سندھ میں ماہانہ کروڑوں روپے کی جعلی زرعی ادویات بیچنے کا انکشاف

ادویات

حیدر آباد : سندھ بھر میں ماہانہ کروڑوں روپے کی جعلی زرعی ادویات بیچنے کا انکشاف ہوا ہے۔

حیدرآباد جعلی ادویات بنانے کا اہم مرکز بن چکا ہے اور سندھ بھر میں حیدرآباد سے جعلی ادویات سپلائی کی جاتی ہیں، ملنے والی معلومات کے مطابق حیدرآباد کے علاقے گلشن کوہسار، انڈسٹریل ایریا، لطیف آباد اور مارکیٹ ٹاور والے علاقے میں جعلی ادویات دوسری کمپنیز کے بوتلوں میں بند کی جاتی اور یہیں سے سیلنگ پیکنگ کرکے سندھ بھر میں سپلائی کی جاتی ہیں،

ذرائع کے مطابق محکمہ زراعت کے افسران مذکورہ جعلی ادویات بنانے والے افراد اور ان کے ڈیلروں سے ماہانہ کروڑوں روپے منتھلی لیتے ہیں،

حیدرآباد کے علاوہ میرپوخاص میں بھی بڑی تعداد میں جعلی ادویات بنا کر سندھ بھر میں سپلائی کی جاتی ہیں، ملنے والی معلومات کے مطابق انڈسٹریل ایریا میں قائم مختلف زرعی کمپنیوں کے وئیر ہائوسز کو گزشتہ کئی سالوں سے چیک ہی نہیں کیا گیا، جبکہ زائد المیعاد ہونے والے زرعی ادویات کی پیکنگ تبدیل کرکے نئی تاریخ لگا کر مارکیٹ میں بیچا جاتا ہے،

سندھ بھر میں زرعی ادویات کے نام پر گھناؤنا دھندہ کیا جا رہا ہے اور کمپنیاں فیکٹری کے بجائے حیدرآباد میں موجود اپنے ویئر ہائوسز میں پیکنگ کرکے ادویات سپلائی کر رہی ہیں، جرأت کو ملنے والی معلومات کے مطابق سندھ بھر میں سینکڑوں غیر رجسٹرڈ زرعی کمپنیاں بھی اپنا کام جاری رکھے ہوئے ہیں جن سے محکمہ زراعت کے افسر ماہانہ لاکھوں روپے وصول کرتے ہیں۔

Comments: 0

Your email address will not be published. Required fields are marked with *