حفاظ کرام کیلئے قرآن کریم یاد رکھنے کاآسان ترین نسخہ

(حفاظ کرام کیلئے قرآن کریم یاد رکھنے کاآسان ترین نسخہ )
سلسلہ پانی پت کے سرخیل استاذالقراء حضرت مولانا قاری رحیم بخش صاحب رحمہ اللہ تعالیٰ کے صاحب زادے حضرت قاری محمدعبداللہ صاحب رحیمی رحمہ اللہ تعالیٰ نے مسجدسراجاں ملتان میں مغرب کی نماز کی امامت فرمائی توپہلی رکعت میں سورۃ الجاثیہ کا آخری رکوع اور دوسری رکعت میں سورۃ الاحقاف کاپہلارکوع تلاوت فرمایا۔
بعدمیں ہمارے چاچاجان نے ایک موقع پر عرض کیا کہ حضرت آپنے فلاں موقع پرنماز مغرب میں دورکوع کی تلاوت فرمائی تھی۔۔۔۔۔۔۔

یہ بھی پڑھیں:اللہ والوں کی ایک یادگارقرآنی مجلس
حضرت قاری صاحب نے فرمایا کہ بس بیٹھاہواتلاوت کررہاتھانماز کاوقت ہوگیاتوجہاں تک منزل پہنچی تھی اس سے آگے دو رکوع نماز میں پڑھ دیئے۔
ایک اور موقع پر فرمایاکہ اگر قرآن کریم یاد رکھنا چاہتے ہوتونمازوں میں بالترتیب پڑھنا شروع کردو۔
امیر شریعت سید عطاء اللہ شاہ صاحب بخاری رحمہ اللہ کے صاحب زادے حضرت سید عطاء المحسن شاہ صاحب بخاری رحمہ اللہ آخری عمر میں قمیض کے گریبان کے ساتھ ایک پینسل لٹکائے رکھتے،ایک شخص کے پوچھنے پر فرمایا کہ میرا تمام نمازوں(یعنی فرائض،واجبات، سنن اورنوافل) میں علیحدہ علیحدہ قرآن کریم پڑھنے کا معمول ہے جوانی میں ہر نماز کی منزل یاد رہتی تھی اب بوڑھاہوگیاہوں تو کاغذ پینسل ساتھ رکھتا ہوں ہرنماز کے بعد اپنی منزل لکھ لیتاہوں۔
بندہ سیہ کار نے اپنے ان دو بزرگوں کے ارشادات اور معمولات کو سامنے رکھتے ہوئے تہیہ کیاکہ نمازوں میں قرآن کریم بالترتیب شروع کیا جائے۔
الحمدللہ رب العالمین ۔۔۔۔۔۔
گزشتہ سے پیوستہ سال رمضان المبارک سے قبل صرف نماز فجرکی امامت میں دوورق روزانہ پڑھنے شروع کئے تو اب تک ایک قرآن کریم مکمل اور دوسرے کا آٹھواں پارہ چل رہاہے۔

مزید پڑھیں: تحریکِ تحفظِ مساجد و مدارس کا 26 جنوری کو اسلام آباد سے مظاہروں کا آغاز
مزید یہ کہ ڈیڑھ ماہ قبل مغرب اور عشاء میں بالترتیب نیا قرآن کریم شروع کیااور اسوقت چوتھاپارہ چل رہا ہے۔
محترم قارئین گرامی!!!!
مجھے اس عمل کے چندبڑے فائدے محسوس ہوئے ہیں
1۔ہرجہری نماز میں نئے حصے کی تلاوت کی فکر کی وجہ سے قرآن کریم یاد کرنے کی توفیق مل جاتی ہے۔
2۔ہرجہری نماز میں نئے حصے کی تلاوت کی وجہ سے ذہن پوری طرح نماز اورقرآن کریم کی طرف مشغول رہتاہے،خیالات فاسدہ اور انتشار سے کسی حد تک حفاظت ہوجاتی ہے۔
3۔رمضان المبارک میں تراویح میں قرآن کریم سنانے کیلئے اضافی محنت نہیں کرنی پڑتی پوراسال اس اہتمام سے یاد کرنا بہترین معاون ثابت ہوتاہے۔
4۔بعض علماء سے سناہے کہ نمازوں میں قرآن کریم کی تلاوت پرہرایک حرف کی تلاوت پر اللہ پاک سو سو نیکیاں عطاء فرماتے ہیں سویہ سعادت بھی نصیب ہوجاتی ہے۔
5۔ہرنماز کے ساتھ سنن اور نوافل میں بھی اسی حصہ کی تلاوت کرلیتاہوں جو فرض میں پڑھاہوتاہے،اس سے غلطیوں کی اصلاح اور منزل میں پختگی آجاتی ہے۔

نوٹ
افادہ عامہ کی خاطر ارشادات اکابر کے ساتھ اپنا ناقص سا تجربہ بھی ذکر کردیا ہے۔
حفاظ علماء کرام بالخصوص حضرات ائمہ کرام اگر ہمت فرمائیں اور اس معمول کو اپنائیں تو ان شاءاللہ فائدہ سے خالی نہ ہوگا۔
(دعائوں کا طلبگار)
مولوی عبدالماجد عفی عنہ
امام:جامع مسجد حضرت سیدنا صدیق اکبررضی اللہ عنہ،وزیر گوٹھ متصل احسن اباد۔
خطیب: جامع مسجد رحیمی جونیجوٹائون،ڈیفنس ویوکراچی

Comments: 0

Your email address will not be published. Required fields are marked with *