کرونا وائرس اور عوام کی آگاہی

کرونا وائرس اور عوام کی آگاہی
تحریر: محترمہ فروا اخلاق

وبائی بیماری پھیلنے کے خوف کی ایک لمبی تاریخ رہی ہے اس بحث پر اس بات پر توجہ مرکوز کرنا وائرس کی تو حقیقت میں نہیں کی گئی کہ آیا کوئی وبا پھیل جائے گی اگر ہم بات کریں اسکی روک تھام ابھی نہیں کی جاسکی ہے ایسا لگتا ہے کہ وبائی مرض کی بحالی سے نئے وائرس ذیلی قسموں کے دنیا میں ابھر رہے ہیں چونکہ عالمی آبادی میں اضافہ ہوتا جا رہا ہے اور ہمیں جانوروں کے قریب رہنے کی ضرورت ہوتی ہے اس بات کا امکان ہے کہ انسانی آبادی میں نئے وائرس کی منتقلی اور بھی کثرت سے واقع ہورہی ہے

ہمارا معاشره احتیاطی تدابیر اختیار کر سکتا ہے تا کہ ایک بار جب ہمارے پر وبائی ہونے کا خدشہ پیدا ہوجائے تو ہم جلد عمل کرسکیں اگر ہم صحت سے ہٹ کر بھی سوچیں تو ہمیں اندازه ہوگا کہ اس بیماری کی وجہ سے دنیا میں بہت سے مسائل اور ابھر آئیں ہیں۔چونکہ ہم وبائی امراض پھیل رہے ہیں ،اس کے طویل مدتی اثرات کا اندازه لگانا بہت مشکل ہے اگر چہ معاشرے کو ماضی میں متعدد وبائی بیماریوں کا سامنا کرنا پڑا ہے، لیکن طویل المیعاد معاشی،طرز عمل اور معاشرتی نتائج کا اندازه لگانا مشکل ہے۔

کیوں کہ ماضی میں ان پہلوؤں کا زیاده حد تک مطالعہ نہیں کیا گیا تھا۔محدود مطالعات جو موجود ہیں اس کی نشاندہی کرتی ہیں کہ آخری ہزار سالہ تاریخی وبائی امراض عام طور پر اثاثوں پر کم منافع سے وابستہ ہیں وبائی مرض کے بعد،ہم سرمایہ کاری میں کم دلچسپی لیتے ہیں اور اپنا سرمایہ بچانے میں زیاده دلچسپی لیتے ہیں جس کے نتیجے میں معاشی مسائل کا بھی سامنا کرنا پڑرہا ہے میں وبائی وبائی بیماری نے بہت سارے کاروباروں کو بند کرنے پر مجبور کردیا ہے 19 کوویڈ جس کی وجہ سے زیاده تر صنعتوں کے شعبوں میں تجارت میں غیر معمولی خلل پڑا ہے تاہم ان چیلنجوں کو کامیابی کے ساتھ لینے اور ان کے لیے کوشش کرنا بھی قابلِ تعریف ہے۔

لیکن اس بات کی ضمانت دینا بھی آسان نہیں ہے کہ مستقبل میں انسانوں کو کن مشکلات سے دوچار ہونا پڑ ے گا اسکی وجہ یہ ہے کہ ایک بار جب ہم اس وبائی بیماری سے دوچار ہوجائیں تو ، پھیلنے سے پہلے کی نسبت ہم ایک بہت ہی مختلف دنیا میں ابھریں گے کیونکہ دنیا میں اب سب کچھ آن لائن ہو چکا ہے ایک ہی وقت میں آن لائن مواصلات آن لائن تفریح ، اور آن لائن شاپنگ میں غیر معمولی ترقی دیکھنے میں آرہی ہے اب اگر ہم زندگی کے سفر کی بات کریں تو دنیا میں پھر بھی زندگی کا سورج ڈھلا نہیں ہے ہر انسان اپنی اپنی طاقت کے مطابق اپنی زندگی کے فرائض سر انجام دے رہا ہے اس دوڑ میں خواتین بھی پیچھے نہیں ہیں اس زمرے میں کاروباری خواتین کو کاروباری منصوبے کی تحقیق میں ایک
اہم کہانی کو چیلنج کرنا پڑتا ہے جو ہنگامی طور پر رد عمل کا حکم دیتے ہیں جس کی وجہ یہ ہے۔کہ خواتین خطرات کو کم کرنے کی خواہاں ہیں دلچسپ بات یہ ہے کہ کاروباری ضرورت کو پورا کرنے معاشرے میں خاص کردار ادا کرنے کی لگن کو خواتین نے بہت حد تک سنجیده لیا ہے معاشی اور معاشرتی ڈھانچے کو بھی مدنظر رکھنا ضروری ہے جس میں کاروبار چلتے ہیں اور لیکن کاروباری لحاظ سے کرونا وائرس اور خاص طور پر ہمیں خواتین کی مکمل تندرستی پر کام کرنا چاہئے کیوں کہ دباؤ میں آکر زندگی کے مراحل اور زندگی کے مواقع رابطے کنبہ اور دیگر عالمگیرانی سمیت متعدد عناصر سے خواتین کی جسمانی اور ذہنی صحت متاثر ہوئی ہے اسی طرح جس طرح ہم اپنے جسموں سے نمٹنے کے ذریعے حقیقی تندرستی حاصل کرسکتے ہیں اسی طرح ہم اپنے دماغوں سے نمٹنے کے ذریعہ مثالی نفسیاتی بھلائی حاصل کرسکتے ہیں
درحقیقت ان دونوں کے درمیان ایک اہم رابطہ موجود ہے دماغی اور جسمانی تندرستی کو ایک خاص وزن اٹھانے یا ایک خاص فاصلہ چلانے کے اختیارات سے زیاده سمجھا جاسکتا ہے یا ہوسکتا ہے یہ بہبود کے زیاده وسیع حصوں کے بارے میں اکثر ہوتا ہے انفرادی باصلاحیت خاندانی اور دیگر دنیاوی سرگرمیاں جوش و خروش سے مال و دولت ،توازن، اور آپ کی خوشحالی اور استعداد کو اپ گریڈ کرنے میں مدد کرسکتی ہیں۔جہاں تک ہر فرد کا تعلق ہے،صحتمند طرز زندگی سے متعلق معاملات جیسا کہ ذہنی صحت کی حالتوں جیسے ذہنی دباؤ اور اضطراب کے ساتھ ساتھ صحت کی دیگر دائمی پریشانیوں کی وجہ سے درپیش آنے والے مسائل کو روکنے کی اشد ضرورت ہے کیونکہ یہ ہر ایک کے لئے ذہنی صحت کے حق کو یقینی بنانے کے لئے ، انسانی حقوق پر مبنی فریم ورک کی عکاسی کرتا ہے ہماری پریشانی یہ بھی ہے کہ پاکستانی نوجوانوں کو ذہنی صحت کی طرف ایک پدر پرست نظریے سے دور کرنا ہے۔

ہمارا ایجنڈا یہ بھی اجاگر کرے گا کہ پاکستانی ریاست کو کشیدگی ، ذہنی اور پریشانیوں کے انتظام میں سرگرم عمل رہنے کی ضرورت ہے جو بڑے سماجی ، ثقافتی اور قانونی ماحول کو چیلنج کر رہے ہیں خواتین کی خود کفالت ،حقوق اور فلاح و بہبود کے مابین ایک ٹھوس تعلق ہونا چاہئے یہ ایک صنف اور اس کے نازک کردار اور صحت مندی کی طرف دائیں پر مبنی طریقہ کار کی درخواست کرتا ہے خواتین کی فلاح و بہبود میں بہتری کے بلا شبہ ان کے خاندان اور زیاده وسیع معاشرے،تعلیم اور کاروبار پر مثبت اثرات مرتب ہوں گے ایک کنسلٹنسی کمپنی کے سی ای او کی حیثیت سے،میرا مقصد اور ایجنڈا ہے کہ بہترین نتائج حاصل کرنے کے لئے پاکستانی کو آگے بڑھنے کی ضرورت کیونکہ ہمیں بہت سے بڑے سماجی ثقافتی اور قانونی مسائل کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے۔
اگرچہ بہت ساری خواتین اور انسانی حقوق کی تنظیمیں خواتین کی فلاح کے لیے کے لئے آگاہی اور مدد فراہم کرنے کی کوششوں میں ملوث ہیں ان کے سامنے درپیش چیلنجز بہت زیاده ہیں اور وه اکیلے ہی قابل ذکر تبدیلی نہیں لاسکتے ہیں خواتین کو معاشرتی تبدیلی کے لوازم کی حیثیت سے تقویت دینے کے لئے پاکستانی حکام کو صنفی رجحان کی قدر کے لئے مستقل طور پر حمایت کرنی ہوگی۔اس کے علاوه ،خواتین کے کاروبار میں بڑھتے ہوئے رجحان کو دیکھتے ہوئے ضروری ہے کہ پاکستان میں نت نئے اقدامات عمل میں لائے جائیں۔
کیونکہ ویں صدی میں ابھرتے ہوئے انسانی وسائل کی مختلف اقسام کو مات دینے کے لئےعالمی سطح پر خواتین کاروباری صلاحیتوں کے حامل ہیں کیونکہ ملک کے اندر جی ڈی پی کی شرع کو بڑھایا جا سکتا ہے۔

جس میں خواتین کا کردار ہونا لازم ہے تو یہ عمل خاص طور پر ترقی پذیر ممالک کے لئےغربت مٹانے کا باعث بن سکتا ہے تا ہم،ایک خاتون کو کاروبار شروع کرنے اور چلانے کے لئے معاشرتی تعاون کی ضرورت ہے ایک عورت ہونے کے ناطے مجھے اس بات کی خوشی ہے کہ میں اس عمل میں اپنا مثبت کردار ادا کر رہی ہوں۔میں کنسلٹنگ کا مقصد یہ بھی ہے کہ خواتین کی حوصلہ افزائی کرتے ہوئے ان کے ساتھ تعاون کروں کیونکہ کاروباری کارکردگی کے ساتھ سپورٹ سسٹم مثبت طور پر وابستہ ہے۔ہمارے علم میں یہ بات لازم طور پر ہونی چاہیے کہ خواتین کو کاروباری لحاظ سے اپنے معاشرے سے تعاون چاہیئے اس نازک گھڑی میں جب ساری دنیا مشکل حالات کا سامنا کر رہی ہے،حکومت کو چاہیئے کہ کوئی مناسب اقدامات کرے کیونکہ معاشی بے یقینی کی وجہ سے، اور کرونا کی وجہ سے بیشتر خواتین اپنی آمدنی کا ذریعہ کھو چکی ہیں۔

Comments: 0

Your email address will not be published. Required fields are marked with *