جناح سندھ میڈیکل یونیورسٹی کا مشتعل ہجوم سے نمٹنے کے لیے ڈاکٹرز کیلئے تربیتی سیشن

جناح سندھ میڈیکل یونیورسٹی کی جانب سے مشتعل ہجوم سے نمٹنے کے لیے پمز کے ڈاکٹرز کیلئے تربیتی سیشن کا انعقاد کیا گیا۔

جناح سندھ میڈیکل یونیورسٹی کے اپنا انسٹی ٹیوٹ آف پبلک ہیلتھ کو ایک اور اعزاز حاصل ہوا جب نیشنل ہیلتھ سروسز ریگولیشن کی وزارت نے اپنا انسٹیٹیوٹ کی ٹیم کو پاکستان انسٹی ٹیوٹ آف میڈیکل سائنسز (پمز) اسلام آباد میں ٹریننگ دینے کے لئے مدعو کیا۔
جناح سندھ میڈیکل یونیورسٹی اور انٹرنیشنل کمیٹی آف دی ریڈ کراس کے اس مشترکہ پروجیکٹ کے تحت ہونے والی ورکشاپ میں پمز کے 23 ڈاکٹرز نے شرکت کی جنہیں مشتعل ہجوم سے نمٹنے کی تربیت دی گئی۔
ڈائریکٹر پمز ڈاکٹر منہاج السراج نے اس کاوش کو سراہتے ہوئے کہا کے تربیت یافتہ ڈاکٹرز پمز ہسپتال میں ہنگامی صورتحال سے نمٹنے کے لیے تیار رہیں گے۔ تربیت حاصل کرنے والے ڈاکٹرز نے بتایا کہ انہیں کووڈ کی صورتحال میں مریضوں کی تیمار داروں کی جانب سے زیادہ پریشان کن مسائل کا سامنا کرنا پڑا۔

وائس چانسلر جے ایس ایم یو پروفیسر شاہد رسول نے اے آئی پی ایچ-جے ایس ایم یو کی کوششوں کو سراہتے ہوئے کہا کہ ‘متشدد رویوں کو کم کرنے کی یہ تربیت ہسپتالوں میں ہونے والی جارحیت کا ایک ترجیحی حل ہے جو یونیورسٹی کے مشن برائے قومی خدمت کے عین مطابق ہے۔

پروفیسر لبنیٰ انصاری بیگ نے کہا کہ جے ایس ایم یو کا یہ پروجیکٹ طبی عملے کو ہسپتالوں میں ہنگامہ آرائی کا سامنا کرنے کی تربیت دیتا ہے۔ اس تربیت کی اہمیت کووڈ کی وبائی صورتحال کی وجہ سے اور بڑھ گئی ہے۔’
ڈاکٹر رضیہ صفدر ، ڈائریکٹر آپریشنز برائے وزارت نیشنل ہیلتھ سروسز ریگولیشنز اینڈ کوآرڈینیشن ، اور ڈاکٹر منہاج السراج نے آخر میں سرٹیفکیٹ تقسیم کیے۔

جے ایس ایم یو کی ٹیم ریڈ کراس وفد کے سربراہ جناب جمال خان اور پروجیکٹ ایچ سی آئی ڈی-آئی سی آر سی کے سربراہ ڈاکٹر میرواعظ خان کی جانب سے مثبت آراء کے ساتھ کراچی واپس آئی ہے ، جنہوں نے اے آئی پی ایچ-جے ایس ایم یو ٹیم کی جانب سے جاری کوششوں اور دستاویزی نتائج کو سراہا۔

Comments: 0

Your email address will not be published. Required fields are marked with *