عکاظ – آئی ٹی بیس مارٹ کیسے کام کرئے گا

تحریر: سید ثاقب شاہ

پاکستان میں امریکی اور پاکستانی نوجوانوں نے ملکر آئی ٹی بیس مارٹ کی نئی چین عکاظ کا آغاز کردیا۔

پاکستان اورامریکا کے نوجوانوں نے باہمی اشتراک سے پاکستان آی ٹی بیس مارٹ کی نئی چین عکاظ کا آغاز کردیاہے، منصوبے کے تحت صارفین کو سستی قیمتوں پر ایک چھت تلے ہرقسم کی معیاری مصنوعات کی فراہمی کے لیے ملک بھر میں عکاز مارٹ کی شاخیں قائم کی جائیں گی جبکہ ابتدائی طور پر کراچی کے مختلف علاقوں میں 50مارٹ قائم کردیے گئے ہیں۔ مارٹ کا مقصد عوام کو معیاری اور سستی اشیا ایک چھت کے نیچے فراہم کرنا بنیادی ترجیح ہے۔

عکاظ دراصل قدیم کریانہ کی دکان کا جدید تصور ہے۔ عکاظ خطہ عرب کے مشہور کاروباری حب کا نام تھا. قدیم عرب میں کعبۃ اللہ کے اردگرد کا علاقہ بزنس حب بنتا چلا گیا اسے “عکاظ” کے نام سے جانا جاتا تھا.

سی سی او عکاظ سید سعد علی کہتے ہیں کہ “عکاظ” پروجیکٹ کو روز بروز پذیرائی مل رہی ہے. ہم محلے کی روایتی کریانہ کی دکان کے کلچر کو جدید تقاضوں سے ہم آہنگ کررہے ہیں. کوئی بھی پرانا دکاندار یا نیا شخص عکاظ کی چین یعنی فرنچائز میں داخل ہوسکتا ہے. سیکیورٹی ڈپازٹ 100 فیصد محفوظ. دکان نہ چلنے پر ماہانہ 45000 روپے کا سپورٹ فنڈ دیا جاتا ہے یعنی ایک سال تک مالی سپورٹ فراہم کیا جاتا ہے۔

مزید پڑھیں: گیسٹ ہائوس اور ہوٹلز کو IT کے حوالے سے درپیش مسائل کا حل کریں گے ، DIG آئی ٹی فدا حسین مستوئی

دکان فارمیٹ عکاظ کی پروفیشنل ٹیم بناکر دیتی ہے۔ کسی مجبوری میں دکان ختم کرنے پر سامان کی پوری قیمت واپس کی جائے گی۔ 15 لاکھ روپے کے سیکیورٹی ڈپازٹ کے بدلے 25 لاکھ روپے تک مالیت کے کریانہ سامان کی فراہمی ہوتی ہے۔ 90 منٹ میں فری ہوم ڈلیوری کی سہولت موجود ہے۔

فرنچائز مارٹ مصنوعی ذہانت پر مشتمل سافٹ ویئر سے منسلک ہے۔ آٹو میٹک انونٹری….(جوڑیا بازار کی جھنجھٹ سے نجات دلاتی ہے۔ کیش آن ڈلیوری اور کریڈٹ کارڈ سے پے منٹ کی سہولت بھی موجود ہے۔ کوئی بھی خریدا ہوا سامان اسی حالت میں سات دن کے اندر کسی سوال جواب کے بغیر واپسی کی سہولت دی جارہی ہے۔ کریانہ فروش کو ایک ہفتے کی مفت ٹریننگ دی جاتی ہے۔ ڈسٹری بیوٹر کا سارا درد سر کمپنی کے ذمہ ہے۔

مزید پڑھیں: کراچی پریس کلب کے زیرِ اہتمام صحافیوں کیلئے ویڈیو پروڈکیشن اسمارٹ فون ٹریننگ

ڈاکٹر جواد عارف بزنس پارٹنر امریکا کے مشہور ڈاکٹر ہیں. ٹیلی میڈیسن میں امریکا میں بہت نام کمایا ہے اسکے علاوہ اوور سیز پاکستانیز فرنچائز کے سربراہ ہیں. وہ کہتے ہیں کہ ” مجھ پر پاکستان کا احسان ہے” میں پے بیک کرنا چاہتا ہوں……..سلمان شاہ…چیف پروکیرمنٹ اینڈ میڈیا آفیسر ہیں۔

سعد شاہ کا مزید کہنا تھا کہ یہ ماڈل جب انہوں نے ترکی میں پیش کیا تو ترک حکومت ان کی پوری ٹیم کو نیشنلٹی دینے پر تیار تھی اور استنبول سے بزنس شروع کرنے پر مصر تھی تاہم ہم لوگ پاکستان کے لیے کچھ کرنا چاہتے تھے اس لیے پوری سرمایہ کاری یہاں لے آئے ہیں.رجسٹریشن کا عمل تیزی سے جاری ہے. جو ماڈل شاپس ٹرائل کی بنیاد پر تین ماہ قبل کھولی تھیں ان کی یومیہ فروخت (ڈیلی سیل) ایک سے ڈیڑھ لاکھ پر پہنچ چکی ہے۔

Comments: 0

Your email address will not be published. Required fields are marked with *