موسمِ سرما کی تعطیلات ختم کرنے کا فیصلہ خوش آئند ہے : PSMA

کراچی : پرائیویٹ اسکولز مینجمنٹ ایسو سی ایشن پسما کے سینئر وائس چیئرمین عامر مرتضیٰ نے کہا کہ وزیر تعلیم سعید غنی کاموسم سرما کی تعطیلات نہ کرنے کا فیصلہ پسما کی موقف کی حمایت ہے .

انہوں نے کہا کہ اگر حکومت موسم سرماء کی تعطیلات کا اعلان کرتی تو اس سے سندھ کے طلباء کا مزید ناقابلِ تلافی نقصان ہوتا . عامر مرتضیٰ نے کہا کہ پسما وزیر تعلیم سعید غنی کے سندھ بھر میں سردیوں کی تعطیلات نہ کرنے کے فیصلے کو نہایت دانش مندانہ اقدام سمجھتی ہے ۔

انہوں نے کہا کہ پسما اس بیان کی مکمل تائید اور حمایت کرتی ہے , چونکہ پہلے ہی سندھ بھر میں طلباء کی تعلیم کا بے حد نقصان ہو چکا ہے اور ابھی تک مختلف گورنمنٹ اسکولوں میں تعلیم کا عمل بھی ٹھیک طرح سے شروع نہیں ہو سکا ہے ۔

مذید پڑھیں : اسکولوں کو بند کرنے کا فیصلہ کسی صورت قبول نہیں : PPSA

عامر مرتضیٰ نے کہا کہ اس کی ایک وجہ نویں جماعت کے مضامین میں اضافہ اور نئی کتابوں کے اجراء میں نہایت سستی ہے . انہوں نے کہا کہ کراچی سمیت سندھ بھر میں سردیوں کی شدت نہ ہونے کے باوجود اگر تعطیلات کا اعلان کر دیا جاتا تو یہ غیر دانشمندانہ فیصلہ ہوتا ۔

عامر مرتضیٰ نے کہا کہ کورونا کے باعث پہلے ہی کراچی اور سندھ میں تعلیمی اداروں کی سات ماہ کی طویل چھٹیوں کے باعث میٹرک اور انٹر کے امتحانی فارم جمع کرانے کا عمل شدید متاثر ہو سکتا ہے اور میڈیکل کالجز کے داخلے کے لئے انٹری ٹیسٹ بھی نہیں لئے جا سکیں گے ۔

مذید پڑھیں : ڈارک ویب چلانے والے کو 3 بار پھانسی 3 بار عمر قید

انہوں نے کہا کہ کراچی سمیت سندھ بھر کے پرائیویٹ اسکولز اور دیگر تعلیمی ادارے ایس او پیز پر مکمل عمل کررہے ہیں جس کی وجہ سے ابھی تک ایک بھی نجی تعلیمی ادارے میں کورونا کیس کی شکایت موصول نہیں ہوئی ہے عامر مرتضیٰ نے کہا کہ کچھ تعلیم دشمن عناصر مختلف افواہیں پھیلا کر والدین،طلباء اور اساتذہ میں بے چینی اور مایوسی پیدا کر رہے ہیں تاکہ اسکولوں کو دوبارہ بند کردیا جائے ۔

انہوں نے کہا کہ ایسے اقدامات سے سندھ میں تعلیم کو نا قابل تلافی نقصان پہنچ سکتا ہے عامر مرتضیٰ نے کہا کہ تعلیم دینا اور تعلیمی اداروں کو تمام ایس او پیز کے ذریعے مسلسل کھلے رکھنے کی کوششیں کی جارہی ہیں تاکہ معیار تعلیم پست نہ ہو اور نا خواندگی کے خلاف جہاد جاری رہ سکے انہوں نے کہا کہ کورونا وائرس کے باعث طلباء کا جو پہلے ہی بڑا نقصان ہوچکا ہے اسے پورا کرنے کے لئے تمام نجی تعلیمی ادارے بھر پور کوششیں کر رہے ہیں تاکہ تعلیم کا معیار نہ گرے اور شرح خواندگی میں بھی اضافہ ہو سکے ۔