فردوس عاشق اعوان نے MNA کو تھپڑ کیوں مارا ؟

اسلام آباد : پاکستان تحریک انصاف کی رہنما فردوس عاشق اعوان نے ایکسپریس ٹی وی کے پروگرام کل تک میں پاکستان پیپلز پارٹی کے رکن قومی اسمبلی قادر خان مندوخیل کو مغلظات بک دیں اور تھپڑ رسید کر دیا ۔

جاوید چوہدری کے پروگرام کل تک میں ’’ پھر سے لوڈ شیڈنگ ۔۔ وجوہات کیا ؟ ‘‘ کے موضوع پر پروگرام کیا جا رہا تھا ۔ پروگرام میں حکمران جماعت پی ٹی آئی کی جانب سے فردوس عاشق اعوان ، پیپلز پارٹی سے قادر خان مندو خیل اسٹوڈیو میں جب کہ لاہور سے مسلم لیگ ن کی رہنما عظمی بخاری شریک تھیں ۔

پروگرام کے ٹرین حادثہ کا ذکر ہوا ، جس پر فردوس عاشق اعوان کا کہنا تھا کہ الحمداللہ پہلی بار ٹرین کا حادثہ پیش آیا ہے ، جس پر قادر خان مندوخیل نے انہیں کہا کہ فردوس باجی آپ غلط کہہ رہی ہیں ۔ اس دوران قادر خان مندو خیل اور فردوس عاشق اعوان کے دوران تلخ کلامی ہوئی ۔ جس کے بعد فردوس عاشق اعوان اٹھ کر کھڑی ہوئیں اور ایم این اے کو گالی بکی ، جس کے بعد ایم این نے بھی جوابا انہیں گالی بکی ، جس کے بعد فردوس عاشق اعوان نے ان کے گربیان پر ہاتھ ڈالا ۔

مذید پڑھیں :عورت ہو کر مرد سے ہاتھا پائی

اس دوران پروگرام کے اینکر جاوید چوہدری نے دونوں رہنمائوں کو ایک دوسرے سے دور کرنے کے بجائے اپنی سیٹ پر کھڑا ہو انہیں روکنے کو کہا ، تاہم اس دوران پروگرام کے پروڈیوسرز نے مداخلت کی اور مہمانوں کو روکا ۔

معلوم رہے کہ سیالکوٹ سے تعلق رکھنے والی فرودوس عاشق اعوان نے 2 مئی کو اسسٹنٹ کمشنر سیالکوٹ سونیا صدف کو بھی سخت ڈانٹا تھا اور ان کے ساتھ ہتک آمیز رویہ اختیار کیا تھا ۔ جس کے بعد فردوس عاشق اعوان نے 2 جون کو سونیا صدف کا ضلع جہلم کے شہر پنڈ دادن خان میں تبادلہ کرا دیا تھا ۔

مذید پڑھیں : رانا ثنااللہ نےPPP سے متعلق ن لیگ کی پالیسی بتا دی

فردوس عاشق اعوان 51 زندگی کی بہاریں دیکھ چکی ہیں اور گزشتہ کئی دہائیوں سے مسلسل حکومت میں ہیں ۔ جب کہ ایم این اے قادر خان مندوخیل حال ہی میں ایم این اے منتخب ہو کر اسمبلی میں گئے ہیں ۔

ادھر سوشل میڈیا پر صارفین نے بڑی تعداد میں ویڈیو شیئر کی ہے اور پروگرام کے اینکر کے خلاف بھی سخت غم و غصے کا اظہار کیا ہے ۔ پروگرام کے دوران مغلظات بکنے پر پروگرام کے اینکر جاوید چوہدری نے معافی مانگی تاہم اس کے بعد بات گالی سے نکل کر ہاتھا پائی تک چلی گئی ۔

Comments: 0

Your email address will not be published. Required fields are marked with *