فرعونوں کے شاہی قافلے نے تباہی مچادی

تحریر: علی ہلال

اہم عرب ملک مصر گزشتہ ایک ہفتے سے متعدد حادثات کی زد میں ہے ۔ گزشتہ منگل کو مصر میں واقع کینال سویز میں چین سے ہالینڈ جانے والا ایک بڑا کنٹینر بردار شپ ایک جانب جھکنے کے باعث پھنس گیا ہے جس کے باعث 193 کلومیٹر طویل دنیا کا یہ اہم ترین آبی گزرگاہ سمندری ٹریفک کے لیے مکمل طور پر بند ہوکر رہ گئی ہے جس کے باعث آخری اطلاعات کے مطابق نہر سویز میں نکلنے کے انتظار میں جمع ہونے جہازوں کی تعداد 321 سے تجاوز کرگئی ہے۔

ایورگرین نامی کمپنی کا 400 میٹر طویل کنٹینر شپ دنیا کے چند بڑے کنٹینر بردار جہازوں میں سے ایک ہے ۔پھنسنے والی شپ پر 223 ٹن مال لوڈ ہے ۔ بحر ابیض متوسط کو بحیرہ احمر کیساتھ ملانے والے نہر سویز کی اہمیت کا اس سے اندازہ لگایا جاسکتا ہے کہ عالمی تجارت کا 15 فیصد حصہ اس کینال سے گزرتاہے ۔

مشرق وسطی سے یورپ اور امریکہ جانے والا تیل،مویشیاں اور اجناس وادویات کا بیشتر حصہ اسی گزرگاہ سے ہوکر جاتاہے۔ اس نہر کے 11 گھنٹے کاسفر کسی بھی بحری جہاز کو پورے براعظم افریقا کے گرد چکرلگانے سے بچاتا ہے ۔ مصر کو نہر سویز پر گزرنے والے جہازوں کے ٹیکس کی مد میں یومیہ 15ملین ڈالر ملتے ہیں ۔جبکہ سالانہ کم از کم 6 ارب ڈالر کی آمدنی مصری خزانے کو ملتی ہے۔

مزید پڑھیں: تاریخ کا پلٹا

یہی وجہ ہے منگل کو اس کی بندش کے بعد مصر سمیت پوری دنیا اور بالخصو ص شپس ڈیپارٹمنٹ کو فی گھنٹہ 400ملین ڈالر کا خسارہ برداشت کرنا پڑتا ہے۔ جبکہ کینال کے ایک روٹ کی بندش کا یومیہ خسارہ 5.1 ارب جبکہ دوسرے روٹ کا خسارہ 4.5 ارب ڈالر ریکارڈ کیا گیا ہے ۔ دیوہیکل شپ کو ریت سے نکال کر فلوئٹنگ کے پراسس پر 100سے زائد کرینیں لگی ہوئی ہیں جن میں ایک کرین فی گھنٹہ 6ہزار ڈالر چارج کرتا ہے۔

نہر سویز کے ساتھ جمعہ کو قاہرہ میں رہائشی بلڈنگ منہدم ہونے کے واقعہ میں 8 ہلاکتیں ہوئی ہیں جبکہ صوبہ سوہاج میں ٹرینوں کے درمیان تصادم کا حادثہ بھی رونما ہواہے جس میں 162 افراد زخمی اور 32 جان بحق ہوگئے ہیں ۔ اس کے ساتھ مصر میں پورے 8 حادثات رونما ہوئے ہیں جن میں کئی انسانی جانیں ضایع ہوگئی ہیں ۔ مصر میں سوشل میڈیا پر ان واقعات کے بعد ایک بحث چھڑ گئی ہے اور ان واقعات کو بعض ماہرین نے فرعونوں کی شرارت قرار دے دی ہے۔

مزید پڑھیں: کیا آپ کے دل کا شمار اِن 13 دلوں میں ہوتا ہے ؟

خیال رہے کہ یہ واقعات ایسے وقت رونما ہوئےہیں جب مصری حکومت بڑی تعداد میں فرعونوں کی ممیوں کو التحریر اسکوائر کے میوزیم سے قاہرہ کے وسط میں الحضارہ نامی قومی میوزیم میں منتقل کرنے کے لیے ایک بہت بڑی اور عالیشان تقریب منقعد کرنے کی تیاریوں میں مصروف ہے ۔اس شاہی قافلے میں 22 ممیوں کو منتقل کیا جائے گا جن میں 18ممیاں بادشاہوں اور ان کی ملکاوں کی ہیں ۔ 3اپریل کو 40منٹ پر مشتل فرعونوں کے شاہی قافلے کو تمام تر سرکاری پرٹوکول اور فوجی استقبال میں منتقل کیا جائے گا جسے دیکھنے کے لیے دنیابھر سے لوگ دیکھنے ائیں گے ۔

مصری تہذیب میں یہ روایت ہے کہ فرعونوں کے مقبروں کو چھیڑنے سے موت اور خطرناک حادثات رونما ہوتے ہیں اس سے قبل ایک فرعونی مقبرے کی کھدائی کے دوران کئی انجینیروں کی موت ہوئی تھی۔

Comments: 0

Your email address will not be published. Required fields are marked with *