کیا KMC میں عدالتی فیصلوں کا اطلاق نہیں ہوتا ؟

بلدیہ عظمی کا حج کی رقم سے تنخواہیں ادائیگی کا فیصلہ

کراچی : عدالتی فیصلے پر عمل دآمد بلدیہ عظمی کراچی میں ایک مذاق بن گیا ہے ۔ KMC کے بعض محکموں میں دہرے عہدوں اور جونیئر افسر (OPS) کی تعیناتی سے ہٹایا نہیں جا سکا اور وہ براجمان ہے ۔ تمام سرکاری انتظامی فیصلے کے ساتھ ساتھ وسائل کی بندر بانٹ بھی عروج پر ہے ۔ سپریم کورٹ اور سندھ ہائی کورٹ کی عدالتی فیصلے پر عمل دآمد میں اصل رکاوٹ بیورو کریسی ہے ۔

سیکریٹری بلدیات سندھ نجم احمد شاہ کے نگرانی میں کئی افسران مختلف ڈیپارٹمنٹ کے افسران عدالتی فیصلے کے برخلاف کام کر رہے ہیں اور کھلم کھلا عدالتی فیصلے کا مذاق بنا دیا گیا ہے اور اسپیشل سیکریٹری ڈویلپمنٹ نجیب احمد حال ہی میں بمعہ تنخواہ بلدیات سندھ میں ضم کروا لیا ہے ۔ اس کے پاس کراچی میگا پروجیکٹ کا اضافی عہدہ بھی موجود ہے ۔

واضح رہے ایڈمنسٹریٹر کراچی کی ہدایت پر سینئر ڈائریکٹر HRM نے نجیب احمد کا 31 مارچ کو حکم نامہ میں بطور چیف انجینئر KMC میں تقرری کر دیا گیا ہے ۔

مذید پڑھیں :اللہ کے فضل ، فوج کی قربانیوں سے پاکستانی سکون سے سوتے ہیں : کیپٹن عاصم ملک

یاد رہے کہ نجیب احمد اور شبیہ الحسنین کے گریڈ 19 اور گریڈ 20 کے غیر قانونی پروموشن ختم کرنے کی بجائے سیکریٹر ی بلدیات سندھ نجم شاہ کی نگرانی میں کام کر رہے ہیں ۔ ان دونوں کو مزید نواز دیا گیا اور اس طرح کھلم کھلا سپریم کورٹ اور سندھ ہائیکورٹ کے معزز ججز کا مذاق اڑایا جا رہا ہے اور باقاعدہ توہین عدالت کی جا رہی ہے ۔

ذرائع کا کہنا تھا کہ سب سے کم عدالتی فیصلہ پر عمل دآمد محکمہ بلدیات سندھ کے ماتحت بلدیاتی ، ڈویلپمنٹ اور مختار اداروں شامل ہیں ۔ جہاں بعض اداروں میں ایک بھی دہرے اور جونیئر افسران کو عہدوں سے ہٹایا نہیں جا سکا ۔ بلدیہ عظمی کراچی نے اب تک صرف 18 افسران کی تعیناتی کا حکم نامہ جاری کیا ۔ کراچی واٹر اینڈ سیوریج بورڈ نے ایک بھی تبادلے و تقرری نہیں کیا گیا ہے ۔

KMC میں پاکستان ریلوے، جنگلات، فشریز، ورکس اینڈ سروسز، کراچی واٹر اینڈ سیوریج بورڈ ، اور دیگر محکموں کے ملازم بھی KMC کا حصہ بن چکے ہیں ۔ یہ افسران جونیئر گریڈ میں آ کر 17،18، 19 اور گریڈ 20 میں پہنچ چکے ہیں ۔ مصدق ذرائع کا کہنا تھا کہ DMCs سے آئیں 608 جونیئر گریڈ کے عملہ KMC میں سینئر ترین عہدوں اپنا قبضہ چمٹے ہوئے ہیں ۔

مذید پڑھیں :صنعتکاروں کی وزیرِ اعظم سے برآمدی آرڈرز کی بروقت تکمیل کیلئے اپیل

اس بارے میں ایڈمنسٹریٹر کراچی لیئق احمد بھی مختلف محکموں اور DMCs سے آئیں ہوئے 608 ملازمین کی حیثیت کو ہٹانے پر تیار تھے اور ذرائع کہ مطابق ایسا وہ ایڈمنسٹریٹر لئیق احمد کی زبانی آرڈر پر کر رہا ہے ۔اسی طرح KMC کے ایک افسر امتیاز ابڑو جو گریڈ 18 کے جونیئر افسر بھی ڈائریکٹر اسٹیٹ کے بجائے سینئر ڈائریکٹر سمیت کئی عہدوں پر براجمان ہے ایسی طرح سندھ بلڈنگ کنٹرول اتھارٹی، ماسٹر پلان ڈیپارٹمنٹ ، لیاری ڈیولپمنٹ اتھارٹی ، ملیر ڈیولپمنٹ اتھارٹی ، ضلعی بلدیات کراچی، ضلع کونسل کراچی میں اب بھی دہرے اور جونیئر افسران کئی کئی عہدون کے مراعات وصول کر رہے ہیں ۔

اس کے ساتھ ہی ایڈمنسٹریٹر کراچی لئیق احمد نے اب تک طحہ سلیم نامی گریڈ 18 کے ایک جونیئر ترین افسر کو او پی ایس پر ڈائریکٹر پارکس کی پوسٹ پر برقرار رکھا ہے اور طحہ سلیم اب تک انتہائی ڈھٹائی کیساتھ ڈی جی پارکس کی عہدے پر بھی قابض ہے اور غیر قانونی طور پر دونوں عہدوں پر کام جاری رکھے ہوئے ہے ۔

KMC کے کئی سینئر ڈائریکٹرز بھی ایک سے ذائد عہدوں پر تعینات ہے ۔ سندھ ہائی کورٹ کی ہدایت پر سینئر ڈائریکٹر ہومین رسورسس ڈیپارٹمنٹ KMC اصغر درانی کے حکم نامہ نمبر Sr.Dir(HRM)/KMC2021/1068 بتاریخ 31 مارچ 2021ء کو جاری کیا ہے ۔

KMC کے ایڈمنسٹریٹر کراچی لیئق احمد کی ہدایت پر سینئر ڈائریکٹر ہومین رسورسس ڈیپارٹمنٹ اصغر درانی کے دستخط سے جاری ہونے والے حکم نامہ میں KMC کے تمام ڈیپارٹمنٹ کے سربراہوں کا دہرے عہدے، او پی ایس سمیت دیگر افسران و عملے کی نشاہدی کرنے کی ہدایت کرنے کا دوبارہ حکم نامہ جاری ہونے پر ایک مذاق بن چکا ہے ۔

Comments: 0

Your email address will not be published. Required fields are marked with *