کراچی کی رونقیں بحال کرنے میں پولیس کی بڑی قربانیاں ہیں، DIG ساؤتھ جاویداکبر ریاض

کراچی : کراچی کی رونقیں بحال کرنے میں پولیس کی بڑی قربانیاں ہیں،ملک کی ترقی وخوشحالی میں ایسوسی ایشن آف بلڈرز اینڈ ڈیولپرز(آباد) کا اہم کردار ہے، صرف پولیس یا کوئی ادارہ ہی نہیں بلکہ سندھ اور پاکستان کی حکومتیں بھی آباد کے ساتھ کھڑی ہوں گی، آباد کو درپیش مسائل ترجیحی بنیادوں پر حل کیے جائیں گے۔ان خیالات کا اظہار ڈی آئی جی ساؤتھ جاوید اکبر ریاض اور ڈی آئی جی ایسٹ ثاقب اسماعیل میمن نے آباد ہاؤس میں منعقدہ تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔

اس موقع پر آباد کے چیئرمین فیاض الیاس،سنیئر وائس چیئرمین محمد ایوب،وائس چیئرمین عارف شیخانی،آباد سدرن ریجن کے چیئرمین دانش بن رؤف،آباد سدرن ریجن کے سابق چیئرمین آصف سم سم،آباد کے ممبران کی بڑی تعداد اور ایسٹ اور ساؤتھ زون کے اعلیٰ پولیس افسران بھی موجود تھے۔

ڈی آئی جی جاوید اکبر ریاض نے کہا کہ کراچی کی رونقیں بحال کرنے میں پولیس نے بہت بڑی قربانیاں دی ہیں۔آج تاجر برادری کو امن اوامان کے حوالے سے جو مسائل درپیش ہیں وہ ماضی کے مقابلے میں بہت ہی معمولی نوعیت کے ہیں جنھیں فوری حل کیا جائے گا۔

جاوید اکبر ریاض نے کہا کہ ملک کی ترقی وخوشحالی میں آباد کا بڑا کردار ہے،نہ صرف کراچی پولیس یا کوئی ادارہ بلکہ وفاقی اور سندھ کی حکومتیں بھی آباد کے ساتھ کھڑی ہوں گی۔آباد کے مسائل ترجیحی بنیادوں پر حل کیے جائیں گے۔اس موقع پر ڈی آئی جی ثاقب اسماعیل میمن نے کہا کہ بھتہ خوری ایک ناسور ہے جس سے کاروباری سرگرمیاں متاثر اور شہر کی معیشت پر منفی اثرات مرتب ہوتے ہیں۔

انھوں نے کہا کہ چند سال قبل تک روزانہ کی بنیاد پر اغوا برائے تاوان کی 50 سے 60 وارداتیں ہوتی تھیں اور بھتہ خوری عروج پر تھی۔ تاہم سندھ پولیس بالخصوص کراچی پولیس کی قربانیوں کے باعث آج کراچی شہر میں امن وامان کی صورتحال بہت بہتر ہوگئی ہے۔ان کا کہنا تھا کہ زمینوں پر قبضے اور بھتہ خوری کے حوالے سے آباد کو درپیش مسائل ترجیحی بنیادوں پر حل کیے جائیں گے۔

انھوں نے کہا کہ جب کراچی میں بلڈرز،ڈیولپرز کے اغوا برائے تاوان اور بھتہ خوری عروج پر تھی تو پولیس نے آباد کے ساتھ لائژن قائم کرکے بلڈرز اور ڈیولپرز کی سیکیورٹی میں اہم کردار ادا کیا۔ڈی آئی جی اسماعیل میمن نے کہا کہ بھتہ خوروں اور جرائم پیشہ افراد کو سر اٹھانے کا موقع نہیں دیں گے،امن وامان کے حوالے سے آباد کو درپیش مسائل ہر صورت حل کیے جائیں گے۔

تقریب سے خطاب کرتے ہوئے آباد کے چیئرمین فیاض الیاس نے کہا کہ ملک کو 60 فیصد اور سندھ کو 95 فیصد ریونیو دینے والا شہر کراچی کو نظر انداز کیا جارہا ہے۔کراچی کے بلڈرز،ڈیولپرز اور تاجر بے پناہ مسائل سے دوچار ہیں۔اگرچہ پولیس کی قربانیوں سے بدامنی کی صورتحال چند سال قبل والی نہیں لیکن اب بھی بلڈرز اور ڈیولپرز کے پلاٹوں پر راتوں رات قبضے ہوجاتے ہیں اور بھتہ خوری کے واقعات میں بھی اضافہ ہورہا ہے۔

فیاض الیاس نے کہا کہ پاکستان بالخصوص کراچی میں ہونے والی ترقی میں آباد کا بہت بڑا کردار ہے،آباد 50 برسوں سے تعمیراتی شعبے میں خدمات انجام دے رہی ہے۔انھوں نے کہا کہ جہاں جہاں آباد کی راہ میں رکاؤٹیں کھڑی کی گئیں وہاں پر کچی آبادیوں کو فروغ ملا جو شہر کی خوبصورتی پر بدنما داغ ہیں۔

آباد سدرن ریجن کے سابق چیئرمین اور آباد کی لا اینڈ آرڈر کمیٹی کے سینئر کنوینر آصف سم سم نے کہا کہ ماضی کو یاد کرتے ہوئے کہا کہ چند سال قبل کراچی کے بلڈرز اور ڈیولپرز کو اغوا برائے تاوان اور بھتہ خوری کے خطرات لاحق رہتے تھے،بلڈرز اپنے گھروں میں بھی محفوظ نہیں تھے تاہم پولیس کے ساتھ لائژن قائم ہونے کے بعد اس وقت کے پولیس افسران نے بلڈرز اور ڈیولپرز کو تحفظ فراہم کرنے میں بے مثال کردار ادا کیا۔

انھوں نے کہا کہ اگر چہ بدامنی کی صورتحال ماضی کی طرح نہیں لیکن اب بھی ڈسٹرکٹ ایسٹ میں آباد کے ممبران کو لینڈ گریبنگ اور بھتہ خوری کے مسائل درپیش ہیں۔انھوں نے امید ظاہر کی کہ پولیس ضلع شرقی میں بھتہ خوروں اور لینڈ مافیا کا قلع قمع کردے گی۔

Comments: 0

Your email address will not be published. Required fields are marked with *