وفاق المدارس العربیہ: نتائج کی تیاری کے اہم مرحلے کا آغاز

رپورٹ: مولانا طلحہ رحمانی


کل سے وفاق المدارس العربیہ پاکستان کے تحت ھونے والے سالانہ امتحانات کے نتائج کی تیاری کے اھم مرحلہ جانچ پڑتال (مارکنگ) کا آغاز پہلی بار چاروں صوبوں میں ھورھا ہے۔

چاروں صوبوں میں پہلی بار اس عمل کو تقسیم کرنے کی کئی وجوہات اراکین امتحانی کمیٹی ومنتظمین کے پیش نظر رہیں۔

جس میں ایک تعداد میں اضافہ ھونا بھی ہے۔۔۔کیونکہ جتنے پرچوں کا اضافہ ھر سال ھورھا ہے ممتحنین کی تعداد میں بھی اسی تناسب سے اضافہ ناگزیر ھوجاتا ہے، اس کے ساتھ شفافیت کی بھی اعلی روایت کو برقرار رکھنا بھی شامل ہے۔

گزشتہ سال سولہ سو سے زائد ممتحنین نے اس عمل میں حصہ لیا تھا اور اس سال یہ تعداد تقریبا ساڑھے سترہ سو ہے، جس میں صوبہ پنجاب میں جامعہ خیرالمدارس ملتان میں ساڑھے پانچ سو (550)، صوبہ کے پی کے میں جامعہ عثمانیہ فیز ٹو پبی میں (485)، صوبہ سندھ میں جامعہ دارالعلوم کراچی میں چار سو (400) اور صوبہ بلوچستان میں جامعہ فرقانیہ سریاب روڈ کوئٹہ میں تین سو (300) جید علماء ومدریسن تمام احتیاطی ضابطوں اور فنی صلاحیتوں کے ساتھ اس عمل میں شامل ھونگے۔

یہاں یہ بھی سمجھنا ضروری ہے کہ ھر صوبوں کے پرچے اسی صوبے میں نہیں بلکہ ملک بھر کے پرچوں کو تقسیم کیا گیا ہے، یعنی پہلا پرچہ فلاں صوبہ میں، دوسرا فلاں وغیرہ میں،  تاکہ نتائج کی حسب سابق یکسانیت برقرار رھے اور اکثریت ممتحنین کی تعداد قدیم ہے۔۔۔جو سالوں سے اس نظام کا مستقل حصہ رھے ہیں اسی طرح ھر پرچہ کے ممتحن اعلی بھی گزشتہ سالوں کے تجربہ کار افراد پہ مشتمل میں ہیں۔

انیس درجات کے بیس لاکھ سے زائد پرچوں کی مارکنگ کا عمل بغیر کسی وقفہ کے دس دنوں تک ان شاءاللہ جاری رھے گا۔

ھر درجہ کی تعداد کے تناسب سے تجربہ کار ممتحن اعلی حضرات کے ماتحت ممتحنین کی پوری باصلاحیت افراد پہ مشتمل ٹیم اس عمل کا حصہ ھوگی۔

ان افراد کا انتخاب ملک بھر کے اداروں کے ماھر وتجربہ کار اساتذہ میں سے امتحانی کمیٹی کرتی ہے، اس انتخاب کا جہاں مستقل ضابطہ موجود ہے وہیں مقررہ کردہ ممتحن کا تدریسی تجربہ بھی وفاق المدارس کے ریکارڈ میں موجود ھوتا ہے جبکہ نئے افراد کی تقرری کیلئے اراکین امتحانی کمیٹی اور منتظمین انتہائی باریک بینی سے جائزہ لیکر کرتے ہیں۔

جس میں علاقائی مسؤلین کا تعاون بھی حاصل کیا جاتا ہے اور جس ادارہ کے مدرس کا انتخاب کیا جارھا ھوتا ہے ان کے تعلیمی سال کا نقشہ تدریس بھی چیک کیا جاتا ہے تاکہ معلوم ھوسکے کہ اس سال ان کی تدریس کن کتب کی رھی، اس کے علاوہ جس پرچہ کیلئے منتخب کیا جاتا ہے ان کیلئے ضروری ھوتا ہے کہ وہ جوابات کا حل کیا ھوا پرچہ بھی لازمی ھمراہ لائیں، حل شدہ جوابات کو ممتحن اعلی اور اراکین امتحانی کمیٹی دیکھتے ہیں۔

مارکنگ کے دوران معیار کی بلندی اور شفافیت کی حسیں روایات سے مزین اس عمل کی کئی فنی وانتظامی چیکنگ بھی کی جاتی ہے۔

الحمدللہ اس سال اس عمل کی نگرانی کیلئے اراکین امتحانی کمیٹی ،صوبائی نظماء اور انکے معاونین سمیت مرکزی دفتر کے باصلاحیت عملہ نے اپنی روایت کے مطابق ترتیبات مکمل کرلی ہیں۔

تمام صوبائی مقامات میں صوبہ بھر سے تشریف لانے والے معزز ممتحنین حضرات کو سہولیات کی فراھمی سمیت دیگر انتظامی امور کی انجام دہی کیلئے مختلف کمیٹیوں نے بھی اپنی اپنی ذمہ داریوں کی ادائیگی کیلئے تیاریاں مکمل کرلی ہیں۔

دعاء فرمائیں کہ امتحانات کے کامیاب انعقاد کی مانند یہ اھم مرحلہ بھی اللہ تعالی خیر وعافیت اور خوش اسلوبی سے مکمل فرمائے،اس عمل میں حصہ لینے والے سیکڑوں علماء ومدریسن اور وفاق المدارس کے تمام منتظمین واراکین کی مدد ونصرت فرمائے۔ آمین

Comments: 0

Your email address will not be published. Required fields are marked with *