مفتی کفایت اللہ کی گرفتاری حکومتی بد نیتی اور سیاسی انتقام ہے : حافظ حسین کفایت

مانسہرہ : جمعیت علمائے اسلام کے مرکزی رہنما سابق ایم پی اے مفتی کفایت اللہ کے صاحبزادے حافظ حسین کفایت کے مطابق مفتی کفایت اللہ پر درج ایف آئی آر ابھی تک حوالے نہیں کی گئی اور نہ ملاقات کی اجازت دی گئی ۔

مفتی کفایت اللہ گزشتہ آٹھ یوم سے ہری پور جیل میں پابند سلاسل ہیں ۔ مانسہرہ میں اخبار ی نمائندوں سے بات چیت کرتے ہوئے حافظ حسین کفایت کا کہنا تھا کہ مفتی کفایت اللہ ملک کی معروف شخصیت اور مذہبی رہنما ہیں ان کی گرفتاری سیاسی انتقام کی بدترین مثال ہے ۔

مفتی کفایت اللہ ضلع مانسہرہ کے نائب ناظم اور خیبر پختونخواہ کے رکن اسمبلی رہے ہیں اور گزشتہ انتخابات میں حلقہ NA-14 سے پچاس ہزار سے زائد ووٹ حاصل کئے ۔لیکن آج ان کی گرفتاری اور عدالت میں پیشی کے باوجود ایف آئی آر حوالے نہ کرنا غیر قانونی ہے اور اہلخانہ کو ملاقات کی اجازت نہ دینا حکومت کی بدنیتی کی زندہ مثال ہے ۔

مذید پڑھیں :ایک دوسرے کو قبول کرنا ضروری ہے

ایک سیاسی رہنما کے ساتھ اس طرح کا سلوک نہ صرف قانونی کی خلاف ورزی بلکہ آئین کا استحصال بھی ہے حکومت اگر سیاسی انتقام کی کاروائیاں بند نہیں کرتی تو بھر پور احتجاج کریںگے پھر تمام تر حالات کی ذمہ داری حکومتی کارندوں پر ہو گی ۔

ہمارے پر امن رہنے کو کمزوری نہ سمجھا جائے ہم آئین اور قانون کا احترام کرتے ہیں لیکن کسی کو عزت نفس مجروح کرنے کی اجاز ت نہیں دے سکتے۔ انہوں نے کہا کہ ہم بہت جلد مفتی کفایت اللہ کی گرفتاری کے خلاف جاری احتجاجی مظاہروں اور ریلیوں کا سلسلہ پورے ضلع تک پھیلائیں گے ۔

Comments: 0

Your email address will not be published. Required fields are marked with *