غالب نے سرکشی سے سرکشی اور بغاوت سے بغاوت کی : ڈاکٹر نعمان الحق

کراچی : غالب اپنے زمانے کا سب سے بڑا نثر نگار تھا جو ظرافت میں بھی کمال مہارت رکھتا تھا ۔ غالب کی چالاکیاں کمال کی ہیں ۔ کہا جاتا ہے کہ ہر شاعر بغاوت اور شرکشی کرتا ہے لیکن غالب نے سرکشی سے سرکشی کی اور بغاوت سے بغاوت ، غالب کو سمجھنا اتنا آسان نہیں ،جس طرح شیکسپیئر کو سمجھنا خاصا مشکل ہے وہی حال غالب کا بھی ہے ۔

ان خیالات کا اظہار معروف اسکالر ڈاکٹر نعمان الحق نے مرزا اسد اللہ خان غالب کی برسی کے موقع پر کراچی آرٹس کونسل کی جانب سے منعقدہ خصوصی لیکچر ”غالب فہمی“ سے کیا۔

پروگرام”غالب فہمی“ کی نظامت کے فرائض معروف شاعر و صحافی پیرزادہ سلمان نے ادا کیے ۔ غالب کی شخصیت اور طرزِ تحریر کے حوالے سے گفتگو کرتے ہوئے ڈاکٹر نعمان الحق نے کہا کہ غالب کی شاعری محبوب کا احاطہ کرتی ہے ، لیکن افسوس کہ وہ اپنے محبوب کو بھی دیکھ نہ سکا ۔

مذید پڑھیں :کراچی زبوں حالی کی ذمہ دار صوبائی حکومت اور کراچی انتظامیہ ہے : قاری عثمان

غالب کا آہنگ پر کشش ہے ان کے الفاظ کا چناو کچھ ایسا ہے کہ عقل کی گرفت میں آنا ضروری ہے ۔ شاعری کے حوالے سے بات کرتے ہوئے ڈاکٹر نعمان الحق نے کہا کہ غالب کی شاعری میں قدیم فارسی زبان کا استعمال بھرپور نظر آتا ہے ۔ غالب کے ہاں فارسیت پسندی زیادہ ہے ۔ انہوں نے مزید کہا کہ غالب ظرافت میں بھی کمال مہارت رکھتے تھے ۔ انہوں نے اپنی موت کو بھی دلچسپ انداز سے بتایا اس میں تاریکی پیدا نہیں کی۔

ڈاکٹر نعمان الحق نے مزید کہا کہ ستم ظریفی یہ ہے کہ میں غالب کا مضمون پاکستان میں پڑھتا ہوں لیکن ویب سائٹ کو لمبیا کی استعمال کرتا ہوں۔ اس موقع پر شرکاء نے غالب کی شاعری و نثر سے متعلق دلچسپ سوالات بھی کئے جس کے جوابات ڈاکٹر نعمان الحق نے نہایت خوبصورتی سے دیئے ۔

خصوصی لیکچر میں معروف علمی و ادبی شخصیات نے شرکت کی ۔صدر آرٹس کونسل محمد احمد شاہ نے حاظرین محفل کا شکریہ ادا کرتے ہوئے کہا کہ غالب کی برسی کا موقع تھا تو سوچا ایسا کیا کیا جائے کہ ان کی یادیں تازہ ہوں اور جرات نہیں تھی کہ غالب کے فرمان کی روگردانی کریں ،اسی لئے ڈاکٹر نعمان الحق کو خصوصی لیکچر کی دعوت دی۔انہوںنے مزید کہا کہ کراچی آرٹس کونسل کی گورننگ باڈی کا شکر گزار ہوں کہ غالب کی برسی کو زبردست طریقے سے منایا گیا۔

Comments: 0

Your email address will not be published. Required fields are marked with *