بلدیہ عظمی کی فریئر ہال میں بلا معاوضہ کتابوں کیلئے ’’دیوارِ علم ‘‘ قائم

کراچی : بلدیہ عظمیٰ کراچی نے کتابوں کے مطالعے کو فروغ دینے کے لئے فریئر ہال میں پہلی دیوار علم قائم کی ہے ، جہاں مختلف موضوعات پر اردو، انگلش اور سندھی زبان میں کتب رکھی گئی ہیں اور یہ کتابیں شہری مطالعے کے لئے بلا معاوضہ حاصل کر سکتے ہیں ۔

ایڈمنسٹریٹر کراچی لئیق احمد نے دیوار علم کے قیام کو خوش آئند قرار دیتے ہوئے کہا ہے کہ علم کے فروغ اور کتاب کلچر کو فروغ دینے کے لئے یہ سلسلہ شروع کیا گیا ہے اور اگر شہریوں نے اس میں دلچسپی کا اظہار کیا تو کراچی میں دیگر مقامات پر بھی دیوار علم کا قیام عمل میں لایا جائے گا اور مختلف علوم سے متعلق نامور ادیبوں، شاعروں اور دانشوروں کی کتابیں رکھی جائیں گی ۔

انہوں نے کہا کہ جو ادیب اور شاعر اپنی کتابیں یہاں رکھنا چاہیں ، انہیں دعوت دی جاتی ہے کہ وہ اپنی کتابیں عطیہ کریں تاکہ طلبہ اور شہری ان کتابوں سے استفادہ کر سکیں، ایڈمنسٹریٹر کراچی نے کہا کہ اگر یہ تجربہ کامیاب رہا تو بلدیہ عظمیٰ کراچی کتابیں خرید کر بھی دیوار علم میں رکھے گی تاکہ نئی نسل اور شہری ان کتابوں سے استفادہ کر سکیں ۔

مذید پڑھیں :بھارتی اداکارہ کنگنا رناوت پاکستان کی ہمدرد بن گئیں

انہوں نے کہا کہ جو ادیب اور شاعر اس سلسلے میں ہماری مدد کرنا چاہیں وہ اپنی کتابیں ڈائریکٹر جنرل پارکس کے دفتر واقع فریئر ہال، فاطمہ جناح روڈ اور سینئر ڈائریکٹر میڈیا مینجمنٹ کے دفتر واقع کے ایم سی بلڈنگ ایم اے جناح روڈ میں پہنچا سکتے ہیں ۔ ان کتابوں کو مطالعے کے لئے دیوار علم کی شیلفوں میں رکھا جائے گا ۔

انہوں نے کہا کہ اس وقت پوری دنیا کورونا وباء کی لپیٹ میں ہے اور شہر میں سماجی و ثقافتی سرگرمیاں محدود ہونے کے باعث یہ بہترین موقع ہے کہ ہم کتابوں کا مطالعہ کریں اور اپنے علم میں اضافہ کرنے کے ساتھ ساتھ نوجوان نسل کو کتابوں کی جانب راغب کریں، ایڈمنسٹریٹر کراچی نے کہا کہ بلدیہ عظمیٰ کراچی کتب کے فروغ کے لئے فریئر ہال میں ہر اتوار کو پرانی کتابوں کا بازار بھی منعقد کرتی ہے ، جس سے شہری بڑی تعداد میں استفادہ کرتے ہیں اور بلدیہ عظمیٰ کراچی لائبریوں کے قیام اور فروغ کے لئے بھی سنجیدہ اقدامات کرنے کی خواہش مند ہے ۔

ڈائریکٹر جنرل پارکس طٰحہ سلیم نے اس موقع پر کہا کہ سی ایس ایس کارنر کے کامیاب تجربے کے بعد یہ ایک اپنی نوعیت کا منفرد کام ہے اور کراچی میں ایک بار پھر مطالعے اور کتاب کلچر کے فروغ کے لئے دیوار علم کا آغاز کیا گیا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ کتابیں، تاریخ، تہذیب، ثقافت اور علم کے حصول کا بہت بڑا ذریعہ ہیں اور جو قومیں کتب کے مطالعے کا ذوق رکھتی ہیں ، وہی ترقی کی منازل بھی طے کرتی ہیں ۔

مزید پڑھیں :قاری عثمان ایک اور مسجد بچانے کیلئے میدن میں آ گئے

انہوں نے کہا کہ شہریوں سے درخواست کی کہ وہ دیوار علم سے فائدہ اٹھائیں اور مطالعے کے لئے اپنی پسند کی کتابیں بلا معاوضہ حاصل کریں اور وہ شہری جو کتابوں کے تبادلے کے خواہش مند ہوں وہ بھی اس منصوبے سے فیض یاب ہو سکتے ہیں ۔

انہوں نے بتایا کہ دیوار علم میں اردو، انگلش اور سندھی زبان میں تحریر کی گئیں کتابیں رکھی گئی ہیں اور جو علم دوست نئی شائع ہونے والی کتابیں ہمیں عطیہ کریں گے انہیں بھی دیوار علم میں رکھا جائے گا تا کہ شہری بھرپور طریقے سے ان کتابوں سے فائدہ اٹھا سکیں اور عصر حاضر کے تقاضوں اور فکر سے مستفیض ہو سکیں ۔

Comments: 0

Your email address will not be published. Required fields are marked with *