محمد علی جناح یونیورسٹی ماسٹر آف انجینئرنگ مینجمنٹ ڈگری پروگرام شروع کرے گی،ڈاکٹر زبیر شیخ

رپورٹ : اختر شیخ

محمد علی جناح یونیورسٹی کراچی (ماجو) میں اساتذہ اور تحقیق کرنے والے طلبہ کو الگورتھم کے موثر نفاذ اور گہرائی کے ساتھ مطالع کرنے میں مدد فراہم کرنے کے لئے ہائی پرفارمنس کمپیوٹنگ لیباریٹری شروع کردی گئی ہے۔ماجو کی کمپیوٹنگ اینڈ انجینئرنگ اور بائیو سائینسز کی فیکلٹیزاب اس لیب کو بین الکلیاتی ریسرچ اور مصنوعی ذہانت کے اطلاق کے ذریعے بائیو انفارمیٹکس کے مسائل کے حل کے لئے استعمال کرسکیں گی۔

یہ بات ماجو کی کوالیٹی انہانسمینٹ سیل کے ڈائیریکٹر ڈاکٹر غضنفر منیر نے گزشتہ روز یونیورسٹی کیمپس میں الیکٹریکل انجینئرنگ کے شعبہ کے بورڈ آف اسٹیڈیز کے اجلاس کے دوران بتائی جوکہ شعبہ کے سربراہ ڈاکٹر کاشف اسحقٰ کی زیر صدارت منعقد ہوا۔ اجلاس میں ماجو کے صدر ڈاکٹر زبیر شیخ،ڈین فیکلٹی آف لائف سائینسز ڈاکٹر کامران عظیم اور الیکٹریکل انجینئرنگ کے شعبہ کے سینئر اساتذہ ڈاکٹر اریب احمد خان اور وحید الدین حیدر نے شرکت کی۔

ڈاکٹر زبیر شیخ نے اس موقع پر بورڈ کے اراکین پر زور دیا کہ وہ آئیندہ سیمسٹر سے ماسٹر ز آف انجینئرنگ مینجمنٹ کا نیا ڈگری پروگرام شروع کریں جوکہ آج کے دور میں تعلیمی اداروں اور انڈسٹری کے درمیان فاصلے کم کرنے کے لئے بڑی اہمیت اختیار کرچکا ہے۔انہوں نے کہا کہ انڈسٹری کو درپیش مسائل سے متعلق موضوعات پر تحقیقی کام کرنے والوں کو انڈسٹری کی رائے بھی حاصل کرنا چاہیے۔

انہوں نے ملک میں جاب مارکیٹ کی ضروریات کو مد نظر رکھتے ہوئے ماحولیات اور ڈیزائینگ کے نئے ڈگری پروگرام شروع کرنے کی منصوبہ بندی پر بھی زور دیا۔انہوں نے مزید کہا کہ انجینئرنگ کے طلبہ کی ضروریات کو سامنے رکھتے ہوئے دیگر انجینئرنگ یونیورسٹیوں کے ساتھ اشتراک کار کرتے ہوئے انھیں پاورلیب کی سہولت بھی فراہم کی جائے۔ڈاکٹر کامران عظیم نے اس بات پر زور دیا کہ بی ای الیکٹریکل انجینئرنگ کے نصاب میں بائیو لوجی کے مضمون کو بھی شامل کیا جائے۔

الیکٹریکل انجینئرنگ کے شعبہ کے بورڈ آف اسٹیڈیز کے اجلاس میں ایم ایس اور پی ایچ ڈی پروگرامز کے طلبہ کو ٹیک ھوم امتحان کی سہولت کی فراہمی کی تجویز کا جائیزہ لینے کے لئے ایک کمیٹی قائم کرکے آئیندہ اجلاس میں رپورٹ پیش کرنے کی منظوری دی گئی۔ اجلاس میں جن دیگر امور پر غور کیا گیا ان میں بی ای (الیکٹریکل) کے طلبہ کے نصاب اورانکو پڑھانے کے سسٹم پر نظر ثانی کرنے اور ایم ایس (ای ای) کے پروگرام میں نئی اسپیلائیزیشن شامل تھے۔

Comments: 0

Your email address will not be published. Required fields are marked with *