تحریک تحفظ مساجد و مدارس نے وقف املاک ایکٹ کے متعلق قائم کی گئی سرکاری کمیٹی کومستردکردیا

تحریک تحافظ مساجد و مدارس

اسلام آباد : تحریک تحفظ مساجد و مدارس نے حکومت کی طرف سے وقف املاک ایکٹ کے حوالے سے قائم کی گئی سرکاری کمیٹی کومستردکرتے ہوئے کہاہے کہ ہمارانمائندہ فورم اتحاد تنظیمات مدارس دینیہ ہے اس کے علاوہ کسی کو نمائندہ تسلیم نہیں کرتے،یکم جولائی کو لیاقت باغ میں تحفظ مدارس ومساجدکنونشن ہوگاحکومت کی طرف سے اپنی مرضی کے افرادپرمشتمل کمیٹی بناکرڈھونگ کررہی ہے حکومت اگرمخلص ہے تو وقف املاک ایکٹ کے حوالے سے مفتی تقی عثمانی کی طرف سے سپیکرکوبھیجے گئے مسودے کے تناظرمیں ترامیم کرے مولانافضل الرحمن کی طرف سے مدارس کے تحفظ کے لیے بلائے گئے کنونشن کاخیرمقدم کرتے ہیں ان خیالات کا اظہار ملی مجلس شرعی کے صدر اور پاکستان شریعت کونسل کے سیکرٹری جنرل مولانا زاہد الراشدی،جمعیت علماء اسلام پنچاب کے ا میرمولاناڈاکٹرعتیق الرحمن ، تحریک تحفظ مساجد و مدارس کے رہنمائوں مولانا نذیر احمد فاروقی، مولانا ظہور احمد علوی،حافظ مقصود احمد، مفتی اقبال نعیمی، مفتی عبدالسلام، مولانا عبدالغفار، مولاناولی اللہ شاہ بخاری ،مولانااشرف علی ،قاری عبدالکریم ،مفتی خطیب مصفائی ودیگرنے جامعہ محمدیہ اسلام آباد میں جڑواں شہروں کے تمام مکاتب فکر کے نمائندہ اجلاس وپریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کیا ۔

اجلاس میں مولانا فیض الرحمن عثمانی، مفتی مجیب الرحمن،مولاناخلیق الرحمن چشتی ،مفتی محمدعبداللہ ،مولاناثناء اللہ غالب ،قاری عبدالوحیدقاسمی ،مولانامحمدطیب ،مولاناعبدالقدوس محمدی،مولاناخالدعمران ،مولاناتنویراحمدعلوی ،مولاناہارون الرشید،مفتی عبدالرحمن، مولاناذولفقاراحمد، مولانامحمداسحق، مولاناعبدالرئوف محمدی اورجڑواں شہروں سے علماء نے بڑی تعدادمیں شرکت کی ۔

مولانازاہدالراشدی نے خطاب میں کہاکہ حکومت اپنی مرضی کے لوگوں سے مذاکرات کر کے اہل مدارس کی آنکھوں میں دھول جھونکنا چاہتی ہے، آئی ایم ایف اور فیٹف کی حیثیت ایسٹ انڈیا کمپنی سے مختلف نہیں، قومی معاملات خاص طور پر مذہبی امور میں بیرونی اداروں کی مداخلت کسی صورت قبول نہیں کریں گے، دینی حلقوں کو مذہبی آزادی اور فیٹف قوانین میں سے ایک کا انتخاب کرنا ہوگا ورنہ مسجد و مدرسہ پر آئی ایم ایف اور ایف اے ٹی ایف کی نگرانی قبول کرکے ہم مذہبی آزادی اور مسجد و مدرسہ کے شرعی احکام سے محروم ہو جائیں گے۔

انہوں نے کہا کہ سپیکر قومی اسمبلی کے مطالبے پرمفتی محمد تقی عثمانی نے جو وقف قانون کا مسودہ تیار کیا اسے اسمبلی میں کیوں نہیں پیش کیا گیا، وہ کون سی قوتیں ہیں جو مذہبی طبقات اور حکومت کے درمیان بد اعتمادی کی فضا پیدا کر کے ملک و قوم کو خلفشار سے دو چار کرنا چاہتی ہیں۔

ڈاکٹرعتیق الرحمن نے کہاکہ جمعیت علماء اسلام پاکستان کے سربراہ مولانافضل الرحمن کی طرف سے بلائے گئے آل پارٹیزکنونشن سنگ میل ثابت ہوگاعلماء کرام نے کہاکہ علماکرام ، دینی جماعتوں اور اسلامی حلقوں کو سنجیدگی کے ساتھ اپنے مستقبل کا جائزہ لینا ہوگا اور دو ٹوک اعلان کرنا ہوگاکہ ہم قومی معاملات اور خاص طور پر مذہبی امور میں بیرونی اداروں کی مداخلت کسی صورت میں قبول نہیں کریں گے۔

علمائے کرام کا کہنا تھاکہ اوقاف اور مسجد و مدرسہ کے شرعی احکام کے حوالہ سے جو حقوق برطانوی حکومت کے دور میں سر سید احمد خاں مرحوم ،جسٹس سید امیر علی مرحوم اور قائد اعظم محمد علی جناح مرحوم کی کوشش سے مسلمانوں کو مذہبی آزادی کے عنوان سے دیئے گئے تھے، موجودہ حکومت وقف املاک ایکٹ بناکروہ ہ قوانین میں وہ حقوق بھی واپس لے لئے گئے ہیں اور انگریز حکومت کی طرف سے جو مذہبی آزادی ہمیں حاصل تھی وہ ختم کر دی گئی ہے اور اب ان قوانین کی رو سے مسجد و مدرسہ اور ہر قسم کے اوقاف سول انتظامیہ کے براہ راست کنٹرول اور آئی ایم ایف اور فیٹف جیسے عالمی اداروں کی نگرانی میں آگئے ہیں۔

Comments: 0

Your email address will not be published. Required fields are marked with *