﺮ ﮐﻮﺋﯽ ﺷﺮﻣﻨﺪﮦ ﻧﮩﯿﮟ ﮬﻮﺗﺎ”۔

ﻏﻠﻄﯽ ﺗﻮ ﻣﻌﻤﻮﻟﯽ ﺑﺎﺕ ہے ہم تو بڑے سے بڑا گناہ بھی اعلانیہ کر کے نادم ہونے کے بجاے فخر یہ اسکی تشہیر بھی کرتے ہیں۔

نوٹ: ادارے کا تحریر سے متفق ہونا ضروری نہیں، یہ بلاگ مصنف کی اپنی رائے پر مبنی ہے۔

Comments: 0

Your email address will not be published. Required fields are marked with *

Exit mobile version