خادم حسین رضوی کا انتقال کیسے ہوا ؟

لاہور : تحریک لبیک پاکستان (ٹی ایل پی) کے سربراہ علامہ خادم حسین رضوی انتقال کر گئے ہیں ، وہ کئی روز سے شدید علیل اور گردوں کے عارضے میں مبتلا تھے ۔ 

مقامی میڈیا کی رپورٹ کے مطابق خاندانی ذرائع نے بتایا ہے کہ وہ گزشتہ ایک روز سے بیمار تھے ۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ ٹی ایل پی سربراہ کو گردوں کا عارضہ لاحق تھا اور وہ شدید علیل بھی تھے جس کے باعث وہ حالیہ فیض آباد دھرنے کے پہلے روز شرکت نہیں کر سکے تھے ۔

اس حوالے سے ذرائع نے بتایا کہ وہ دھرنے کے دن ایک قریبی گھر میں ہی موجو تھے لیکن دھرنے میں براہِ راست شرکت نہیں کر سکے تھے ۔ واضح رہے کہ علامہ خادم حسین رضوی ٹی ایل پی کے حالیہ فیض آباد دھرنے میں بھی موجود نہیں تھے ۔

مذید پڑھیں : کراچی سرکلر ریلوے کی بحالی، حقائق کیا ہیں؟

خادم حسین رضوی 22 جون 1966 کو ’نکہ توت‘ ضلع اٹک میں حاجی لعل خان کے ہاں پیدا ہوئے تھے ۔ جہلم و دینہ کے مدارس دینیہ سے حفظ و تجوید کی تعلیم حاصل کی جس کے بعد لاہور میں جامعہ نظامیہ رضویہ سے درس نظامی کی تکمیل کی ۔

مولانا خادم حسین رضوی کا تعلق پنجاب کے ضلع اٹک سے تھا، وہ حافظ قرآن ہونے کے علاوہ شیخ الحدیث بھی تھے اور فارسی زبان پر بھی عبور رکھتے ہیں ۔ بریلوی سوچ کے حامل خادم حسین رضوی کو ممتاز قادری کے حق میں کھل کر بولنے کی وجہ سے پنجاب کے محکمۂ اوقاف سے فارغ کر دیا گیا تھا ۔

بعد ازاں انہوں نے ستمبر 2017 میں تحریک کی بنیاد رکھی اور اسی برس ستمبر میں این اے 120 لاہور میں ہونے والے ضمنی انتخاب میں سات ہزار ووٹ حاصل کر کے سب کو حیرت میں ڈال دیا ۔

مذید پڑھیں : وزیراعظم کے کاروبار، صنعت کھلا رکھنے کے فیصلے کی بھرپور حمایت کرتے ہیں، اطہر چاؤلہ

انہوں نے حالیہ دھرنے میں تقریر کرتے ہوئے کہا تھا کہ میں نے دعا کی ہے کہ حضور نبی کریم ﷺ کی شان میں گستاخیاں ہوں اور میں ایسے دور میں زندہ نہ رہوں ۔ کیوں میں کیا جواب لے کر وہاں جائوں گا ۔ ایک اور ویڈیو میں انہوں نے کہا تھا کہ مولانا خادم جب فوت ہو گا تو تم کہو گے اچھا تا برا تھا ۔ اس کے علاوہ درمیان میں کوئی بات نہیں کرو گے ۔ منافق نہیں کہو گے ۔

انہوں نے کہا تھا ہمارا ساتھ دو ورنہ کل کو میرے مرنے کے بعد پچھتائو گے کیوں کہ ہمارے جیسا کوئی اور نہیں ملے گا ، ڈھونڈتے پھرو گے ۔

واضح رہے کہ انہوں نے جو موقف ختم نبوت ﷺ ، تحفظ ناموس صحابہ رضی اللہ عنہ کے لئے اپنایا تھا وہ اپنی مثال آپ تھا ، جس کی وجہ سے ان کی ہر مکتب فکر میں خوب پذیرائی تھی جس کی وجہ سے قادیانیوں نے ان کو اہل حدیث مکتب فکر اور دیوبند مکتب فکر کے خلاف بھڑکانے کی سازشیں بھی کیں تھیں جس کے لئے حالیہ دونوں میں ان کی ایک ویڈیو بھی وائرل کی گئی تھی ۔