کچھ ذکر صدام کا

تحریر؛ علی ہلال

حریر حسین کامل سابق عراقی مرد آہن صدام حسین کی بڑی نواسی ہے ۔ صدام کی صاحبزادی رغد حسین کی بیٹی ہے ۔رغد کی شادی حسین کامل سے ہوئی تھی جو صدام کے کزن کا بیٹا تھا ۔ حسین عراق کے اہم وزیر اورانٹیلی جنس ذمہ دار تھے ۔

وہ اپنی آپ بیتی میں لکھتی ہے کہ ان کے نانا انتہائی سخت گیر اور اصول پسند شخص تھے ۔ لکھتی ہے کہ صدام حسین اعلی درجے کے زیرک اور باڈی لینگوئج سے شخصیت کی گہرائی تک اترنے کی قدرتی صلاحیتوں سے مالامال تھے ۔

ایک روز حسب معمول سیکورٹی گارڈز نے نانا جان کی آمد کی خبر دی ۔ ہم کھانے کی ٹیبل پر بیٹھے ہوئے تھے ۔ نانا جی ایسے اچانک آگئے تھے کہ کسی کو ٹیبل سے اٹھنے کا موقع نہ ملا ۔ یہ وہ دن تھے جب عراق پر شدید ترین امریکی پابندیاں عائد تھیں۔ جواب میں صدام حسین نے بھی مغربی مصنوعات کے بائیکاٹ کا اعلان کررکھا تھا ۔

مزید پڑھیں: صدام حسین کو پھانسی کی سزا سنانے والا جج کورونا کے آگے ہار گیا

عراقی قبائلی روایت کے مطابق ڈائننگ ٹیبل کے سرے پر لگی ہوئی مرکزی کرسی پر میزبان بیٹھتا ہے ۔ نانا جان نے پہنچ کر مرکزی کرسی سنبھالی اور سب کو کھانے میں مصروف رہنے کا اشارہ دے دیا ۔ ہم سب انہیں دیکھ کر سہم گئے تھے ۔سانسیں رکی ہوئی تھیں ۔ نانا جان نے آگے رکھے ہوئے کانچ کا گلاس اٹھاکر ہاتھ میں ہلانا شروع کردیا اور ہونٹ بھینچ کر کہنے لگے کہ ’’ ہاں تو یہ ہورہا ہے ‘‘ ۔

گلاس میں پیپسی کے بچے ہوئے قطرے گلاس میں ہلکورے لے رہے تھے اورصدام انہیں قہرآلود نگاہوں سے دیکھ رہے تھے ۔ کچھ دیر گلاس کو غور سے دیکھنے کے بعد ناناجی نے گرجتی آواز میں سب کو مخاطب کرکے بتایا کہ جب ہم پوری قوم پیپسی کا بائیکاٹ کرچکے ہیں تو صدام کی بیٹی کے گھر میں اسے کیسے پیا جاسکتا ہے ۔ یہ صریح خلاف ورزی ہے ۔ اگر عراق میں کسی کو پانی میسر نہیں تو صدام کی فیملی کو بھی پانی پینے کا حق نہیں ہوگا ۔ جب قومی سطح پر کوئی قانون یا فیصلہ ہوجائے سب کو اسے بلا کسی استثنی کے فالو کرنا ہوگا ۔
کروڑوں رحمتیں ہوں اس مرد حر پر ۔

Comments: 0

Your email address will not be published. Required fields are marked with *