افغان جنگ اختتامی مراحل میں، طالبان کابل پہنچ گئے، عام معافی کا بھی اعلان

طالبان کابل میں

کابل: افغانستان میں 20 سال سے طالبان اور افغان حکومت کے درمیان جنگ اپنے اختتامی مراحل میں داخل ہوگئی جہاں طالبان کابل نواحی علاقوں میں جمع ہوگئے، جبکہ کابل پر قابض ہونے سے قبل ہی عام معافی کا اعلان بھی کردیا۔

عرب میڈیا کو انٹرویو دیتے ہوئے ترجمان طالبان سہیل شاہین نے افغان حکومت سے حکومتی معاملات میں کسی بھی طرح کی بات چیت پر انکار کردیا، جبکہ وہ ملک میں امن کے خواہشمند دکھائی دیتے ہیں۔

سہیل شاہین کا کہنا تھا کہ طالبان طاقت کے ذریعے کابل کا کنٹرول سنبھالنے کا ارادہ نہیں رکھتے، وہ چاہتے ہیں کہ حکومت پر امن طریقے سے ہتھیار ڈالے۔

دوسری جانب قائم مقام وزیر داخلہ عبدالستار مرزاکوال نے طالبان کے سامنے گھٹنے ٹیکنے کا اعتراف بھی کرلیا۔

ان کا کہنا تھا سیکیورٹی فورسز اس بات کو یقینی بنائیں گے کہ کابل میں کسی طرح کی جھڑپ نہ ہو اور اقتدار کی منتقلی پرامن انداز میں ہو۔

ادھر دوحا میں طالبان رہنما نے کہا کہ حکومتی فورسز فائرنگ بند کرے اور کابل میں موجود شہریوں اور غیرملکیوں کو نکلنے کا راستہ دے۔

خیال رہے کہ طالبان افغانستان کے 34 میں 25 صوبائی دارالحکومتوں پر قابض ہو چکے ہیں اور  متعدد اہم شہروں کا کنٹرول حاصل کرنے کے بعد طالبان کابل کے مضافاتی علاقوں تک پہنچ کر دارالحکومت کا گھیراؤ کرکے بیٹھے ہیں۔

Comments: 0

Your email address will not be published. Required fields are marked with *