علمائے کرام نے رائیونڈ مرکز پر مکمل اعتماد کا اظہار کیا ہے

اسلام آباد : مختلف تنظیموں کے قائدین، مدارس کے مہتممین اور مساجد کے ائمہ و خطباء نے رائیونڈ کے عالمی تبلیغی مرکز کی دینی اور دعوتی خدمات کو زبردست الفاظ میں خراجِ تحسین پیش کیا ۔

علماء کرام نے رائیونڈ مرکز پر مکمل اعتماد کا اظہار کرتے ہوئے پہلے کی طرح ہر ممکن تعاون کی یقین دہانی کروائی ۔ انہوں نے کہا کہ تبلیغی جماعت کی محنت لوگوں کو دین سے وابستہ رکھنے کا ذریعہ ہے، علماء کرام نے کہا کہ تبلیغی جماعت مسلمانوں کے مابین جوڑ اور محبت والفت پیدا کرنے کا باعث ہے ۔

انہوں نے تمام مسلمانوں اور بالخصوص علماء کرام سے اپیل کی کہ وہ توڑ کی ہر کوشش کی نفی اور حوصلہ شکنی کریں اور ایسے تمام عناصر جو امت کی اجتماعیت اور مشترکہ دینی جدوجہد کے منافی کسی قسم کی سرگرمیوں میں ملوث پائے جائیں ، ان کو راہ راست پر لانے کی فکر کریں ۔

مزید پڑھیں: ممتازعالم دین کے فرزند مونالا قاضی مجاہد الرحمان قریشی پبلک سروس کمیشن کے ذریعے اے پی پی منتخب

تفصیلات کے مطابق ممتاز علماء کرام مولانا قاضی عبدالرشید، مولانا ظہور احمد علوی، مولانا نذیر احمد فاروقی، مولانا اشرف علی، مولانا عبدالغفار، مولانا ڈاکٹر قاری عتیق الرحمن، مولانا عبدالمجید ہزاروی، مولانا مفتی اویس عزیز، مولانا قاضی مشتاق، مولانا عبدالکریم، مولانا مفتی عبدالسلام، مولانا مفتی محمد فاروق، مولانا فیض الرحمن عثمانی، مولانا مفتی محمد ابرار، مولانا مفتی مجیب الرحمٰن، مولانا قاضی شبیر احمد عثمانی ۔

مولانا ادریس حقانی، مولانا ہیر اقبال قریشی، مولانا اسداللہ غالب، مولانا عبدالرحمن معاویہ، مولانا عبدالقدوس محمدی، مولانا خلیق الرحمن چشتی، مولاناحبیب اللہ سمیت دیگر علماء کرام، ائمہ و خطباء نے اپنے ایک مشترکہ بیان میں تبلیغی جماعت اور رائیونڈ کے عالمی تبلیغی مرکز کی دینی، دعوتی اور تبلیغی خدمات پر زبردست الفاظ میں خراجِ تحسین پیش کیا ۔

رائیونڈ کے عالمی تبلیغی مرکز اور عالمی شوریٰ کے فیصلوں اور کام کی ترتیب پر بھرپور اور مکمل اعتماد کا اظہار کرتے ہوئے ہر ممکن تعاون کی یقین دہانی کروائی ۔

مزید پڑھیں: غلطی سے قرآن کریم گر جانے کا کفارہ کیا؟

علماء کرام نے کہا کہ تبلیغی جماعت کی محنت عام مسلمانوں کو دین سے وابستہ رکھنے کی جدوجہد ہے اور اس محنت کی بدولت امت میں اتحاد و یکجہتی کی فضاء پیدا ہو رہی ہے۔ انہوں نے کہا ہم سب کو مل کر اتحاد و یکجہتی کو سبوتاژ کرنے اور امت میں توڑ پیدا کرنے کی ہر کوشش کی نفی کرنی چاہیے ۔

انہوں نے ملک بھر کی مساجد کے ائمہ و خطباء اور مدارس کے ذمہ داران سے اپیل کی کہ وہ ایسے عناصر پر کڑی نظر رکھیں اور انہیں راہ راست پر لانے کی محنت کریں جو امت میں انتشار پیدا کرنے کا باعث بنیں یا اجتماعی دینی ترتیبات سے ہٹ کر کوئی طرز عمل اختیار کریں ۔

Comments: 0

Your email address will not be published. Required fields are marked with *