نجی انسٹیٹیوٹ کے پروفیسر ظاہر علی سید کی شہادت ٹارگٹ کِلنگ یا ڈکیتی مذاحمت ؟

کراچی : نیو ٹاون پولیس کے مطابق تھانے کے قریب ہی نامعلوم افراد کی فائرنگ سے نجی انسٹیٹیوٹ کے ڈائریکٹر 60 سالہ پروفیسر ظاہر علی سید جاں بحق ہو گئے ۔

فائرنگ کا واقعہ خاتون پاکستان کالج کے سامنے پیش آیا ہے ، زخمی پروفیسر ظاہر علی سید عثمان کو آغا خان اسپتال منتقل کر دیا گیا تھا ، جہاں زخموں کی تاب نہ لاتے ہوئے وہ جان کی بازی ہار گئے ۔

مذید پڑھیں :امیر البحر کی سربراہ پاک فضائیہ سے ائیر ہیڈ کوارٹرز میں ملاقات

ایس ایس ایسٹ ساجد امیر سدوزئی نے اس حوالے سے میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ ظاہر علی سید اپنے ڈرائیور کو گاڑی سے اتار کر گھر جا رہے تھے، جونہی ڈرائیور کو اتار کر گاڑی آگے بڑھی تو اس دوران موٹر سائیکل سوار دو ملزم آئے ، ڈرائیور نے بتایا کہ دونوں ملزموں کے چہرے واضح تھے ۔

نقاب یا ہیلمٹ نہیں تھا، گاڑی نہ روکنے پر ملزموں نے ایک ہی فائر کیا اور فرار ہو گئے ۔ ان کا کہنا تھا کہ واقعہ ممکنہ طور پر ڈکیتی کے دوران مزاحمت کا نتیجہ ہے ۔

مذید پڑھیں :ملک بھر کے علماء و مشائخ نے وفاقی بجٹ کو مسترد کر دیا

ڈرائیور کا بیان بھی قلمبند کر لیا گیا ہے، مقتول ڈائریکٹر ظاہر علی سید کو دھمکیاں ملنے کی بھی اطلاعات نہیں ہیں ۔  مختلف زاویوں سے واقعے کی تفتیش کی جا رہی ہے ۔

اس واقعہ کے بعد ایجوکیشن رپورٹرز کو کہنا ہے کہ سڑک کے فرسٹ ٹریک پر ڈکیتی کا واقعہ پیش آنے کے امکانات کم ہیں جبکہ واقعہ ٹارگٹ کلنگ ہو سکتا ہے ۔

Comments: 0

Your email address will not be published. Required fields are marked with *