جوائنٹ ایکشن کمیٹی کا شیعہ مسنگ پرسنز کی بازیابی کیلئے مزارِ قائد پر احتجاجی دھرنا

کراچی : جوائنٹ ایکشن کمیٹی فار شیعہ مسنگ پرسنز نے لاپتہ افراد کی بازیابی کے لیئے محفل شاہ خراسان، پرانی نمائش کے بعد مزار قائد کے باہر دھرنا دیا۔

احتجاجی دھرنے میں خواتین، بچوں، بزرگوں، نوجوانوں سمیت شیعہ علمائے کرام کی بڑی تعداد موجود تھی۔ احتجاج میں مظاہرین نے اپنے پیاروں کی تصویروں اور ان کی بازیابی کیلئے پلے کارڈز اور بینرز اٹھائے ہوئے تھے ۔ احتجاج میں رہنما علامہ احمد اقبال رضوی، مولانا حیدر عباس، مولانا عقیل موسیٰ، علامہ مختار امامی، علامہ مبشر حسن سمیت جوائنٹ ایکشن کمیٹی فار مسنگ پرسن کے دیگر رہنما موجود تھے۔

احتجاجی دھرنے سے خطاب میں علامہ احمد اقبال رضوی کا کہنا تھا کہ اسیری ان کے لیئے کوئی نئی بات نہیں لیکن ظلم کے خلاف آواز بلند کرنا سنت معصومین ہے،ان کا کہنا تھا کہ شیعہ نسل کشی کے بعد اس ملک میں دوسرا بڑا ظلم عزاداروں کو لاپتہ کرنا ہے، ملک بھر سے تینتیس شیعہ افراد کو لاپتہ کیا گیا ہے جن میں کچھ کو گزشتہ دس سالوں سے قانون نافذ کرنے والے اداروں نے نو جوانوں کو لاپتہ کیا ہوا ہے اس کے خلاف یہاں جمع ہوئے ہیں ۔

انہوں نے اپیل کی کہ جو لوگ بھی ان کی آواز سن رہے ہیں ان سے درخواست ہے کہ لاپتہ افراد کے لیئے ملک کی عوام بلا تفریق باہر نکلیں انہوں نے کہا کہ وہ نہیں جانتے کہ وہ کب تک بیٹھتے ہیں۔احتجاجی دھرنا کب تک دینا ہے قیادت طے کرے گی لیکن لاپتہ افراد کے اہل خانہ نے طے کر لیا کہ لاپتہ افراد کی بازیابی تک دھرنا جاری رہے گا ۔

انہوں نے کہا کہ لاپتہ افراد کے حوالے سے ارباب اقتدار نے بارہا یقین دھانی کرائی حد یہ ہے کہ صدر مملکت نے بھی لاپتہ افراد کی بازیابی کا وعدہ کیا لیکن کسی نے بھی اپنا وعدہ وفا  نہیں کیا اور نا یقین دھانی پوری کی، اگر لاپتہ افراد کسی جرم میں ملوث ہیں تو انہیں عدالتوں میں پیش کیا جائے،لاپتہ افراد کے اہل خانہ تو یہ بھی نہیں پتا کہ ان کے پیارے زندہ بھی ہیں یا نہیں۔بہت سے لاپتہ افراد کی ماں، باپ اپنے پیاروں کی واپسی کی آس لئے دنیا سے رخصت ہو گئے ہیں۔

خطاب کے بعد مظاہرین مارچ کرتے ہوئے پرانی نمائش پہنچے اور وہاں سے کچھ دیر بیٹھنے کے بعد مزار قائد پر دھرنا دے دیا۔ جوائنٹ ایکشن کمیٹی فار شیعہ مسنگ پرسنز  کی جانب سے دھرنے میں شرکت کیلئے شہر کے مختلف علاقوں سے ٹرانسپورٹ کا اہتمام کیا گیا ہے مظاہرین کی آمد کا سلسلہ بھی جاری ہے۔احتجاجی دھرنہ رات گئے تک جاری رہا۔

Comments: 0

Your email address will not be published. Required fields are marked with *