ایک جج نے فیصلہ کیا اور کراچی کے 12 ہزار گھر مسمار

12 ہزار گھر مسمار

تحریر : عثمان غازی

ایک جج نے فیصلہ کیا اور کراچی کے 12 ہزار گھر مسمار ہورہے ہیں جس کی وجہ سے 96 ہزار 500 مکین دربدر ہوں گے، گجر نالہ اور اورنگی نالہ کے اطراف جانوروں کے دڑبے نہیں تھے بلکہ ہنستے بستے گھرانے تھے جنہیں وبا اور بدترین معاشی صورت حال میں اجاڑ دیا گیا۔

کراچی میں ایک لاکھ کے قریب آبادی کی دربدری بدترین عالمی انسانی المیہ ہے جسے کوئی سفاک دل جج نہیں سمجھ سکتا، قانون اندھا ضرور ہوتا ہے مگر کراچی کے ان سفید پوش لوگوں کے لئے قانون بے ضمیر نکلا، چوتھی نسل ان گھروں میں جوان ہوئی ہے، کسی کی بیٹی کی شادی تھی، کسی کے گھر میں چاند سا بیٹا ہوا تھا، ایک گھر میں شادی کی خوشیاں منائی جارہی تھیں تو دوسرے گھر میں ماں کی میت چارپائی پر پڑی تھی کہ جج نے قلم کی نوک سے فیصلہ سنادیا کہ تمہیں جانوروں کی طرح ہنکا کر باہر نکال دیا جائے گا کیونکہ تم کسی مہذب دنیا کے انسان نہیں بلکہ ریاست کے لئے محض ایک ریوڑ ہو۔

گجر نالہ کے مکینوں نے عدالتی فیصلے کے خلاف حکم امتناع بھی حاصل کیا مگر سپریم کورٹ نے تمام حکم امتناع خارج کردئیے، اقوام متحدہ بھی اس بدترین ظلم پر نوٹس لینے پر مجبور ہوا مگر ایک کروڑ گھر دینے کے وعدے سے برسرِ اقتدار آنے والا عمران خان نجانے کس مٹی سے بنا ہے کہ اسے کسی بات سے فرق نہیں پڑتا، حد تو یہ ہے کہ سپریم کورٹ نے سندھ حکومت کو غریبوں کو متبادل زمین کی الاٹمنٹ تک سے روکا ہوا ہے، کسی کو ان کے جائز زمین پر قانونی املاک کے تباہ ہونے کا معقول معاوضہ تک نہیں دیا جارہا، عدالتی فیصلہ اتنا سخت ہے کہ بغیر کسی منصوبہ بندی کے گھروں کو گرایا جارہا ہے، یہ تک نہیں سوچا گیا کہ دربدر ہونے والے یہ ایک لاکھ سفید پوش معاشی طور پر تباہ ہوجائیں گے تو اس کا اثر ملکی معیشت پر بھی پڑے گا۔

یہ سوال بالکل جائز ہے کہ بحریہ ٹاؤن بچالیا اور اورنگی ٹاؤن گرادیا اور اسی طرح گجر نالہ گرادیا اور بنی گالا بچالیا اور وہ بھی کیسے کہ عدالت نے حکم دیا کہ بنی گالا میں عمران خان کی غیرقانونی طور پر تعمیر رہائش گاہ کی پرانی تاریخوں کے مطابق لیز کی فیس لی جائے، ایک پاکستان میں دو نظام ہیں ۔۔ ایک عمران خان جیسی اشرافیہ کے لئے اور دوسرے ہم عوام کے لئے۔۔

اور تف ہے ایم کیوایم جیسی نسل پرست تنظیموں پر جو ان لوگوں کا استحصال کرکے لوٹ مار کرتی رہیں اور آج جب یہ دربدر ہوئے تو وفاق میں پی ٹی آئی حکومت کے ساتھ اقتدار کے مزے لوٹ رہی ہے، کراچی والوں کو جو زخم لگا، اس کے ذمہ دار نام نہاد حق پرست بھی ہیں۔

Comments: 0

Your email address will not be published. Required fields are marked with *