سینئر صحافی عارف نظامی کی اہلِ خانہ کو نجی اسپتال کی انتظامیہ سے مشکلات، ذہنی کوفت کاسامنارہا

لاہور : سینئر صحافی و تجزیہ کار عارف نظامی کے اہلِ خانہ کو لاہور کے نجی اسپتال ( نیشنل ہسپتال ڈیفنس) کی انتظامیہ کی ہٹ دھرمی کے باعث مشکلات اور ذہنی کوفت کا سامنا رہا ۔

پپو کے مطابق اسپتال کی انتظامیہ مصر رہی کہ علاج کے اسپتال کے اخراجات کی مد میں میت کے ذمے واجب الادا پچاس لاکھ روپے کی فوری ادائیگی تک میت ورثا کے حوالے نہیں کی جائے گی ، عید کے روز بینک بند ہونے کی وجہ سے ورثا کے لئے اتنی رقم کا انتظام کرنا ممکن نہیں رہا تو وہ میت اسپتال میں چھوڑ کے صدمے سے نڈھال گھر لوٹ گئے۔

اطلاع ملنے پر جب سابق وزیر جہانگیرترین اسپتال پہنچے تو کچھ دیر کے بعد عارف نظامی کا جسدِ خاکی بھی گھر پہنچ گیا۔ یاد رہے کہ نجی اسپتالوں میں میت کو واجبات کی فوری ادائیگی نہ ہونے کے حوالے سے ورثا کو پیش آنے والی یہ صورتحال معمول بن چکا ہے اور کئی ایک بار سیاسی ، سماجی حلقے حکومت کی توجہ بھی مبذول کرواچکے ہیں لیکن اشاعتی اور نشریاتی اداروں میں سیاسی سماجی حلقوں کی آواز پر دھیان نہیں دیا گیا ۔

المیہ اور دکھ کی بات تو یہ ہے کہ اخبارات کے مدیروں کی تنظیم کے صدر کی میت کے ساتھ ایسا ہوا لیکن کسی اخبار کو یہ توفیق نہیں ہوسکی کہ اس خبر کو لگاسکتے۔۔ دریں اثناسینئر صحافی عارف نظامی کو نماز جنازہ کی ادائیگی کے بعد لاہور میں سپرد خاک کردیا گیا۔

مرحوم عارف نظامی کی نماز جنازہ جامع مسجد اللّٰہ اکبر ڈیفنس ای بلاک میں ادا کی گئی، جس میں سینئر صحافیوں اور سیاسی شخصیات نے شرکت کی۔عارف نظامی کو میانی صاحب قبرستان میں سپرد خاک کیا گیا۔

عارف نظامی عید کے روز لاہور میں انتقال کرگئے تھے، وہ عارضہ قلب میں مبتلا تھے اور دو ہفتوں سے مقامی ہسپتال میں زیر علاج تھے۔

Comments: 0

Your email address will not be published. Required fields are marked with *