خواتین کے خلاف تشدد کے خاتمے کے لیے معاہدہ

محمد علی جناح یونیورسٹی، کراچی خواتین کے خلاف تشدد کے خاتمے کے لیے معاہدہ ماجو اور اکسفیم میں مل جل کر کام کرنےپر اتفاق

کراجی(پریس ریلیز ) محمد علی جناح یونیورسٹی کراچی اور آکسفیم پاکستان کے درمیان گزشتہ روز یونیورسٹی کیمپس میں تعلیم اور تفریح کے ذریعے خواتین اور لڑکیوں کے خلاف ہونے والے تشدد کے خاتمے کے لیے ایک مفاہمتی یاداشت پر دستخط ہو گئے۔

جس کا مقصد یونیورسٹی کی ترتیبات میں تعلیمی اور تفریحی نقطہ نظر کے ذریعے صنف پر مبنی تشدد کے شعبوں میں دونوں اداروں کے درمیان باہمی تعاون کے لیے فریم ورک مرتب کرنا ہے ۔ اس مفاہمتی یاداشت پر ماجو کی جانب سے ڈائریکٹر کیوں ای سی ڈاکٹراریب احمد اور آکسفیم کی جانب سے صنف کے ماہر سرتاج عباسی نے دستخط کئے۔

واضح رہے کہ اکسفیم پاکستان ایک غیر منافع بخش تنظیم ہے جو برطانیہ میں رجسٹرڈ ہے اور آسٹریلین ہائی کمیشن اسلام آباد کے اشتراک سے یہاں 1973 سے کام کر رہی ہے۔یاداشت کے مطابق آکسفیم متحرک فلموں کو نشر کرنے کے بعد طلبہ اور اساتذہ کی رہنمائی کے لیے سیشن منعقد کرے گا،

جس کا اطلاق ماجو انتظامیہ کی جانب سے اجازت ملنے کے بعد کیا جائے گا۔ دونوں اداروں میں ہائر ایجوکیشن کمیشن( ایچ ای سی) میں جنسی طور پر ہراساں کرنے کے خلاف تحفظ سے متعلق ایچ ای سی کی پالیسیوں کے مطابق ہراسمنٹ شکایت سیل قائم کرنے یا تقویت دینے پر اتفاق کیا ہے،

جو کہ ہائیٹ ایجوکیشن کمیشن کے اداروں میں جنسی ہراسگی کے خلاف تحفظ سے متعلق ایچ ای سی کی پالیسی کے مطابق اکسفیم پاکستان کے تحقیقی اور پروگرام ٹیم کو ہراساں کرنے کی صلاحیت بڑھانے میں مدد کرے گی۔ علاوہ ازیں ما جو یونیورسٹی میں پینٹنگ وال اور دیواروں پر صنف پر مبنی تشدد، دقیانوسی صنفی تصورات اور صنفی طاقت کے عدم تعاون کے مختلف جہتوں کی عکاسی کرتی ہوں پر تعاون کرنے پر بھی اتفاق کیا گیا۔

ماجو اور اکسفیم کے درمیان مفاہمتی یادداشت پر دستخط کرنے کی تقریب کے موقع پر یونیورسٹی کے کمپیوٹر سائنس فیکلٹی کے ایسوسی ایٹ ڈین، ڈاکٹرز شوکت وصی، بزنس ایڈمنسٹریشن فیکلٹی کے ایسوسی ایٹ ڈین، ڈاکٹر ایس ایم نعمان شاہ، کمپیوٹر سائنس کے شعبے کے سربراہ ڈاکٹر خلیق الرحمان رازی اور دیگر سینئر اساتذہ کے علاوہ اکسفیم پاکستان کی پروجیکٹ کوآرڈینیٹر صدف دکا اللہ بھی موجود تھیں ۔

Comments: 0

Your email address will not be published. Required fields are marked with *