سندھ کے تعلیمی بورڈز مالی بحران کا شکار ہو گئے

کراچی : سندھ کے تعلیمی بورڈز مالی بحران کا شکار ہو گئے ،محکمہ تعلیم سندھ نے تعلیمی بورڈز کو کم از کم 75 کروڑ روپے جاری کرنے کا مطالبہ کر دیا ۔

جب کہ فنڈز کی عدم فراہمی کی صورت میں سندھ کے تعلیمی بورڈز نے سالانہ امتحانات منعقد کرانے سے معذوری ظاہر کر دی ۔ ذرائع نے بتایا کہ محکمہ تعلیم سندھ نے صوبائی حکومت سے مطالبہ کیا ہے کہ سندھ کے تعلیمی بورڈز کو پہلے مرحلے میں کم از کم 75 کروڑ روپے فوری جاری کئے جائیں ۔

کیونکہ رقم جاری نہ ہونے سے میٹرک خصوصا انٹر میڈیٹ بورڈز کو شدید مالی مشکلات کا سامنا کرنا پڑیگا ۔ کیونکہ میٹرک بورڈز سے 90 فیصد سے زائد پرائیویٹ اسکولز رجسٹرڈ ہوتے ہیں ۔ جب کہ انٹر بورڈز میں پرائیوٹ کالجوں کا الحاق کم ہوتا ہے ۔ جس کی وجہ سے نہ صرف انٹر میڈیٹ بورڈز کو انتظامی امور چلانے میں مالی مشکلات کا سامنا ہے ۔

مذید پڑھیں :محکمہ تعلیم کالجز کے لاکھوں طلبہ کا مستقبل داﺅ پر لگ گیا

بلکہ امتحانی امور کے حوالے سے اقدامات بھی التواء کا شکار ہیں ۔ اس لئے سندھ حکومت فوری طور پر صوبے بھر کے بورڈز کو کم سے کم 75 کروڑ روپے کا فنڈ جاری کرے۔

واضح رہے کہ سندھ بھر میں میٹرک کے امتحانات یکم جولائی سے 15 جولائی تک اور انٹر میڈیٹ کے امتحانات 18جولائی سے 16 اگست تک منعقد کئے جا رہے ہیں۔ سندھ بھر کے بورڈز کو امتحانات کے انعقاد سے چند ماہ قبل انتظامات کو حتمی شکل دینے کیساتھ اخراجات کا تخمینہ بھی لگانا ہوتا ہے جس کے بعدامتحانات منعقد کرانے کیلئے بورڈز کو اخراجات کے فنڈز میں رقم درکار ہوتی ہے ۔

Comments: 0

Your email address will not be published. Required fields are marked with *