پاکستان میں نیا زمانہ و نئی صبح شام پیدا ہو چکی ہے، حافظ سعد حسین رضوی

لاہور : علامہ خادم حسین رضوی کے عرس کی تین روزہ تقریبات کا ا ختتام ہوگیا ہے،اختتام کے موقع پر شہدائے ناموس رسالت کانفرنس کا انعقاد کیا گیا، کانفرنس سے امیر تحریک لبیک پا کستان صاحبزادہ حافظ سعد حسین رضوی، نائب امیر پیر سید ظہیر الحسن شاہ، علامہ عبدالستار سعیدی، مجلس شوریٰ کے رکن ڈاکٹر محمد شفیق امینی، مفتی عمیر الاظہری،علامہ غلام عباس فیضی،علامہ فا روق الحسن قادری،مفتی محمد وزیر علی، پیر سید سرور حسین شاہ سیفی و دیگر نے خطاب کیا۔

شہدائے نامو س رسالت کانفرنس سے خطاب کر تے ہوئے امیر تحریک لبیک پا کستان حافظ سعد حسین رضوی نے کہا کہ پا کستان میں نیا زمانہ و نئی صبح شام پیدا ہو چکی ہے،آج صرف میں خراج عقیدت پیش کر نے آیا ہوں وہ بھی صرف دو جگہ ایک اپنے قائد کو جس نے آج ہم سب کو اس جگہ پہنچایا اور یہ راستہ دیکھایا دوسرا ہماری وہ مائیں بہنیں جنہوں نے اپنے بچوں،بھائیوں اور سر کے تاجوں کو حضورؐ کی عزت و ناموس کیلئے پیش کیا،کیونکہ کوئی یہ نہ سمجھے کے مسلمانوں کی مائیں،بہنیں بانجھ ہو گئی ہیں بلکہ انہوں نے اس پر فتن دور میں بھی اس عظیم مشن پر اپنے پیاروں کو پیش کیا۔

انہوں نے کہا کہ خدا کی عزت کی قسم آج ہم بازی جیت گئے،ہماری مائیں بازی جیت گئی، ہماری بہنیں بازی لے گئی،ہر چیز بدل گئی تہذیب و تمدن بدل گیا، آپ نے ہم پر اعتبار کیا ہے ہمارے سے کوئی کمی تو نہیں رہی؟۔

سعد رضوی نے کہا کہ اب ہمارا ایک ہی مطالبہ ہے اگلے الیکشن میں ڈبے خالی نہیں ہو نے چاہیے پر چیوں کا وزن اتنا بڑھانا ہے کہ کو ئی ہا تھ اٹھا نہ سکیں،میں ان کمزروں کو کہنا چاہتا ہوں جس کی فکر اور نظریہ کمزور ہو اس کے ہاتھ میں ایٹم بم بھی ہو تو وہ کچھ نہیں کر سکتا،آپ کا سب کچھ گیا ہمارا کچھ نہیں گیا۔

امیر تحریک لبیک پا کستان نے کہا کہ مفتی منیب الرحمن سے لے کر جس نے بھی نیچے تک تحریک لبیک پاکستان کے لیے کا وشیں کی ہم سب کو سلام پیش کرتا ہوں

کانفرنس سے خطاب کر تے ہوئے نائب امیر پیر سید ظہیر الحسن شاہ، مجلس شوریٰ کے رکن ڈاکٹر محمد شفیق امینی، مفتی عمیر الظہری،علامہ غلام عباس فیضی،علامہ فا روق الحسن قادری،مفتی محمد وزیر علی، پیر سید سرور حسین شاہ سیفی نے کہا کہ 25 مئی 2017 کو رجسٹرڈ ہو نے والی جماعت کو چار سالوں میں اتنی پذیرائی ملے گی سوچ بھی نہیں سکتے،پا کستان کی تاریخ میں کو ئی ایسی سیاسی پا رٹی یا جماعت بتایں جو اس مقام پر کھڑی ہے، یہ محض اللہ اور رسولؐ کی نظر و کرم اور ہمارے کارکنان کی قربانیوں کا فیض ہے،ہمارے قائد جب پا بند سلا سل ہو ئے تو جماعت پر کو ئی پا بندی نہیں تھی،ہماری جماعت کو کا لعدم کیا گیا ہم سوچ رہے تھے کہ ہم اپنے قا ئد کو کیا منہ دیکھا ئیں گے، مگر اللہ نے کرم کیا کے آج ہم نے وہ امانت جس کو کا لعد م کر نے کی کو شش کی گئی تھی وہ ہم نے اُسی حالت میں واپس کر دی،رہنماؤں نے کہا کہ ناموس رسالت لا نگ مارچ نہیں بلکہ ایک داستان تھی جو ہمارے مخا لفین اپنی نسلوں کو سنائیں گے۔

علامہ عبدالستار سعیدی نے اپنے خطاب میں کہا کہ کچھ شاگردوں کو اپنے اُستادوں پر فخر ہو تا ہے مگر میں خادم حسین رضویؒ کا اُستاد ہونے پر فخر محسوس کرتا ہوں،میرے چا ہنے والے جہاں پر بھی موجو د ہیں میں حکم دیتا ہوں کہ وہ مو جودہ امیر کی اطاعت کریں۔

شہدائے ناموس رسالت کا نفرنس میں شرکاء لبیک یا رسول اللہ کی صدائے بلند کر تے رہے اور من سب نبیاہ َ کے نعرے لگاتے رہے کا نفرنس کے اختتام پر سرپر ست اعلیٰ تحریک لبیک پا کستان قا ضی محمود اعوان نے خصوصی دعا بھی کروائی۔

Comments: 0

Your email address will not be published. Required fields are marked with *